Category Archives: Urdu Articles

کرسمس اور اسلام

ﺑﺴﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺍﻟﺮﺣﯿﻢ

ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﮩﻮﺍﺭﻭﮞ ﻣﺜﻼ ﮐﺮﺳﻤﺲ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﻣﻨﺎﻧﺎ

ﺗﺤﺮﯾﺮ : ﺳﺎﺟﺪ ﺧﺎﻥ ﻧﻘﺸﺒﻨﺪﯼ

ﻧﻮﭦ : ﯾﮧ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻓﯿﺼﻞ ﺍٓﺑﺎﺩ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﻌﻠﯽ ﭘﯿﺮ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻟﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺏ ﻣﻮﻗﻊ ﮐﯽ ﻣﻨﺎﺳﺒﺖ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺗﺮﺍﻣﯿﻢ ﮐﺮﮐﮯ ﺷﺎﯾﻊ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ ۔

ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﺍﮨﻠﺴﻨﺖ ! ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻧﺠﺎﺕ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﻃﻞ ﻣﺬﮨﺐ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺳﻼﻡ ﻗﺒﻮﻝ ﻧﮧ ﮐﺮﻟﯿﮟ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺭﺏ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﺎ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﮨﮯ ﮐﮧ:

ﻟَﻘَﺪْ ﮐَﻔَﺮَ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﻗَﺎﻟُﻮْ ٓﺍ ﺍِﻥَّ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﮬُﻮَ ﺍﻟْﻤَﺴِﯿْﺢُ ﺍﺑْﻦُ ﻣَﺮْﯾَﻢَ ﻭَ ﻗَﺎﻝَ ﺍﻟْﻤَﺴِﯿْﺢُ ﯾٰٓﺒَﻨِﯽْ ﺍِﺳْﺮَﺍٓﺋِﯿْﻞَ ﺍﻋْﺒُﺪُﻭْﺍٓ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﺭَﺑِِّﯽْ ﻭَ ﺭَﺑَّﮑُﻢْ ﺍِﻧَّﮧ ‘ ﻣَﻦْ ﯾُّﺸْﺮِﮎْ ﺑِﺎﻟﻠّٰﮧِ ﻓَﻘَﺪْ ﺣَﺮَّﻡَ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﻋَﻠَﯿْﮧِ ﺍﻟْﺠَﻨَّۃَ ﻭَﻣَﺎْﻭٰﮦُ ﺍﻟﻨَّﺎﺭَ ﻭَﻣَﺎ ﻟِﻠﻈَّﺎِﻟﻤِﯿْﻦَ ﻣِﻦْ ﺍَﻧْﺼَﺎﺭٍﻟَﻘَﺪْ ﮐَﻔَﺮَ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﻗَﺎﻟُﻮﺍٓ ﺍِﻥَّ ﺍﻟﻠَّﮧَ ﺛَﺎﻟِﺚ ‘’ ﺛَﻼَﺛَۃ ﻭَﻣَﺎ ﻣِﻦْ ﺍِﻟٰﮧٍ ﻭَّﺍﺣِﺪ ‘’ ﻭَّ ﺍِﻥْ ﻟَّﻢْ ﯾَﻨْﺘَﮭُﻮْﺍ ﻋَﻤَّﺎ ﯾَﻘُﻮْﻟُﻮْﻥَ ﻟَﯿَﻤَﺴَّﻦَّ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﮐَﻔَﺮُﻭْﺍ ﻣِﻨْﮭُﻢْ ﻋَﺬَﺍﺏ ‘’ ﺍَﻟِﯿْﻢ ‘’ ۔
‏( ﺳﻮﺭۃ ﺍﻟﻤﺎﺋﺪﮦ : ﺍٓﯾﺖ ۷۲۔۷۳ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺑﮯ ﺷﮏ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﮨﯽ ﻣﺴﯿﺢ ﺍﺑﻦ ﻣﺮﯾﻢ ﮐﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﮨﮯ ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻣﺴﯿﺢ ﻧﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﮮ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﺮﻭ ﺟﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﺭﺏ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﺑﻼﺷﺒﮧ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺷﺮﯾﮏ ﭨﮭﺮﺍﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺟﻨﺖ ﺣﺮﺍﻡ ﮐﺮﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﻨﻢ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭨﮭﮑﺎﻧﮧ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻇﺎﻟﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺪﺩﮔﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺷﮏ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺟﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﯿﻦ ﺧﺪﺍﻭٔﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﺑﺎﺯ ﻧﮧ ﺍٓﺋﮯ ﺗﻮ ﺟﻮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ‏( ﻣﺮﯾﮟ ﮔﮯ ‏) ﺿﺮﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺩﺭﺩﻧﺎﮎ ﻋﺬﺍﺏ ﭘﮩﻨﭽﮯ ﮔﺎ۔

ﺍﻥ ﺍٓﯾﺎﺕ ﻣﺒﺎﺭﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺿﺢ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﭘﺎﮎ ﻧﮯ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﺎﻓﺮ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺿﺢ ﻓﺮﻣﺎﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺸﺮﮐﺎﻧﮧ ﻋﻘﺎﺋﺪ ﺳﮯ ﺗﻮﺑﮧ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﭨﮭﮑﺎﻧﮧ ﺟﮩﻨﻢ ﮨﮯ ۔ﺍﻭﺭ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﻮﺩﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ :

ﯾٰﺎَﯾُّﮭَﺎ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﺍَﻣَﻨُﻮْﺍ ﻟَﺎ ﺗَﺘَّﺨِﺬُﻭْﺍ ﺍﻟْﯿَﮭُﻮْﺩَ ﻭَ ﺍﻟﻨَّﺼَﺎﺭٰﯼ ﺍٓﻭْﻟِﯿَﺎٓﺉً ﺑَﻌْﻀُﮭُﻢْ ﺍَﻭْﻟِﯿَﺎٓﺉَ ﺑَﻌْﺾٍ ﻭَّ ﻣَﻦْ ﯾَّﺘَﻮَﻟَّﮭُﻢْ ﻣِﻨْﮑُﻢْ ﻓَﺎِﻧَّﮧ ‘ ﻣِﻨْﮭُﻢْ ﺍِﻥَّ ﺍﻟﻠَّﮧَ ﻻَ ﯾَﮭْﺪِﯼ ﺍﻟْﻘَﻮْﻡَ ﺍﻟﻈَّﺎﻟِﻤِﯿْﻦَ۔ ‏( ﺳﻮﺭۃ ﺍﻟﻤﺎﺋﺪﮦ : ﺍٓﯾﺖ ۵۱ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ ! ﯾﮩﻮﺩ ﻭ ﻧﺼﺎﺭﯼ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺖ ﻧﮧ ﺑﻨﺎﻧﺎ ،ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﻌﺾ ﺑﻌﺾ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﮭﺮﺍ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﻧﮩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﻇﺎﻟﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ۔
ﺍﺱ ﺍٓﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺿﺢ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﻓﺮﻣﺎﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﻮﺩﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﺮ ﮔﺰ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﭘﯿﻨﮕﮯ ﻧﮧ ﺑﮍﮬﺎﻧﺎ ﯾﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍٓﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﻤﺎﻧﻌﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺑﺎﺯ ﻧﮧ ﺍٓﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﯾﮩﯽ ﺳﻤﺠﮭﻮ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﻮ۔ﺣﻀﺮﺕ ﻗﺎﺿﯽ ﻋﯿﺎﺽ ﻣﺎﻟﮑﯽ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

’’ ﻭﻣﻦ ﻟﻢ ﯾﮑﻔﺮ ﺍﺣﺪﺍ ﻣﻦ ﺍﻟﻨﺼﺎﺭﯼ ﻭﺍﻟﯿﮭﻮﺩ ﻭﮐﻞ ﻣﻦ ﻓﺎﺭﻕ ﺍﻟﻤﺴﻠﻤﯿﻦ ﺍﻭ ﻭﻗﻒ ﻓﯽ ﺗﮑﻔﯿﺮﮬﻢ ﺍﻭ ﺷﮏ ﻗﺎﻝ ﺍﻟﻘﺎﺿﯽ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﻻﻥ ﺍﻟﺘﻮﻗﯿﻒ ﻭﺍﻻﺟﻤﺎ ﻉ ﺍﺗﻔﻘﺎ ﻋﻠﯽ ﮐﻔﺮﮬﻢ ﻓﻤﻦ ﻭﻗﻒ ﻓﯽ ﺫﺍﻟﮏ ﻓﻘﺪ ﮐﺬﺏ ﺍﻟﻨﺺ ﺍﻟﺘﻮﻗﯿﻒ ﻭﺍﻟﺸﮏ ﻓﯿﮧ ﻭﺍﻟﺘﮑﺬﯾﺐ ﺍﻭ ﺍﻟﺸﮏ ﻓﯿﮧ ﻭﻻ ﯾﻘﻊ ﺍﻻ ﻣﻦ ﮐﺎﻓﺮ ۔ ‏( ﺍﻟﺸﻔﺎﺀ : ﺝ۲ : ﺹ ۱۷۰۔ﺣﻘﺎﻧﯿﮧ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺍﺟﻤﺎﻉ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﻔﺮ ﭘﺮ ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﯾﮩﻮﺩﯼ ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﺟﻮ ﺩﯾﻦ ﺍﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﻮ ﮐﺎﻓﺮ ﻧﮧ ﮐﮩﮯ ﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺎﻓﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﻗﻒ ﮐﺮﮮ ﯾﺎ ﺷﮏ ﮐﺮﮮ ﺍﻣﺎﻡ ﻗﺎﺿﯽ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﻧﮯ ﺍ ﺳﮑﯽ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮐﮧ ﻧﺼﻮﺹ ﺷﺮﻋﯿﮧ ﻭ ﺍﺟﻤﺎﻉ ﺍﻣﺖ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﻔﺮ ﭘﺮ ﻣﺘﻔﻖ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺟﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﻗﻒ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻧﺺ ﻭ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﯽ ﺗﮑﺬﯾﺐ ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ ﯾﺎ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﮏ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯽ ﺳﮯ ﮨﻮﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ۔

ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﺼﻮﺹ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ﻧﮧ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﻭ ﻣﻮﺍﻻﺕ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮩﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻌﺾ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ،ﻣﺤﺒﺖ ،ﺍﺧﻮﺕ ،ﺑﮭﺎﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﻦ ﮐﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺍٓﮌﻣﯿﮟ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﭘﯿﺎﺭ ﻭﻣﺤﺒﺖ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﯾﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺬﺍﮨﺐ ﺍﯾﮏ ﮔﻠﺪﺳﺘﮧ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﻦ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﺗﮩﻮﺍﺭ ’’ ﮐﺮﺳﻤﺲ ‘‘ ﮐﻮ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﯿﺴﯽٰ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﺎ ﺟﻨﻢ ﺩﻥ ﻣﺎﻥ ﮐﺮ ﺑﮍﮮ ﺩﮬﻮﻡ ﺩﮬﺎﻡ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﻮ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﮐﺮ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ ۔ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺍﺳﻼﻡ ﻧﮯ ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺗﮩﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﮐﺖ ﮐﻮ ﮐﻔﺮ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔

ﮐﺮﺳﻤﺲ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ

ﺍﺧﺒﺮﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﺍﻟﻔﺎﺭﺳﯽ ﺍﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺍﺳﺤﺎﻕ ﺍﻻﺻﺒﮭﺎﻧﯽ ﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺍﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﻓﺎﺭﺱ ﻧﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﺳﻤﺎﻋﯿﻞ ﺍﻟﺒﺨﺎﺭﯼ : ﻗﺎﻝ : ﺍﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﺎ ﻧﺎﻓﻊ ﺑﻦ ﯾﺰﯾﺪ ﺳﻤﻊ ﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﺯﯾﻨﺐ ﻭ ﻋﻤﺮﻭ ﺑﻦ ﺍﻟﺤﺎﺭﺙ ﺳﻤﻊ ﺳﻌﯿﺪ ﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﺳﻠﻤۃ ﺳﻤﻊ ﺍﺑﺎﮦ ﺳﻤﻊ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﺍﻟﺨﻄﺎﺏ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻋﻨﮧ ﺍﻧﮧ ﻗﺎﻟـ : ﺍﺟﺘﻨﺒﻮﺍ ﺍﻋﺪﺍٓﺀ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﯿﮭﻮﺩ ﻭﺍﻟﻨﺼﺎﺭﯼ ﻓﯽ ﻋﯿﺪﮬﻢ ﯾﻮﻡ ﺟﻤﻌﮭﻢ ﻓﺎﻥ ﺍﻟﺴﺨﻂ ﯾﻨﺰﻝ ﻋﻠﯿﮩﻢ ﻓﺎﺧﺸﯽ ﺍﻥ ﯾﺼﯿﺒﮑﻢ ﻭﻻ ﺗﻌﻠﻤﻮﺍ ﺑﻄﺎﻧﺘﮭﻢ ﺗﺨﻠﻘﻮﺍ ﺑﺨﻠﻘﮭﻢ۔
‏( ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ : ﺝ۷ : ﺹ ۴۳۔ﺩﺍﺭﺍﻟﮑﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﯿﮧ ﺑﯿﺮﻭﺕ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﮨﻤﯿﮟ ﺧﺒﺮ ﺩﯼ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺑﻮ ﺍﺳﺤﻖ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺑﻮ ﺍﺣﻤﺪﻧﮯ ﺍﻥ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﺳﻤﻌﯿﻞ ﺑﺨﺎﺭﯼ ﻧﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺑﻦ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﻮ ﺧﺒﺮ ﺩﯼ ﻧﺎﻓﻊ ﺑﻦ ﯾﺰﯾﺪ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻨﺎﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﺍﺑﻮ ﺯﯾﻨﺐ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﺣﺎﺭﺙ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻌﯿﺪ ﺑﻦ ﺍﺑﻮ ﺳﻠﻤﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺳﮯ ﺳﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﺳﮯ ﮐﮧ ﺍٓﭖ ؓ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﯾﮭﻮﺩ ﻭ ﻧﺼﺎﺭﯼ ﺳﮯ ﺑﭽﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﮐﮭﭩﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻧﺎﺭﺍﺿﯽ ﺍﺗﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺭﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﻧﺪﺭﻭﻧﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻣﺖ ﺟﺎﻧﺎ ﮐﺮﻭ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺗﻢ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺗﯿﮟ ﺳﯿﮑﮫ ﺟﺎﻭ ﮔﮯ ‏( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺟﺎﻭﮔﮯ ‏) ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ :

ﺍﺧﺒﺮﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺍﻟﻘﺎﺳﻢ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﺤﺮﻓﯽ ﻧﺎ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﻟﺰﺑﯿﺮ ﺍﻟﮑﻮﻓﯽ ﻧﺎ ﺍﻟﺤﺴﻦ ﺍﺑﻦ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﻋﻔﺎﻥ ﻧﺎ ﺯﯾﺪ ﺑﻦ ﺍﻟﺤﺒﺎﺏ ﻧﺎ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻋﻘﺒﮧ ﺣﺪﺛﻨﯽ ﻋﻄﺎﺀ ﺑﻦ ﺩﯾﻨﺎﺭ ﺍﻟﮭﺬﻟﯽ ﺍﻥ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﺍﻟﺨﻄﺎﺏ ﻗﺎﻝ : ﺍﯾﺎﮐﻢ ﻭ ﻣﻮﺍﻃﻨۃ ﺍﻻﻋﺎﺟﻢ ﻭ ﺍﻥ ﺗﺪﺧﻠﻮﺍ ﻋﻠﯿﮩﻢ ﻓﯽ ﺑﯿﻌﮭﻢ ﯾﻮﻡ ﻋﯿﺪﮬﻢ ﻓﺎﻥ ﺍﻟﺴﺨﻂ ﯾﻨﺰﻝ ﻋﻠﯿﮩﻢ۔
‏( ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ : ﺝ۷ : ﺹ۴۳ ‏)

ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺍٓﭖ ﮐﻮ ﺑﭽﺎﻭٔ ﺍﮨﻞ ﻋﺠﻢ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﻮﺩ ﻭ ﺑﺎﺵ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺧﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﯿﺪ ﮐﮯ ﺍﯾﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﺍﺱ ﺩﻥ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ۔

ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﺍﮨﻠﺴﻨﺖ ! ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﺗﻮ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﺮﺳﻤﺲ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺩﻥ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﻭ ﻧﺎﺭﺍﺿﮕﯽ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﺟﻌﻠﯽ ﺻﻮﻓﯽ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺧﯿﺮ ﻭ ﺑﺮﮐﺖ ﻭﺍﻻ ﺩﻥ ﮨﮯ ۔ﺍﺏ ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺎﻧﯿﮟ ﯾﺎ ﺣﻀﺮ ﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﮐﯽ ؟

ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺍﯾﺎﻡ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﮐﻔﺮ ﮨﮯ

ﻣﻼ ﻋﻠﯽ ﻗﺎﺭﯼ ﺣﻨﻔﯽ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ : ؎

ﻓﯽ ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺍﻟﺼﻐﺮﯼ ﻣﻦ ﺍﺷﺘﺮﯼ ﯾﻮﻡ ﺍﻟﻨﻮﺭﻭﺯ ﺷﯿﺌﺎ ﻭ ﻟﻢ ﯾﮑﻦ ﯾﺸﺘﺮﯾﮧ ﻗﺒﻞ ﺫﺍﻟﮏ ﺍﺭﺍﺩ ﺑﮧ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﺍﻟﻨﻮﺭﻭﺯ ،ﮐﻔﺮ ﺍﯼ ﻻﻧﮧ ﻋﻈﻢ ﻋﯿﺪ ﺍﻟﮑﻔﺮۃ۔ )) ﺷﺮﺡ ﻓﻘﮧ ﺍﻻﮐﺒﺮ : ﺹ ۴۹۹ ۔ﺑﯿﺮﻭﺕ ‏)

ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻧﻮﺭﻭﺯ ‏( ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ‏) ﮐﮯ ﺩﻥ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﺧﺮﯾﺪﯼ ﺟﻮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﺗﺎ ﺗﮭﺎ ،ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﺍﺱ ﺍﺷﺘﺮﺍﺀ ﺳﮯ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ،ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ ﺍ ﺱ ﻧﮯ ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﯽ۔

ﻣﺰﯾﺪ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

ﻟﻮﺍﻥ ﺭﺟﻼ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺧﻤﺴﯿﻦ ﻋﺎﻣﺎ ﺛﻢ ﺟﺎﺀ ﯾﻮﻡ ﺍﻟﻨﻮﺭﻭﺯ ﻓﺎﮬﺪﯼ ﺍﻟﯽ ﺑﻌﺾ ﺍﻟﻤﺸﺮﮐﯿﻦ ﯾﺮﯾﺪ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﺫﺍﻟﮏ ﺍﻟﯿﻮﻡ ﻓﻘﺪ ﮐﻔﺮ ﺑﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﻌﻈﯿﻢ ﻭ ﺣﺒﻂ ﻋﻤﻠﮧ ﺧﻤﺴﯿﻦ ﻋﺎﻣﺎ۔
‏( ﺷﺮﺡ ﻓﻘﮧ ﺍﻻﮐﺒﺮ : ﺹ ۵۰۰ ‏)

ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﭘﭽﺎﺱ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﭘﮭﺮ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﺎ ﺩﻥ ﺍٓﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﻣﺸﺮﮎ ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﮨﺪﯾﮧ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﯿﺖ ﺍﺱ ﮨﺪﯾﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﻔﺮ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﭽﺎﺱ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔

ﺍﻭﺭ ﺍٓﮔﮯ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

’’ ﻭ ﻋﻠﯽ ﻗﯿﺎﺱ ﻣﺴﺎﻟۃ ﺍﻟﺨﺮﻭﺝ ﺍﻟﯽ ﺍﻟﻨﯿﺮﻭﺯ ﺍﻟﻤﺠﻮﺳﯽ ﺍﻟﻤﻮﺍﻓﻘۃ ﻣﻌﮭﻢ ﻓﯿﻤﺎ ﯾﻔﻠﻌﻮﻥ ﻓﯽ ﺫﺍﻟﮏ ﺍﻟﯿﻮﻡ ﯾﻮﺟﺐ ﺍﻟﮑﻔﺮ ‘’

ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺟﺸﻦ ﮐﮯ ﺩﻥ ﻧﮑﻠﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﻣﺠﻮﺳﯽ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺍﻗﻔﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﻔﺮ ﮐﻮ ﻻﺯﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ۔

ﺍﺏ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭼﯿﻠﮯ ﺟﻮ ﮐﺮﺳﻤﻦ ﮐﮯ ﺩﻥ ﮐﯿﮏ ﮐﺎﭨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮔﯿﺖ ﮔﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺸﻦ ﻣﻨﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺭﮨﮯ؟
ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺷﮭﺎﺏ ﯾﻮﺳﻒ ﺍﻟﮑﺮﺩﺭﯼ ﺍﻟﺤﻨﻔﯽ ؒ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

’’ ﻭﮐﺬﺍ ﺍﺟﺘﻤﺎﻉ ﺍﻟﺴﻤﻠﻤﯿﻦ ﯾﻮﻡ ﻓﺼﺢ ﺍﻟﻨﺼﺎﺭﯼ ﻟﻮ ﻣﻮﺍﻓﻘۃ ﻟﮭﻢ۔ ‏( ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺑﺰﺍﺯﯾﮧ : ﺝ۳ : ﺹ ۱۸۶ ‏)

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺟﺘﻤﺎﻉ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺍﮔﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺍﻓﻘﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮨﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﮔﺌﮯ۔

ﻋﻼﻣﮧ ﺑﺰﺍﺯﯼ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﻋﺠﯿﺐ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺟﻮ ﺻﻮﻓﯽ ﻣﺴﻌﻮﺩ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻣﻮﺍﻓﻖ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺩﻥ ﻧﮑﻠﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﺳﺮﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﺎ ﺟﻮ ﻣﺠﻮﺳﯽ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﻔﺮ ﮨﮯ ،ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﺎﻡ ﺍﮐﺜﺮ ﻭﮦ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﺠﻮﺳﯿﺖ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺳﻼﻡ ﻻﺋﮯ ﭘﺲ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺩﻥ ﺍﻥ ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻮﺍﻓﻘﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻋﻠﻢ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ‘‘ ۔ ‏( ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺑﺰﺍﺯﯾﮧ : ﺝ۳ : ﺹ ۱۸۶ ‏)

ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﮐﺮﺍﻡ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﺟﺎﺕ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺭﻭﺯ ﺭﻭﺷﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮐﮧ ﮐﻔﺎﺭ ﮐﮯ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﺗﮩﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ،ﺍﺱ ﺩﻥ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﻧﺎ،ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﻔﺮ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﮯ ۔

گیارہویں شریف کی بدعات

ماہِ ربیع الثانی قمری سال کا چوتھا مہینہ ہے۔ اس مہینہ سے متعلق اسلام نے کوئی خاص حکم نہیں دیا ہے؛ البتہ اس مہینہ میں برصغیر میں ایک عمل بہت رواج پاگیا ہے، جسے شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ کی جانب منسوب کیا جاتا ہے اور وہ ہے: ’گیارھویں شریف‘۔

گیارہویں شریف

ہر قمری مہینے کی گیارہویں رات شیخ عبد القادر جیلانی کے نام جو کھانا بنایا جاتا ہے،وہ ’گیارہویں شریف ‘کے نام سے مشہور ہے۔(دیوبندی بریلوی اختلافات:۴۶)گویا ہر مہینے کی گیارہ تاریخ کو چھوٹی گیارہویں اور سالانہ، ربیع الثانی کی گیارہ تاریخ کو بڑی گیارہویں شریف منائی جاتی ہے۔    
گیارہویں کی ابتداء

گیارہویں کی ابتداء کے متعلق مطالعہٴ بریلویت میں ہے:

سوال پیدا ہوتا ہے کہ آخر یہ گیارھویں چلی کہاں سے ہے؟ اور ہندوستان میں انگریز کی آمد سے پہلے کیا کبھی گیارہویں کا عمل کسی جگہ ہوا تھا؟

شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ چھٹی صدی میں پیدا ہوئے۔ ظاہر ہے کہ اس سے پہلے اسلام کی پانچ صدیوں میں ”گیارہویں شریف“ کی رسم یا تقریب کہیں نہ تھی، آپ کے بعد یہ کب جاری ہوئی؟ اس کی تاریخی تحقیق نہایت ضروری ہے۔ جب ہم اس کی جستجو کرتے ہیں تو پتہ چلتا ہے کہ تیرہویں صدی کے نصف اول تک اہل السنة والجماعة میں گیارھویں کے نام سے کوئی دینی تقریب یا مذہبی رسم قائم نہ ہوئی تھی․․․․ہم تو اس کی تلاش کرتے کرتے تھک گئے؛ مگر افسوس! کہ ہمارے ان صاحبوں نے بھی جو کہ اسے بڑی دھوم دھام سے مناتے ہیں، اس سلسلہ میں ہماری کوئی مدد نہیں کی اور اس باب میں کوئی مستند حوالہ ہمیں نہیں دکھاسکے۔(مطالعہٴ بریلویت: ۶/۳۱۵-۳۱۳)

صرف شیخ جیلانی کی ہی گیارہویں

بے شک حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ ایک بڑے بزرگ ہیں، جن کی عظمت مسلَّم ہے، ان کی شان میں بے ادبی وگستاخی گمراہی کی علامت ہے؛ لیکن اہل السنة والجماعة کا عقیدہ ہے کہ تمام مخلوق میں انبیاء علیہم السلام کا مرتبہ سب سے بڑا ہے، اور انبیاء میں سب سے افضل آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم ہیں، پھر خلفاءِ راشدین اور ان کے بعد عشرہٴ مبشرہ وباقی ماندہ صحابہٴ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین کا درجہ بدرجہ مقام ہے۔ بہ غور سوچئے کہ انبیاء اور صحابہ جیسی مقدس ہستیوں کا ’یومِ وفات‘ منانے کی شریعت نے کوئی تاکید نہیں کی تو شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ جیسے ایک ولی کا یومِ وفات منانے کا کیا مطلب؟

ویسے بھی دن منانا ہر ایک کے لیے ممکن نہیں؛ کیوں کہ مراتب ودرجات کا لحاظ کرکے سب سے پہلے حضرات انبیاء کرام علیہم السلام اور صحابہ رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین-ہزاروں کی تعداد میں ہیں اور سال کے کل ایام تین سو چون یا تین سو ساٹھ ہیں، تو سب کے ایام وفات منانے کے لیے مزید دن کہاں سے لائیں گے؟ اور انبیاء کرام وصحابہٴ کرام کو چھوڑ کر ان سے کم اور نیچے کے درجے والے بزرگوں کے دن منائے جائیں تو یہ انبیا علیہم السلام و صحابہٴ کرام کے مراتب میں رخنہ اندازی ہے۔

اس کے علاوہ واقعہ یہ ہے کہ شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ کی تاریخِ وفات میں بڑا اختلاف ہے۔ ’تفریح الخاطر فی مناقب شیخ عبدالقادر‘ میں آٹھ اقوال بیان کیے گئے ہیں: ساتویں، آٹھویں، نویں، دسویں، گیارہویں اور سترہویں ربیع الاول اور اس کے بعد لکھا ہے کہ صحیح دسویں ربیع الاول ہے۔اس اختلاف سے معلوم ہوا کہ حضرت شیخ کے خلفاء ومریدین ومتبعین نے بھی آپ کی تاریخِ وفات اور دن وماہ کی تعیین کے ساتھ برسی اور یومِ وفات منانے کا اہتمام نہیں کیا ہے، ورنہ تاریخِ وفات میں اتنا شدید اختلاف نہ ہوتا۔

حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ بزبانِ خود فرماتے ہیں:

اپنے آقا کی خوشنودی سے محروم ہے وہ شخص جو اس پر تو عمل نہ کرے جس کااسے حکم دیا گیاہے اور اس میں مشغول رہے، جس کا حکم نہیں دیا گیا، یہی اصل محرومی ہے۔ (فتاویٰ رحیمیہ جدیدترتیب : ۲/۷۷-۷۶ بتصرف)

یہ سب متأخرین کی خود کاریاں ہیں

شیخ عبدالحق محدث دہلوی علیہ الرحمہ فرماتے ہیں، میرے استفسار پر میرے استاذ شیخ عبدالوہاب متقی علیہ الرحمہ نے ارشاد فرمایا:

بعض متأخرین نے بعض مغربی مشائخ کی زبانی بیان کیا کہ جس دن حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ نے وصالِ الٰہی فرمایا،اس دن کو لوگوں نے از خود دیگر دنوں کی بہ نسبت زیادہ خیر وبرکت اور نورانیت کا دن بنالیا ہے۔ اس کے بعد تھوڑی دیر سر جھکائے رہے، پھر سر اٹھا کر ارشاد فرمایا کہ زمانہٴ ماضی میں یہ سب التزامات کچھ نہ تھے، یہ سب تو صرف متأخرین کی اختیار کی ہوئی باتیں اورخود کاریاں ہیں۔ (ما ثبت بالسنة:۶۹)

یہی وجہ ہے کہ ہندوستان سے باہر عراق (جہاں حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ کا مزار ہے) اور مصر وشام بلکہ ملیشیا اور انڈونیشیا تک کہیں یہ بات نہیں ملتی کہ کسی مسجد یا مدرسہ یا کسی قبرستان میں کوئی تقریب ’گیارہویں شریف‘ کے نام سے منعقدکی گئی ہو۔ (مطالعہٴ بریلویت: ۶/۳۱۳)

اس کا سرا ہندوانہ رسوم سے ملتا ہے

’تحفة الہند‘ میں مولانا عبیداللہ رقمطراز ہیں :

”ہندوٴوں کے ہاں میت کو کھانے کا ثواب پہنچانے کا نام ’سرادھ‘ ہے اور جب سرادھ کا کھانا تیار ہو جائے تو پہلے اس پر پنڈت کو بلا کر کچھ ’بید ‘ پڑھواتے ہیں اور مُردوں کے لیے ثواب پہنچانے کے لیے ان کے ہاں خاص دن مقرَّر ہیں ، خصوصاً جس دن (وہ) فوت ہو ، ہر سال اسی دن ختم دلانا یعنی برسی یا موت کے تیرھویں دن ، بعض کے نزدیک پندرھویں دن اور بعض کے نزدیک تیسویں یا اکتیسویں دن ، ثواب پہنچانے کے لیے مقرر ہیں ۔ اسی طرح مسلمانوں نے بھی تیجہ ، ساتواں ، چالیسواں اور برسی مقرر کر لیے اور کھانا تیار کرواکر اس پر ختم پڑھوانا شروع کر دیا ؛ حالاں کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم سے ان میں سے کوئی رسم بھی ثابت نہیں“۔(مسلمانوں میں ہندوانہ رسوم و رواج :۲۳ ، دارالاندلس)

گیارہویں شریف اور اس کے کھانے کا حکم

حضرت مولانا خلیل احمد سہارنپوری نوراللہ مرقدہ فرماتے ہیں:

”غر یبوں کو کھانا کھلانا،اور قراء تِ قرآن کے ذریعے مُردوں کو ثواب پہنچانے کو کسی نے منع نہیں کیا،اس باب میں جو منع ہے تو (وہ)اس طرح مخصوص ہےئت سے ایصال(ثواب کرنے)کو منع کرتے ہیں،جس میں تشبہ بکفّار لازم آجاوے،یا تقییدِمطلق کی آجاوے کہ یہ دونوں (امور؛ تشبہ بالکفار اورمطلق کو مقید کرنا لازم آئے؛ کیوں کہ)تمام امت کے نزدیک (یہ دونوں باتیں) حرام وبدعت ہیں۔(البراہین القاطعہ:۱۷)

حضرت مفتی کفایت اللہ دہلوی فرماتے ہیں:

گیارہویں کی نیاز سے اگر مقصود ایصال ِ ثواب ہے تو، اس کے لیے گیارہویں تاریخ کی تعیین شرعی نہیں ۔ نیز حضرت غوث الاعظم کی(کوئی) تخصیص نہیں۔تمام اولیاء ِکرام اور صحابہٴ عظام  اس کے مستحق ہیں ۔ سال کے جن دنوں میں میسر ہو اور جو کچھ میسر ہو، اور جو کچھ صدقہ کر دیا جائے ، اور اس کا ثواب بزرگان ِ دین اور اموات ِ مسلمین کو بخش دیا جائے ۔ فقراء اس کھانے کو کھا سکتے ہیں ، امراء اور صاحب ِ نصاب نہیں کھا سکتے؛ کیوں کہ یہ ایصال ِ ثواب کے لیے بطور ِ صدقہ ہے ۔( کفایت المفتی : ۱ / ۱۶۶)

مولانا احمد رضا خاں صاحب بھی اسی کے قائل ہیں:

جو عامی شخص اس تعیینِ عادی کو توقیتِ شرعی جانے اور گمان کرے کہ ان کے علاوہ دنوں میں ایصالِ ثواب ہوگا ہی نہیں،یا جائز نہیں،یا ان ایام میں ثواب دیگر ایام سے زیادہ کامل ووافر ہے،تو بلا شبہ وہ شخص غلط کار اور جاہل ہے اور اس گمان میں خطاکار اور صاحبِ باطل ہے۔(فتاویٰ رضویہ جدید:۹/۹۵۱)

گیارھویں شریف میں چراغاں کرنا

”گیارہ ربیع الاول کو چراغاں یا روشنی کرنا․․․․․ بالکل ناجائز اور بدعت ہے اور دیوالی کی پوری نقل ہے۔ مساجد میں بھی نمازیوں کی ضرورت سے زیادہ رسماً ورواجاً روشنی کرنا اسراف وحرام ہے۔ اگر متولی مسجد کے مال میں سے ایسا کرے گا تو اس کو اس کا تاوان دینا ہوگا“۔ (فتاویٰ رحیمیہ جدید ترتیب : ۲/۷۷)

مولانا ندیم قاسمی

گمبد خزرا کو علماء دیوبند نے بچایا

image

ﻧﺤﻤﺪﻩ ﻭ ﻧﺼﻠﻰ ﻭﻧﺴﻠﻰ ﻋﻠﻰ ﺭﺳﻮﻟﻪ ﺍﻟﻜﺮﻳﻢ ﺃﻣﺎ ﺑﻌﺪ

ﺑﺴﻢ ﺍﻟﻠﻪ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺍﻟﺮﺣﻴﻢ

1343 ہجری میں سلطان ابن سعود نے حجاز مقدس کی سرزمین پر قبضہ کر لیا اور حرمین شریفین کے جنت معلی اور جنت البقع کے مزاروں کے قبے گرا دیئے- جس کہ وجہ سے عام تور پر عالم اسلام کے مسلمانوں میں سخط ناراضگی پہدا ہوگئی تو سلطان نے 1343 ہجری کے موقع حج پر ایک موتمر منعقد کی- جس میں ہندوستان کے علماء کی طرف سے حضرت مفتی کفایت اللہ رحماللہ صدر جمعیت علماء ہند دہلی، حضرت علامہ شبیر احمد عثمانی، علامہ سید سلیمان ندوی، مولانا محمد علی جوہر، مولانا شوکت علی اور کچھ دیگر علماء بھی شامل ہوئے-

سلطان ابن سعود کی تقریر

اس موقع پر سلطان ابن ابن سعود نے تقریر کرتے ہوئے فرمایا:

(الف) “چار اماموں کے فروعی اختلافات میں ہم تشدد نہیں کرتے لیکن اصل توحید اور قرآن و حدیث کی اتباع کے کوئی طاقت ہمیں الگ نہیں کر سکتی خواہ دنیا راضی ہع یا ناراض-”

(ب) “یہودی و نصارا کو ہم کیوں کافر کہتے ہیں؟ اس لیے کہتے ہیں کہ وہ گیراللہ کی پرستش کرتے ہیں، لیکن ساتھ ہی یہ بھی کہتے ہہں کہ: ما نعبد ھم الا ليقربونآ اليالله زلفا (یعنی ہم انکی پوجا و عبادت اللہ تعالی کے تقریب و رضا حاصل کرنے کے لیے کرتے ہیں) تو جو لوگ بزرگان دین کی قبروں کی پرستش اور ان کے سامنے سجدے کرتے ہیں، وہ بت پرستوں ہی کی طرح کافر و مشرک ہیں-”

(ج) جب حضرت عمر کو پتہ چلا کہ کچ لوگ وادی حدیبیہ میں شجرة الرضوان کے پاس جاکر نمازیں پڑھتے ہیں تو حضرت عمر نے اس درخت کو کٹوا دیا تھا کہ آئندہ خدانخواستہ لوگ اس درقت کی پوجہ نہ شروع کردیں-”

سلطان کا مطلب یہ تھا کہ قبتے گرانا بھی درقت رضوان کٹوانے کی طرح ہی ہے-

ہندوستان کے تمام علماء نے یہ طے کیا کہ ہماری طرف سے شیخ الاسلام حضرت علامہ شبیر احمد عثمانی دیوبندی سلطان ابن سعود کی تقریر کا جواب دیں گے-

مولانا عثمانی کی ایمان افروز تقریر

مولانا عثمانی نے پھلے تو اپنی شاندار پزیرائی اور مہمان نوازی کا شکریہ ادا کیا- اس کے بعد فرمایا:

(الف) ہندوستان کے اہل سنت علماء پوری بسیرت کے ساتھ تصریح کرکے کتاباللہ اور سنت رسول صلی اللہ علی وسلم کے اتبع پر پورا زور صرف کرتے ہیں اور یہ بھی کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علی آلہ وسلم کے مکمل اتبع میں ہی ہر کامیابی ہے لیکن کتاباللہ اور سنت رسول اللہ کے مواقع استمال کو سمجھنا ہر کس و ناکس کے بس کی بات نہیں- اد کے لئے صائب رائے اور صحیح اجتہاد کی اشد ضرورت ہے-

(ا) حضور صلی اللہ علی وسلم نے حضرت زینب سے نکاہ فرمایا اور اس بات کا بلکل خیال نہ رکھا کہ دنیا کیا کہے گی- دوسری طرف خانہ کعبہ کو گرا کر بنائے ابراہیمی پر تعمیر کرنے سے نئے نئے مسلمانوں کے جذبات کا لحاظ کرتے ہوئے آپ رگ گئے تا کہ دنیا والے یہ نا کہیں کہ محمد نے خانہ کابہ ڈھا دیا- دونوں موقوں کا فرق حضور کے اجتہاد مبارک پر موقوف ہیں-

(ب) اللہ تعالی نے حکم دیا: جاهد الكفار و المنافقين واغلظ عليهم- (یعنی کفار اور منافقين سے جہاد کرو اور ان پر سختی کرو) ایک طرف تو اس حکم خداوندی کا تقاضا ہے کہ کفار و منافقین کے ساتھ سختی کی جائے اور دوسری طرف آپ نے رئیس المنافقين عبداللہ بن ابی کی نماز جنازہ پڈھا دی- پھر صحابہ نے عرض کیا کہ منافقین کو قتل کر دیا جائے- مگر آپ نے بات منظور نہ فرمائی- خشية ان ليقول الناس ان محمد ايقتل اصحابه (یعنی اس اندیشہ کے پیش نظر کہ لوگ یہ نہ کھنے کگے کی محمد (صلی اللہ علی وسلم) اپنے ساتھیوں کو قتل کرتے ہیں- حالانکہ یہ دونوں باتیں واغلظ عليهم سے بظاہر مطابقت نہیں رکھتے تو اس فرق کو سمجھنے کے لیے بھی مجتہدانہ نظر کی ضرورت ہوتی ہے جو ہما و شما کے بس کی بات نہیں اور ایسے مواقع پر فیصلہ کرنے کے لیے بڑے تفقہ اور مجتہدانہ بصیرت کی ضرورت ہوتی ہے کہ نص کے تقاضے پر کھاں عمل کیا جائے گا اور کس طرح عمل کیا جائے گا- یہ تفقہ اور اجتہاد کی بات ہے-

(ب) سجدہ عبادت اور سجدہ تعظیم کا فرق بیان کرتے ہوئے مولانا عثمانی نے فرمایا:

“اگر کوئی شخس کسی قبر کو یا غیراللہ کو سجدہ کرے تو وہ قطعی طور پر کافر ہو جاتا ہے لیکن یہ ضروری نہیں کہ ہر سجدہ سجدہ عبادت ہی ہو جو شرک حقیقی اور شرک جلی ہے، بلکہ وہ سجدہ تحیت بھی ہو سکتا ہے جس کا مقصد دوسرے کی تعظیم کرنا ہوتا ہے اور ہی سجدہ تعظیمی شرک جلی کے حکم ہیں نہیں ہے- ہاں ہماری شریعت میں قطعا ناجائز ہے اور اس کے مرتکب کو سزا دی جا سکتی ہے، لیکن اس شخس کو مشرک قطعی کہنا اور اس کے قتل اور مال ضبط کرنے کو جائز قرار نہیں دیا جا سکتا- خود قرآن پاک میں حضرت آدم علیہ السلام کو فرشتوں کے سجدہ کرنے اور یوسف علیہ السلام کو ان کے بھائیوں اور والدین کے سجدہ کرنے کا ذکر موجود ہے اور مفسرین کی اظیم اکثریت نے اس سجدہ سے معروف سجدہ (زمین پر ماتھا رکھنا) ہی مراد لیا ہے اور پھر اس کو سجدہ تعظیمی ہی کرار دیا ہے- بہر حال اگر کوئی شخس کسی غیراللہ کو سجدہ تعظیمی کرے تو وہ ہماری شریعت کے مطابق گنہگار تو ہوگا، کیکن اسے مشرک، کافر اور مباح الدم و المال کرار نہیں دیا جاسکتا اور اس بیان سے میرا مقصد سجدہ تعظیمی کو جائز سمجھنے والوں کی وکالت کرنا نہیں بلکہ سجدہ عبادت اور سجدہ تعظیمی کے فرق کو بیان کرنا ہے-

رہا مسئلہ قبوں کے گرانے کا اگر ان کا بنانا صحیح نہ بھی ہو تو پم قبوں کو گرا دینا بھا صحیح نہیں سمجھتے- امیر المؤمنین ولید بن عبد الملک عبشمی (اموی) نے حاکم مدینہ عمر بن عبدالعزیز عبشمی کو حکم بھیجا کہ امہات المؤمنین کے حجرات مبارکہ کو گرا کر مسجد نبوی کی توسیع کی جائے – اور حضرت عمر بن عبدالعزیز عبشمی نے دوسرے حجرات کو گراتے ہوئے ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ زضی اللہ تعالی عنہا کا حجرہ بھی گرا دیا- جس سے حضور صلی اللہ علیہ وسلم، حضرت صدیق اکبر اور حضرت فاروق اعظم رضی اللہ عنہما کی قبریں ظاہر ہو گیئں تو اس وقت حضرت عمر بن عبدالعزیز اتنے روئے کہ ایسے روتے کبھی نہ دیکھے گیے تھے- حالانکہ حجرات کو گرانے کا حکم بھی خود ہی دیا تھا- پھر سیدہ عائشہ زضی اللہ عنہا کے حجرے کو دوبارہ تعمیر کرنے کا حکم دیا اور وہ حجرہ مبارکہ دوبارہ تعمیر کرنے کا حکم دیا اور وہ حجرہ مبارکہ تعمیر ہوا-

اس بیان سے میرا مقصد قبروں پر گنبد بنانے کی ترغیب دینا نہیں بلکہ یہ بتانا مقصود ہے کی قبر عاظم کے معاملے کو قلوب الناس میں تاثیر اور دخل ہے جو اس وقت حضرت عمر بن عبدالعزیز کے بے تہاشا رونے اور اس وقت عالم اسلام کی آپ سے ناراضگی سے ظاہر ہے-

(ج) حضرت عمر نے درخت کو اس خطرہ سے کٹوا دیا تھا کہ جاہل لوگ آئندہ چل کر اس درخت کی پوجا نہ شروع کردیں- بعیت رضوان 6 ہجری ہیں ہوئی تھی اور حضور الیہ السلام کا وسال پر ملال 11 ہجری ہیں ہوا- آپ کے بعد خلیفہ اول کے عہد خلافت کے اڑھائی سال بھی گزرے لیکن اس درخت کو کٹوانے کا نہ حضور الیہ السلام کو خیال آیا نہ صدیق اکبر کو- ان کے بعد حضرت عمر کی خلافت راشدہ قائم ہوئی- لیکن یہ بھی متعین نہیں ہے کہ حضرت عمر نے اپنی دس سالہ خلافت کے کونسے سال میں اس درخت کے کٹوانے کا ارادہ کیا- گو حضرت عمر کی صوابدید بلکل صحیح تھی لیکن یہ گنبد تو صدیوں سے بنے چلے آ رھے تھے اور اس چودھویں صدی میں بھی کوئی آدمی ان کی پرستش کرتا ہوا نہیں دیکھا گیا-

(ه) رہا وہاں نماز پڑھنا، تو حدیث معراج میں آتا ہے- کہ جبرائیل علیہ السلام نے حضور صلی علیہ وسلم کو چار جگہ براق سے اتر کر نماز پڑوائی- پھلے مدینہ میں اور بتایا کہ یہ جگہ آپ کی ہجرت کی ہے، دوسرے جبل طور پر کہ یھاں اللہ تعالی نے حضرت موسی علیہ السلام سے کلام فرمایا- پھر مسکن حضرت شعیب پر چوتھے بیت اللہم پر جھاں حضرت عیسی علیہ السلام کی ولادت ہوئی تھی- (نسائی شریف کتاب الصلاة ص٨٠ مطبع نظامی کانپور ١٢٩٦ھ)

  ١ پس اگر جبل طور پر حضور سے نماز پڑھوائی گئی کہ یہاں اللہ تعالی نے حضرت موسی علیہ السلام کے ساتھ کلام کیا تھا، تو جبل نور پر ہم کو نماز سے کیوں روکا جائے کہ جہاں اللہ تعالی کی پہلی وحی حضور الیہ السلام پر آئی تھی-

٢ مسکن شعیب پر حضور سے نماز پڑھوائی گئی تو کیا غضب ہو جائے گا جو ہم مسکن خدیجہ الکبرا رضی اللہ عنہا پر دو نفل پڑھ لیں جہاں حضور الیہ السلام نے اپنی مبارک زندگی کے اٹھائیس نورانی سال گزارے تھے-

٣ جب بیت اللہم مولد حضرت عیسی علیہ السلام پر حضور الیہ السلام سے دو رکعت پڑھوائی جائیں تو امت محمدیہ کیوں مولد نبی کریم پر دو رکعت پڑھنے سے روکی جائے طبرانی نے مقام مولد النبی صلی اللہ الیہ وسلم کو “انفس البقاع بعد المسجد الحرام فى” مکہ مکرمہ میں مسجد الحرام کے بعد مقام مولد النبی کریم علیہ السلام کو کائنات ارضی کا نفیس ترین ٹکڑاقرار دیا ہے-

٤. مسکن شعیب پر حضرت موسی علیہ السلام نے پناہ لی تھی، تو اس جگہ آپ سے دو رکعت نفل پڑھوائے گئے تو کونسی قیامت ٹوٹ پڑےگی جو ہم لوگ غار ثور جہاں حضور الیہ السلام نے تین دن پناہ لی تھی، دو نفک پڑھ لیں-

سلطان ابن سعود کا جواب

مولانا عثمانی رحمااللہ کے اس مفصل جواب سے شاہی دربار پر سناٹا چھاگیا- آخر سلطان ابن سعود نے یہ کہہ کر بات ختم کی کہ:

“میں آپ کا بہت ممنون ہوں اور آپ کے بیان اور خیالات میں بہت رفعت اور علمی بلندی ہے- لہاذا میں ان باتوں کا جواب نہیں دے سکتا- ان تفاصیل کا بہتر جواب ہمارے علماء ہی دے سکیں گے- ان سے  ہی یہ مسائل حل ہو سکتے ہیں-“

کالکی اوتار

حال ہی میں بھارت میں شائع ہونے والی کتاب ”کالکی اوتارا“ نے دنیا بھر ہلچل مچا دی ہے۔ اس کتاب میں يہ بتایا گیا ہے کہ ہندووں کی مذہبی کتابوں میں جس کا کالکی اوتار کا تذکرہ ہے ‘ وہ آخری رسول محمد صلی اﷲ علیہ وسلم بن عبداﷲ ہیں۔

اس کتاب کا مصنف اگر کوئی مسلمان ہوگا تو وہ اب تک جیل میں ہوتا اور اس کتاب پر پابندی لگ چکی ہوتی مگراس کے مصنف پنڈت وید پرکاش برہمن ہندو ہیں اور الہ آباد یونیورسٹی سے وابستہ ہیں۔وہ سنسکرت کے معروف محقق اور اسکالر ہیں۔ انہوں نے اپنی اس تحقیق کو ملک کے آٹھ مشہور معروف محققین پنڈتوں کے سامنے پیش کیاہے جو اپنے شعبے میں مستند گرادنے جاتے ہیں۔ ان پنڈتوں نے کتاب کے بغور مطالعے اور تحقیق کے بعد يہ تسلیم کیاہے کہ کتاب میں پیش کيے گئے حوالے جات مستند اور درست ہیں۔ انہوں نے اپنی تحقیق کا نام ”کالکی اوتار“ یعنی تمام کائنات کے رہنما رکھا ہے۔

ہندووں کی اہم مذہبی کتب میں ايک عظیم رہنما کا ذکر ہے۔ جسے ”کالکی اوتار“ کا نام دیا گیا ہے اس سے مراد حضرت محمد صلی اﷲ علیہ وسلم ہیں جو مکہ میں پیدا ہوئے۔ چنانچہ تمام ہندو جہاں کہیں بھی ہوں، ان کو کسی کالکی اوتار کا مزید انتظار نہیں کرنا ہے، بلکہ محض اسلام قبول کرنا ہے، اور آخری رسول صلی اﷲ علیہ وسلم کے نقش قدم پر چلنا ہے جو بہت پہلے اپنے مشن کی تکمیل کے بعد اس دنیا سے تشریف لے گئے ہیں۔ اپنے اس دعوے کی دليل میں پنڈت وید پرکاش نے ہندووں کی مقدس مذہبی کتاب”وید“ سے مندرجہ ذیل حوالے دلیل کے ساتھ پیش کےے ہیں۔

1۔ ”وید“ کتاب میں لکھا ہے کہ”کالکی اوتار“ بھگوان کاآخری اوتار ہوگا جو پوری دنیا کوراستہ دکھائے گا۔ان کلمات کاحوالہ دينے کے بعد پنڈت ویدپرکاش يہ کہتے ہیں کہ يہ صرف محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کے معاملے میں درست ہو سکتا ہے۔

2۔”ہندوستان“ کی پیش گوئی کے مطابق”کالکی اوتار“ايک جزیرے میں پیدا ہوں گے اور يہ عرب علاقہ ہے، جیسے جزیرة العرب کہا جاتا ہے۔

3۔ مقدس کتاب میں لکھا ہے کہ ”کالکی اوتار“ کے والد کا نام ’‘ وشنو بھگت“ اور والدہ کا نام ” سومانب“ ہوگا۔ سنسکرت زبان میں ” وشنو“ اﷲ کے معنوں میں استعمال ہوتا ہے اور” بھگت“ کے معنی غلام اور بندے کے ہیں۔ چنانچہ عربی زبان میں ”وشنو بھگت“ کا مطلب اﷲ کا بندہ یعنی ”عبداﷲ“ ہے۔سنسکرت میں ”سومانب“کا مطلب امن ہے جو کہ عربی زبان میں ”آمنہ“ ہوگا اور آخری رسول (صلی اﷲ علیہ وسلم) کے والد کا نام عبداﷲ اور والدہ کا نام آمنہ ہے۔

4۔وید کتاب میں لکھا ہے کہ ”کالکی اوتار“ زیتون اور کھجور استعمال کرے گا۔ يہ دونوں پھل حضور اکرم صلی اﷲ علیہ وسلم کو مرغوب تھے۔ وہ اپنے قول میں سچا اور دیانت دار ہو گا۔ مکہ میں محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کے لئے صادق اور امین کے لقب استعمال کيے جاتے تھے۔

5۔ ”وید “ کے مطابق”کالکی اوتار“ اپنی سر زمین کے معزز خاندان میں سے ہوگا اور يہ بھی محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کے بارے میں سچ ثابت ہوتا ہے کہ آپ قریش کے معزز قبیلے میں سے تھے، جس کی مکہ میں بے حد عزت تھی۔

6۔ہماری کتاب کہتی ہے کہ بھگوان ”کالکی اوتار“ کو اپنے خصوصی قاصد کے ذريعے ايک غار میں پڑھائے گا۔ اس معاملے میں يہ بھی درست ہے کہ محمد صلی اﷲ علیہ وسلم مکہ کی وہ واحد شخصیت تھے، جنہیں اﷲ تعالی نے غار حرا میں اپنے خاص فرشتے حضرت جبرائیل کے ذريعے تعلیم دی۔

7۔ ہمارے بنیادی عقیدے کے مطابق بھگوان ”کالکی اوتار“ کو ايک تیز ترین گھوڑا عطا فرمائے گا، جس پر سوار ہو کر وہ زمین اور سات آسمانوں کی سیر کر آئے گا۔محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کا” براق پر معراج کا سفر“ کیا يہ ثابت نہیں کرتا ہے؟

8۔ ہمیں یقین ہے کہ بھگوان ”کالکی اوتار“ کی بہت مدد کرے گا اور اسے بہت قوت عطا فرمائے گا۔ ہم جانتے ہیں کہ جنگ بدر میں اﷲ نے محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کی فرشتوں سے مدد فرمائی۔

9۔ ہماری ساری مذہبی کتابوں کے مطابق” کالکی اوتار“گھڑ سواری،تیز اندازی اور تلوار زنی میں ماہر ہوگا۔

پنڈت وید پرکاش نے اس پر جو تبصرہ کیا ہے۔ وہ اہم اور قابل غور ہے۔ وہ لکھتے ہیں کہ گھوڑوں،تلواروں اور نیزوں کا زمانہ بہت پہلے گزر چکاہے۔اب ٹینک،توپ اور مزائل جیسے ہتھیار استعمال میں ہیں۔ لہذا يہ عقل مندی نہیں ہے۔ کہ ہم تلواروں،تیروں اور برچھیوں سے مسلح”کالکی اوتار“ کا انتظار کرتے رہیں۔حقیقت يہ ہے کہ مقدس کتابوں میں ”کالکی اوتار“ کے واضح اشارے حضرت محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کے بارے میں ہیں جو ان تمام حربی فنون میں کامل مہارت رکھتے تھے۔ ٹینک توپ اور مزائل کے اس دور میں گھڑ سوار، تیغ زن اور تیرا نداز کالکی اوتار کا انتظار نری حماقت ہے۔

ٹیپو سلطان – دین میں سختی خاندان رائے بریلی سے روحانی تعلق کا اثر

[مولانا الیاس ندوی]

دنیا کی مختلف زبانوں میں اب تک سلطان ٹیپو پر متعدد کتابیں مختلس انداز اور پہلووں سے لکھی گیئ ہیں ہندوستان کی تمام تاریخی شخصیات میں تنہا ٹیپو سلطان کی ذات ایسی ہے کہ اس کے متعلق لکھنے والوں کی اکثریت اس کی ہم مذہب نہیں ہے اس لی ذاتی زندگی و سیرت کا جائزہ لینے والے مصنفین و مؤرخین اس بات پر متفق پیں کہ سلطان اپنی غیر معمولی مذہبی رواداری کے باوجود اپنے مذہب سے بڑی عقیدت و محبت رکھتا تھا اور وہ اس کا ایک سچا و مخلص پیرو تھا اسلامہ تعلیمات پر عمل کے سلسلہ میں وہ اپنی ذات کے علاوہ عام مسلمانوں کے لئے بھی کسی رعایت تخفیف یا نرمی کا قائل نہیں تھا لیکن افسوس اس بات کا ہے کہ کسی بھی مصنف یا مؤرخ نے اب تک باقعدہ اس بات کا پتہ لگانے کی کوشش نہیں کی کہ سلطان ٹیبو کے اندر اس قدر دینداری و طقوی اسلام پسندی اور مذہبی سختی کہاں سے آئی کے اپنی رعایا کہ ایک بڑے طبقہ کی ناراضگی کے بوجود اس نے جاہلی خرافات و بدعات کے سلسلہ میں کسی چھوٹ سے ساف انکار کیا حالانکہ مذہب کہ معاملہ میں اس لے والد حیدر علی ذاتی طور پر زیادہ سخت نہیں تھے اس کا خاندان صحیح روایات کے متابق عرب کے قبیلہ قریش سے تعلق رکھنے کے بوجود سالوں سے ہندؤوں کے ساتھ اس ملک ہیں رہنے کی ہجہ سے کسی بڑے دینی مزاج یا اسلامی اسپرٹ کا حامل نہیں رہ گیا تھا خود اسکی جائے پیدائش دیون ہلی میں جہاں اس نے اپنا بچپن گزارا کوئی ایسا دینی ماحول یا اسلامی معاشرہ نہیں پایا جاتا تھا جس کی بناء پر ہم کہ سکیں کہ شاید اس ماحول کا اس پر اثر ہوا ہو تلاش بسیار کے بعد راقم الحروف کو مقدومی حضرت مولانا سید ابوالحسن علی ندوی دامت برکاتہم کے اشارہ پر کتب خانہ شبلی ندوةا لعماء لکھنو میں موجود رائے بریلی کے حسنی خاندان کے ذاتی خاندانی ذخیرہ کتب میں جس میں سر فہرست سید حیدر علی ٹونکی کا مخطوطہ وقائعاحمدی تھا اسکا سرا مل گیا اور وہ یہ کہ بر صغیر کی سبسے بڑی عظیم تحریک جہادو احیاء خلافت کے بانی امیر الؤ منین فی الہند حضرت سید احمد شہید کے حقیقی نانا شاہ ابو سعید صاحب اور انکے فرزند شاہ ابو اللیث صاحب سے ٹیپو کا روحانی تعلق قائم تھا اور ان دونوں بزرگوں کو اس خاندان میں روحانی مرشد و سرپرست  کی حیثیت حاصل تھی یہ پورہ خاندان سلسلہ نقشبندیہ میں شاہ ابو اللیث صاحب سے بعیت تھا اور اس خدار سیدہ خاندان کے روحانی اثرات اور انکی آرزوں و تمناؤں کی روح سلطان ٹیپو کے جسم و جان میں کام کر رہی تھی سلطنت میں محرم کی رسومات کے سلسلہ میں ٹیپو کی سختی تجارتی و روایتی پیری مریدی پر اسکی روک بھی ان ہی بزرگوں کی صحبت کئ اثر سے تھی جن کا پورا خاندان اس سلسلہ میں اس وقت پورے ملک ہیں شہرت رکھتا تھا ورنہ ملک کے اس زمانہ کے عام حالات اور مسلم عوام کے جاہلی رسومات و بدعات کی طرف گیر معمولی رحجان کو دیکھتے ہوئے ٹیپو کلیئے اسپر روک لگانا اتنا آسان نہیں تھا شاہ ابو سعید صاحب مع اپنے بیٹے شاہ ابو للیث صاحب کے تبلیغ و اصلاح کی نیت سے شمالی ہند سے ہزاروں میل کا فاصلہ طے کرکے جنوب مغرب میں نواب حیدر علی کے زمانہ میں سلطنت خداداد میسور تشریف لائے تھے جھاں  ان کے ہاتھوں ہزاروں مسلمانوں نے بعیت کی تھی شاہ ابو للیث صاحب جب فریضہ حج کی ادائیگی کے بعد اپنے وطن رائے بریلی تشریف لائے تو اس کے بعد انہوں نے مستقل سلطنت خداداد ہی میں قیام کیا اور وہیں رہ کر آپ نے سلطانی خاندان کی دینی و روحانی رہنمائی کی- آپ کا قیام مغربی ساہلی شہر منگلور میں تھا جس کا اس وقت نام کوڑیال بندر تھا وہیں 1208 ہجری مطابق 1793 عیسوی مہں سلطان کی شہادت سے چھ سال قبل آپ کی وفات بھی ہویئ البتہ شاہ ابو سعید کا انتقال 1193 ہجری میں اپنے وطن رائے بریلی میں ہی ہوا-

1822 عیسوی میں جب حضرت سید احمد شہید رحمااللہ یعنی شاہ ابو اللیث صاحب کے بھانجے مع اپنے قافلہ کے حج کے ارادہ سے مکہ جاتے ہوئے کلکتہ ہیں تین ماہ رکے وہ اس وقت کلکتہ کے ٹالیگنج محلہ میں مقیم سلطان ٹیپو کے جلا وطن شہزادوں اور انکی والدہ کو اس کی اطلاع ہوئی بیگم ٹیپو کو اسکا علم تھا کہ انکے شوہر ٹیپو اور خسر نواب حیدر علی کا رائے بریلی کے حسنی خاندان کے بزرگوں شاہ ابو سعید صاحب و شاہ ابو اللیث صاحب سے روحانی تعلق تھا اور یہ دونوں ان سے سلسلہ نقشبندیہ میں مرید تھے اس نے اپنے ایک آدمی محمد قاسم کو سید صاحب کی خدمت میں دریافت حال کیلئے بھیجا کہ وہ معلوم کرے کہ یہ سید صاحب کس کی اولاد میں سے ہیں اگر انکا شاہ ابو سعید صاحب و شاہ ابو اللیث صاحب کے خاندان ہی سے تعلق ہو تو ہم بھی اسے قدم بوسی کریں سید صاحب نے کہلوایا کہ حضرت شاہ ابو سعید صاحب تو ہمارے حقیقی نانا اور شاہ ابو اللیث صاحب ہمارے ماموں تھے اس کے پعد سید صاحب نے بیگم ٹیپو کی درخواست پر تمام شہزادوں سے بعیت لی خود بیگم ٹیپو اور سلطان لی ایک لوتی بیٹی بھی دیگر شاہی خواتین کے ساتھ بعیت لےنے والوں میں شامل تھیں بیگم ٹیپو بڑہ ہی ذاکرہ و متقیہ خاتون تھی سید صاحب کی توجہ و فیض سے اس کو مزید روحانی کمال حاصل ہو گیا تھا سلطان کے بعض شہزادوں کے عقائد میں ان کے ایک دہریہ استاذ مولوی عبد الرحیم کی صحبت سے بڑی تبدیلی پیدا ہوکئی تھی لیکن سید صاحب کے حکم سے بیگم ٹیپو نے شہزادوں کو آئندہ پڑھانے سے مولوی عبد الرحیم کو روک دیا تھا-   

علماء دیوبند ﻣﻔﺘﯽ ﺭﺷﯿﺪ ﺍﺣﻤﺪ ﮔﻨﮕﻮﮨﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﭘﮧ اعتراض (ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﻮﺍﻟﯽ ﮐﯽ ﻣﭩﮭﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ) کا جواب

سوال:

ﺑﺮﯾﻠﻮﯼ ﺣﻀﺮﺍﺕ، ﻣﻔﺘﯽ ﺭﺷﯿﺪ ﺍﺣﻤﺪ ﮔﻨﮕﻮﮨﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﭘﮧ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﻮﺍﻟﯽ ﮐﯽ ﻣﭩﮭﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ ، ‏
(ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺭﺷﯿﺪﯾﮧ ﺹ : 575‏)

ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﮐﯽ ﺷﺮﺑﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﭩﮭﺎﺋﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﮨﮯ۔
‏(ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺭﺷﯿﺪﯾﮧ ﺹ 120:‏) ۔

ﺑﺮﺍﺋﮯ ﻣﮩﺮﺑﺎﻧﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺿﺎﺣﺖ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﺻﺤﯿﺢ ﮨﮯ؟

جواب:

‏(ﺍﻟﻒ) ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺭﺷﯿﺪﯾﮧ ﻣﯿﮟ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﻮﻟﯽ ﯾﺎ ﺩﯾﻮﺍﻟﯽ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ” ﺑﮧ ﻃﻮﺭ ﺗﺤﻔﮧ “ ﺟﻮ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺑﮭﯿﺠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺣﮑﻢ ﺷﺮﻋﯽ ﺩﺭﯾﺎﻓﺖ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ، ﺣﻀﺮﺕ ﮔﻨﮕﻮﮨﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺩﺭﺳﺖ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ، ﻇﺎﮨﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﻭﺟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ؛ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﯾﮧ ” ﭼﮍﮬﺎﻭﺍ “ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ، ﻋﺎﻡ ” ﺗﺤﻔﮧ “ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﮔﺮ ” ﭼﮍﮬﺎﻭﺍ “ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺒﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔

(ﺏ‏) ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺭﺷﯿﺪﯾﮧ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﮐﯽ ﺷﺮﺑﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﭩﮭﺎﺋﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ، ﺍﺱ ‏( ﺹ : ‏) ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﮧ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ” ﻣﺤﺮﻡ ﻣﯿﮟ ﺫﮐﺮ ﺷﮩﺎﺩﺕ ﺣﺴﯿﻦ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﮔﺮ ﭼﮧ ﺑﺮﻭﺍﯾﺎﺕ ﺻﺤﯿﺤﮧ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺳﺒﯿﻞ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﺷﺮﺑﺖ ﭘﻼﻧﺎ ﯾﺎ ﭼﻨﺪﮦ ”ﺳﺒﯿﻞ“ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﺑﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﻨﺎ ﯾﺎ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﻼﻧﺎ ﺳﺐ ﻧﺎﺩﺭﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﺗﺸﺒﮧ ﺭﻭﺍﻓﺾ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﯿﮟ“ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺷﮑﺎﻝ ﮨﻮﺗﻮ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮐﺮﯾﮟ۔

ضمیمہ

سوال: غیر مسلموں کے تہوار جیسے ہولی، دیوالی، کرسمس ڈے، کے موقع پر ان کی طرف سے بھیجی گئی مٹھائی کھانا، یا کوئی اور تحفہ لینا جائز ہے یا نہیں؟

الجواب بتوفیق اللہ تعالٰی:

غیر مسلموں کے تہوار کے موقع پر ان کی طرف سے بھیجی گئی مٹھائی کھانا، یا کوئی اور تحفہ لینا جائز ہے، چنانچہ ……

ابن تیمیہ کہتے ہیں:

“کفار کی عید کے دن ان سے تحائف قبول کرنے کے بارے میں: حضرت علی رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نوروز کے دن انہیں تحفہ دیا گیا تو آپ نے اسے قبول کر لیا۔

اور مصنف ابن ابی شیبہ میں روایت ہے کہ:

“ایک عورت نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے استفسار کیا: ہمارے بچوں کو دودھ پلانے والی کچھ مجوسی خواتین ہیں، اور وہ اپنی عید کے دن تحائف بھیجتی ہیں، تو عائشہ رضی اللہ عنہا نے فرمایا کہ: “انکی عید کے دن ذبح کئے جانے والے جانور کا گوشت مت کھاؤ، لیکن نباتاتی اشیاء (پھل فروٹ) کھا سکتے ہو”

ان تمام روایات سے پتا چلتا ہے کہ کفار کی عید کے دن ان کے تحائف قبول کرنے میں  کوئی حرج نہیں ہے، چنانچہ عید یا غیر عید میں انکے تحائف قبول کرنے کا ایک ہی حکم ہے،

کیونکہ اس کی وجہ سے انکے کفریہ نظریات پر مشتمل شعائر کی ادائیگی میں معاونت (مدد) نہیں ہوتی”

البتہ کفار کی عید کے دن ان کو ہدیہ دینے حرام ہے، کیونکہ یہ انکے کفریہ نظریات اور عقائد پر رضامندی کا اظہار اور معاونت ہے، جو کہ حرام ہے،

یعنی غیر مسلموں کے تہوار پر ان کا تحفہ لے تو سکتے ہیں، لیکن انکو دے نہیں سکتے،

اس کے بعد ابن تیمیہ نے متنبہ کرتے ہوئے بتلایا کہ اہل کتاب کا ذبیحہ اگرچہ حلال ہے، لیکن جو انہوں نے اپنی عید کے لئے ذبح کیا ہے وہ حلال نہیں ہے، چنانچہ: “اہل کتاب کی طرف سے عید کےدن  ذبح کیے جانے والے جانور کے علاوہ انکے [نباتاتی] کھانے یعنی پھل فروٹ دال سبزی وغیرہ خرید کر یا ان سے تحفۃً لیکر کھائے جا سکتے ہیں۔

جبکہ مجوسیوں کے ذبیحہ کا حکم معلوم ہے کہ وہ سب کے ہاں حرام ہے،

خلاصہ یہ ہوا کہ: غیر مسلموں سے تحفہ قبول کر سکتے ہیں، لیکن اس کی کچھ شرائط ہیں:

1-  تحفہ (اگرجانور کے گوشت کی صورت میں ہے) تو شرط یہ ہے کہ انہوں نے اپنی عید کیلئے ذبح نہ کیا ہو،

2- اور اس تحفے کو انکی عید کے دن  کی مخصوص  رسومات میں استعمال نہ کیا جا تا ہو، مثلا: موم بتیاں، انڈے، اور درخت کی ٹہنیاں وغیرہ۔

3- تحفہ قبول کرتے وقت آپ اپنی اولاد کو عقیدہ ولاء اور براء کے بارے میں لازمی وضاحت سے بتلائیں، تا کہ ان کے دلوں میں عید  یا تحفہ دینے والے کی محبت گھر نہ کرجائے۔

4- تحفہ قبول کرنے کا مقصد اسلام کی دعوت اور اسلام کیلئے اسکا دل نرم کرنا ہو، محبت اور پیار مقصود نہ ہو۔

5- اور اگر تحفہ ایسی چیز پر مشتمل ہو کہ اسے قبول کرنا جائز نہ ہو تو تحفہ قبول نہ کرتے  وقت انہیں اسکی وجہ بھی بتلا دی جائے، اس کیلئے مثلاً کہا جا سکتا ہے کہ:

“ہم آپ کا تحفہ اس لئے قبول نہیں کر رہے کہ یہ جانور  آپکی عید کے لیے ذبح کیا گیا ہے، اور ہمارے لئے یہ کھانا جائز نہیں ہے”

یا یہ کہے کہ: “اس تحفے کو وہی قبول کر سکتا ہے جو آپکے ساتھ آپکی عید میں شریک ہو، اور ہم آپکی عید نہیں مناتے، کیونکہ ہمارے دین میں یہ جائز نہیں ہے، اور آپکی عید میں ایسے نظریات پائے جاتے ہیں جو ہمارے ہاں درست نہیں ہیں” یا اسی طرح  کے ایسے جواب دیے جائیں جو انہیں اسلام کا پیغام سمجھنے کا سبب بنیں، اور  انکے کفریہ نظریات کے خطرات سے آگاہ کریں۔

فائدہ: ہر مسلمان کیلئے ضروری ہے کہ اپنے دین پر فخر  کرے، دینی احکامات کی پاسداری کرتے ہوئے باعزت بنے، کسی سے شرم کھاتے ہوئے یا ہچکچاتے ہوئے یا ڈرتے ہوئے ان احکامات  کی تعمیل سے دست بردار نہ ہو، کیونکہ اللہ تعالی سے شرم کھانے اور ڈرنے کا حق زیادہ ہے۔

مفتی معمور-بدر مظاہری، قاسمی (اعظم-پوری)

امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ تعالیٰ پر کئے جانے والے اعتراض کا تحقیقی جائزہ

(ایک بہت بڑی غلط فہمی کا ازالہ)

ہمارے زمانے کے اکثر لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ فقہ حنفی کسی ایک شخص کے اخذ کردہ مسائل کا نام ہے، جب کہ اس بات کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں،

فقہ حنفی، فقہاءِ احناف کے قرآن و حدیث سے اخذ کردہ اُن مسائل کا نام ہے جو مفتیٰ بہ ہیں(یعنی جن مسائل پر فتویٰ دیا گیا ہے) اور فقہاء احناف کے درخشندہ ستاروں میں امام ابو حنیفہ، امام ابو یوسف، امام محمد بن حسن ، امام زفراور امام حسن بن زیاد رحمھم اللہ تعالیٰ ہیں۔

اب جب فقہ حنفی کسی ایک شخصیت کا نام نہیں تو کسی ایک حنفی کی بات کو پوری فقۂ حنفی کی طرف منسوب کردینا جہالت کے سوا کچھ نہیں ہوگا، لیکن اس کے باوجود لوگ تواتر کیساتھ اس قسم کے لغو اعتراضات کرتے رہتے ہیں۔

مذکورہ بالا بات اگر اچھی طرح ذہن نشین کر لی جائے تو بہت سے مسائل پیدا ہی نہیں ہوسکیں گے۔

امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ تعالیٰ پر کئے جانے والے اعتراضات

امام اعظم رحمہ اللہ پر بہت اعتراضات کئے گئے ہیں، جن میں سے چند بظاہروزنی نظر آنے والے اعتراضات مع اُنکے جوابات کے زینتِ قرطاس کئے جاتے ہیں،

(۱) امام اعظم رحمہ اللہ پر ایک اعتراض یہ کیا جاتا ہے، اُن کی روایات صحاح ستّہ (حدیث کی چھ مشہور کتابوں) میں موجود نہیں ہیں، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ ائمہ ستّہ کے نزدیک قابل استدلال نہیں تھے۔

یہ ایک انتہائی سطحی اور عامیانہ اعتراض ہے، اِن ائمہ حضرات کا کسی جلیل القدر امام سے روایات کو اپنی کتاب میں درج نہ کرنا ، اُس امام کے ضعیف ہونے کو لازم نہیں، کھلی ہوئی بات یہ ہے کہ امام بخاری رحمہ اللہ نے امام شافعی رحمہ اللہ کی بھی کوئی روایت نہیں لی ہے، بلکہ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ جو امام بخاری کے استاذ ہیں، اور امام بخاری نے جنکی صحبت اٹھائی ہے، اُن کی بھی پوری صحیح بخاری میں صرف دو روایتیں ہیں ، ایک روایت تعلیقاً منقول ہے اور دوسری روایت امام بخاری نے کسی واسطہ سے نقل کی ہے، اسی طرح امام مسلم رحمہ اللہ نے اپنی صحیح میں امام بخاری سے کوئی روایت نقل نہیں کی ،حالانکہ وہ اُنکے استاذ ہیں ، نیز امام احمد رحمہ اللہ نے اپنی مسند میں امام مالک کی صرف تین روایات ذکر کی ہیں ، حالانکہ امام مالک کی سند اصحّ الاسانید شمار کی جاتی ہے، اب کیا اس سے یہ نتیجہ نکالا جا سکتا ہے کہ امام شافعی، امام مالک اور امام احمد رحمہم اللہ تینوں ضعیف ہیں؟؟؟

اس معاملہ میں حقیقت وہ ہے جو علامہ زاہد الکوثری نے’’شروط الائمۃ الخمسۃ للحازمی‘‘ کے حاشیہ پر لکھی ہے کہ در حقیقت ائمہ حدیث کے پیشِ نظر یہ بات تھی کہ وہ اُن احادیث کو زیادہ سے زیادہ محفوظ کر جائیں، جن کے ضائع ہونے کا خطرہ تھا، بخلاف امام ابو حنیفہ، امام مالک، امام شافعی اور امام احمد رحمہم اللہ جیسے حضرات کہ اِن کے تلامذہ اور مقلدین کی تعداد اتنی زیادہ تھی کہ اُن کی روایات کے ضائع ہونے کا اندیشہ نہ تھا، اس لئے انہوں نے اس کی حفاظت کی زیادہ ضرورت محسوس نہ کی۔

١ امام ابو حنیفہ پر ایک اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ حافظ شمس الدین ذہبی رحمہ اللہ نے ’’ میزان الاعتدال فی اسماء الرجال‘‘ میں امام ابو حنیفہ کا تذکرہ اِن الفاظ میں کیا ہے،

’’النعمان بن ثابت الکوفی امام اھل الرائ ضعفہ النسائی وابن عدی والدارقطنی واٰخرون‘‘

ترجمہ: نعمان بن ثابت کوفی (رحمہ اللہ) اہل رائے کے امام ہیں ،جنہیں امام نسائی، ابن عدی ، دار قطنی اور دوسرے حضرات نے ضعیف قرار دیا ہے۔

میزان الاعتدال میں یہ عبارت بلاشبہ الحاقی ہے یعنی مصنف نے خود نہیں لکھی، بلکہ کسی اور شخص نے اِسے حاشیہ پر لکھا اور بعد میں یہ متن میں شامل ہوگئی یا تو کسی کاتب کی غلطی سے یا جان بوجھ کر داخل کی گئی، اس کے دلائل مندرجہ ذیل ہیں:

١ حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے میزان الاعتدال کے مقدمہ میں یہ تصریح فرمائی ہے کہ اِس کتاب میں اُن بڑے بڑے ائمہ کا تذکرہ نہیں کروں گا ،جن کی جلالتِ قدر حدّتواتر کو پہنچی ہوئی ہے، خواہ اُن کے بارے میں کسی شخص نے کوئی کلام بھی کیا ہو، پھر اُن بڑے بڑے ائمہ کی مثال میں امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ کا نام بھی انھوں نے صراحۃً ذکر کیا ہے، پھر یہ کیسے ممکن ہے کہ انہوں نے اِس کتاب میں امام صاحب کا ذکر کیا ہو۔

۲ پھر جن بڑے بڑے ائمہ کا تذکرہ حافظ ذہبی نے میزان الاعتدال میں نہیں کیا ، اُن حضرات کے تذکرہ کیلئے انہوں نے ایک مستقل کتاب ’’تذکرۃ الحفاظ‘‘ لکھی ہے ، اور اس کتاب میں امام اعظم ابو حنیفہ کا نہ صرف تذکرہ موجود ہے، بلکہ انکی بڑی مدح و توصیف بیان کی گئی ہے، جیسا کہ حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے ’’تذکرۃالحفاظ‘‘ کی جلد اول، صفحہ ۱۹۵ پر اپنی سند سے سفیان بن عیینہ کا قول ذکر کیا ہے، وہ فرماتے ہیں،

’’لم یکن فی زمان ابی حنیفۃ بالکوفۃ رجل افضل منہ واورع ولا افقہ عنہ‘‘

(یعنی امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے زمانے میں کوئی شخص ایسا نہیں تھا، جو اُن سے زیادہ فضیلت وتقویٰ والا ہو، اور اس وقت اُن جیسا کوئی فقیہ بھی نہیں تھا۔)

اور حافظ ذہبی ہی نے صفحہ ۱۶۰ پر امام ابو داؤد رحمہ اللہ کا قول ذکر کیا ہے کہ

’’ ان ابا حنیفة کان اماما‘‘

(یعنی ابو حنیفہ رحمہ اللہ، وہ تو امام تھے۔)

﴿۳﴾ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ’’لسان المیزان‘‘ کو میزان الاعتدال پر ہی مبنی کیا ہے، یعنی جن رجال کا تذکرہ میزان الاعتدال میں نہیں ہے، اُن کا تذکرہ لسان المیزان میں بھی نہیں ہے، سوائے چند ایک کے اور لسان المیزان میں امام ابو حنیفہ کا تذکرہ موجود نہیں ، یہ اس بات کی صریح دلیل ہے کہ امام ابو حنیفہ کے بارے میں یہ عبارت اصل میزان الاعتدال میں بھی نہیں تھی بعد میں بڑھا دی گئی۔

۴ شیخ عبد الفتاح ابو غدّہ الحلبی رحمہ اللہ نے ’’الرفع و التکمیل‘‘ کے حاشیہ کے صفحہ ۱۰۱ پر لکھا ہے کہ ’’میں نے دمشق کے مکتبہ ظاہریہ میں میزان الاعتدال کا ایک نسخہ دیکھا ہے (تحت الرقم ۳۶۸حدیث) جو پورا کا پورا حافظ ذہبی رحمہ اللہ کے ایک شاگرد علامہ شرف الدین الوانی کے قلم سے لکھا ہوا ہے اور اس میں یہ تصریح ہے کہ میں نے یہ نسخہ اپنے استاد حافظ ذہبی کے سامنے تین مرتبہ پڑھا اور ان کے مسودہ سے اس کا مقابلہ کیا ، اس نسخہ میں امام ابو حنیفہ کا تذکرہ موجود نہیں ہے ۔

اسی طرح حضرت شیخ الاسلام مفتی تقی عثمانی صاحب دام ظلکم العالی نے فرمایا کہ میں نے مراکش کے دار الحکومت رباط کے مشہور کتب خانہ ’’الخزانة العامرہ‘‘ میں ۱۳۹ ق نمبر کے تحت ’’میزان الاعتدال‘‘ کا ایک قلمی نسخہ دیکھا ، جس پر حافظ ذہبی کے بہت سے شاگردوں کے پڑھنے کی تاریخیں درج ہیں اور اس میں یہ بھی تصریح ہے کہ کہ حافظ ذہبی رحمہ اللہ کے ایک شاگرد نے اُن کے سامنے اُن کی وفات سے صرف ایک سال پہلے اسے پڑھا تھا، اس نسخہ میں بھی امام ابو حنیفہ کا تذکرہ موجود نہیں، یہ اس بات کا دستاویزی ثبوت ہے کہ امام ابو حنیفہ کے بارے میں یہ عبارت کسی نے بعد میں بڑھائی ہے ، اصل نسخہ میں موجود نہیں تھی ، لہٰذا ثابت ہوگیا کہ حافظ ذہبی کا دامن امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ کی تضعیف اور تنقیص کے الزام سے بالکل پاک ہے۔

حافظ ذہبی رحمہ اللہ ایسی بات لکھ بھی کیسے سکتے ہیں جبکہ خود انہوں نے ایک مستقل کتاب امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے مناقب پر لکھی ہے۔

پھر جہاں تک حافظ ابن عدی کا تعلق ہے، بے شک وہ شروع میں امام ابو حنیفہ کے مخالف تھے، لیکن بعد میں جب وہ امام طحاوی رحمہ اللہ کے شاگرد بنے تو امام اعظم کی عظمت اور جلالتِ قدر کا احساس ہوا، چنانچہ انہوں نے اپنے سابقہ خیالات کی تلافی کیلئے مسندِ ابی حنیفہ تحریر فرمائی، لہٰذا اُن کے سابقہ قول کو امام صاحب کے خلاف حجت میں پیش کرنا قطعاً درست نہیں۔

(فائدہ) مسند ابی حنیفہ کے نام سے سترہ یا اس زائد کتابیں لکھی گئیں، جن کو بعد میں علامہ ابن خسرو رحمہ اللہ نے ’’جامع مسانید الامام الاعظم‘‘ کے نام سے جمع کردی ہیں۔

(۳) امام اعظم رحمہ اللہ پر ایک اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ امام نسائی نے اپنی کتاب’’الضعفاء‘‘ میں امام ابو حنیفہ کا تذکرہ کرتے ہوئے لکھا ہے کہ

’’نعمان بن ثابت ابو حنیفہ لیس بالقوی فی الحدیث‘‘ (یعنی نعمان بن ثابت ابو حنیفہ رحمہ اللہ حدیث کے معاملہ میں قوی نہیں تھے۔)

اس کا جواب یہ ہے کہ علماء نے جرح و تعدیل کے کچھ قاعدے مقرر کئے ہیں ، اور کسی راوی کے بارے میں جرح و تعدیل کا فیصلہ کرتے ہوئے اُن قواعد کو مد نظر رکھنا نہایت ضروری ہے ورنہ کسی بڑے سے بڑے محدث کی بھی عدالت و ثقاہت ثابت نہ ہو سکے گی ، کیونکہ تمام بڑے بڑے ائمہ پر کسی نہ کسی کی جرح ضرور موجود ہے ، چنانچہ امام شافعی پر یحییٰ بن معین نے ، امام احمد پر امام کرابیسی نے ، امام بخاری پر ذہلی نے اور امام اوزاعی پر امام احمد نے جرح کی ہے ، اگر اِن تمام اقوال کا اعتبار کیا جائے تو ان میں سے کوئی بھی ثقہ قرار نہیں پاسکتا ، انتہاء یہ ہے کہ ابن حزم نے امام ترمذی اور امام ابن ماجہ جیسے حضرات کو مجہول کہا ہے ،اور خود امام نسائی پر اتنے ہی علماء نے تشیّع (شیعہ) کا الزام کیا ہے اور اسی بناء پر انہیں مجروح کہا ہے ۔

حقیقت یہ ہے کہ علماء نے جرح و تعدیل میں کچھ اصول مقرر فرمائے ہیں ، اِ ن میں سے پہلا اصول یہ ہے کہ جس شخص کی امامت و عدالت حدّ تواتر کو پہنچی ہوئی ہو، اُس کے بارے میں ایک دو افراد کی جرح معتبر نہیں ، اورامام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ کی عدالت و امامت بھی حدّ تواتر کو پہنچی ہوئی ہے ، بڑے بڑے ائمہ حدیث نے آپ کے علم و تقویٰ کو خراج تحسین پیش کیا ہے ، اس لئے امام صاحب پر بھی آحاد کی جرح ہرگز معتبر نہیں۔

اس جواب پر ہمارے زمانے کے بعض جہلاء یہ اعتراض کرتے ہیں کہ محدثین کا معروف قاعدہ ہے کہ ’’الجرح مقدم علی التعدیل‘‘ (یعنی جرح تعدیل پر مقدم ہوتی ہے) لہٰذا جب امام صاحب کے بارے میں جرح و تعدیل دونوں منقول ہیں تو جرح راجح ہوگی، لیکن یہ اعتراض جرح و تعدیل کے اصول سے ناواقفیت پر مبنی ہے کیونکہ ائمہ حدیث نے اِس بات کی تصریح کی ہے کہ’’الجرح مقدم علی التعدیل‘‘ کا قاعدہ مطلق نہیں ، بلکہ چند شرائط کے ساتھ مقید ہے، اس کی تفصیل یہ ہے کہ اگر کسی راوی کے بارے میں جرح اور تعدیل کے اقوال متعارض ہوں ،ان میں ترجیح کے لئے علماء نے اوّلاً دو طریقے اختیار کئے ہیں، پہلا طریقہ جو کہ جرح و تعدیل کے دوسرے اصول کی حیثیت رکھتا ہے ،اُسے خطیب بغدادی نے ’’الکفایۃ فی اصول الحدیث والروایۃ‘‘ میں یہ بیان کیا ہے کہ
’’ایسے مواقع پر یہ دیکھا جائے گا کہ جارحین کی تعداد زیادہ ہے یا معدلین کی، جس کی طرف تعداد زیادہ ہوگی ، اُسی جانب کو اختیار کیا جائے گا ۔‘‘

شافعیہ میں سے علامہ تاج الدین سبکی رحمہ اللہ بھی اسی کے قائل ہیں ، اگر یہ طریقِ کار اختیار کیا جائے تب بھی امام ابو حنیفہ کی تعدیل میں کوئی شبہ نہیں رہتا ، کیونکہ امام صاحب پر جرح کرنے والے صرف معدودے چند افراد ہیں ،جن میں ایک نام حافظ ابن عدی رحمہ اللہ کا ہے، اور یہ تحریر کیا جا چکا کہ ابن عدی امام طحاوی کے شاگرد بننے کے بعد امام اعظم کی عظمت کے قائل ہوچکے تھے۔

اور دوسری طرف امام صاحب کے مادّحین اتنی بڑی تعداد میں ہیں کہ اُن کو گِنا بھی نہیں جاسکتا، نمونہ کے طور پر ہم چند اقوال پیش کرتے ہیں،
علمِ جرح و تعدیل کے سب سے پہلے عالم، جنہوں نے سب سے پہلے رجال پر باقاعدہ کلام کیا ،وہ امام شعبہ ابن الحجاج رحمہ اللہ ہیں ، جو امیر المؤمنین فی الحدیث کے لقب سے مشہور ہیں، وہ امام ابو حنیفہ کے بارے میں فرماتے ہیں ’’کان واﷲ ثقة ثقة‘‘ (یعنی میں اللہ کی قسم کھاتا ہوں کہ وہ ثقہ تھے)

جرح و تعدیل کے دوسرے بڑے امام یحییٰ بن سعید القطّان ہیں ، یہ خود امام ابو حنیفہ کے شاگرد ہیں ، اور حافظ ذہبی نے ’’تذکرۃالحفاظ‘‘ میں اور حافظ ابن عبد البر رحمہ اللہ نے ’’الانتقاء‘‘ میں نقل کیا ہے کہ وہ امام ابو حنیفہ کے اقوال پر فتویٰ دیا کرتے تھے، اور جیسا کہ تاریخ بغداد، ج۱۳، ص۳۵۲ میں اُن کا مقولہ ہے،  ’’جالسنا واﷲابا حنیفة و سمعنا منہ فکنت کلما نظرت الیہ عرفت وجھہ انہ یتقی اﷲ عزوجل‘‘ (یعنی اللہ کی قسم ہم نے امام اعظم کی مجلس اختیار کی، اور اُن سے سماع کیا، اور میں نے جب بھی ان کی جانب نظر کی ،تو اُن کے چہرہ کو اس طرح پایا کہ بلاشبہ وہ اللہ سے ڈرنے والے ہیں۔)

امام یحییٰ بن سعید القطّان کا دوسرا مقولہ علامہ سندھی کی ’’کتاب التعلیم‘‘ کے مقدمہ میں منقول ہے ’’انہ لأعلم ھذہ الامۃ بماجاء عن اﷲ و رسولہ صلی اﷲعلیہ و سلم‘‘ (یعنی بلاشبہ اللہ اور رسول صلی اللہ علیہ و سلم کی جانب سے آنے والے احکام کو اس امت میں سب سے بہتر جاننے والے امام اعظم تھے۔)

جرح و تعدیل کے تیسرے بڑے امام یحییٰ بن سعید القطّان کے شاگرد یحییٰ بن معین ہیں، وہ امام ابو حنیفہ کے بارے میں فرماتے ہیں ، ’’کان ثقة حافظاً ،لا یحدث الا بما یحفظ ما سمعت احداً یجرحہ‘‘

(یعنی وہ معتمد علیہ اور حافظ تھے، اور وہی حدیث بیان کرتے تھے، جو انہیں حفظ ہوتی تھی، میں نے کسی کو نہیں سنا، جو اُن کی جرح کررہا ہو۔)

جرح و تعدیل کے چوتھے بڑے امام حضرت علی بن المدینی رحمہ اللہ ہیں ، جو کہ امام بخاری کے استاذ اور نقدِ رجال کے بارے میں بہت متشدد ہیں ، جیسا کہ حافظ ابن حجر نے فتح الباری کے مقدّمہ میں اس کی صراحت کی ہے، وہ فرماتے ہیں کہ

’’ابو حنیفة روی عنہ الثوری و ابن المبارک و ھشام و وکیع و عباد بن العوام و جعفر بن عون و ھوثقة لا بأس بہ‘‘

(یعنی! امام ابو حنیفہ سے امام ثوری، ابن مبارک، ہشام، وکیع ، عبادبن عوام اور جعفر بن عون رحمھم اللہ نے روایت کی ہے، وہ ثقہ ہیں، ان سے روایت لینے میں کوئی حرج نہیں۔)

نیز حضرت عبد اللہ بن المبارک رحمہ اللہ فرماتے ہیں، ’’ لولا اعاننی اﷲ بابی حنیفة و سفیان لکنت کسائر الناس‘‘

(اگر اللہ عزوجل امام ابو حنیفہ اورامام سفیان ثوری رحمہما اللہ کے ذریعہ میری اعانت نہ فرماتے تو میں بھی عام لوگوں کی طرح ہوتا۔)

اور مکی بن ابراہیم کا مقولہ یہ ہے کہ ’’کان اعلم اھل زمانہ‘‘ (یعنی امام اعظم اپنے زمانے کے سب سے بڑے عالم تھے۔)

ان کے علاوہ یزہد بن ھارون ، سفیان ثوری ، سفیان بن عیینہ، اسرائیل بن یونس ، یحییٰ بن آدم، وکیع بن الجراح ، امام شافعی اور فضل بن دکین رحمہم اللہ جیسے ائمہ حدیث سے بھی امام ابو حنیفہ کی توثیق منقول ہے، علم حدیث کے ان بڑے بڑے اساطین کے اقوال کے مقابلہ میں دو تین افراد کی جرح کس طرح قابلِ قبول ہوسکتی ہے، لہٰذا اگر فیصلہ کثرتِ تعداد کی بنیاد ہو تب بھی امام صاحب کی تعدیل بھاری رہے گی۔

جرح و تعدیل کے تعارض کو رفع کرنے کا دوسرا طریقہ جو کہ جرح و تعدیل کے تیسرے اصول کی حیثیت رکھتا ہے، وہ حافظ ابن الصلاح رحمہ اللہ نے مقدمہ میں بیان کیا ہے اور اسے جمہور محدثین کا مذہب قرار دیا ہے، ’’وہ یہ کہ اگر جرح مفسَّر نہ ہو، یعنی اس میں سبب جرح بیان نہ کیا گیا ہو تو تعدیل اس میں ہمیشہ راجح ہوگی ، خواہ تعدیل مفسَّر ہو یا مبہم۔‘‘

اس اصول پر دیکھا جائے تو امام ابو حنیفہ کے خلاف جتنی جرحیں کی گئی ہیں ، وہ سب مبہم ہیں ، اور ایک بھی مفسَّر نہیں ، لہٰذا ان کا اعتبار نہیں اور تعدیلات تمام مفسَّر ہیں ، کیونکہ اس میں ورع اور تقوی اور حافظہ تمام چیزوں کا اثبات کیا گیا ہے ، خاص طور سے اگر تعدیل میں اسباب جرح کی تردید کر دی گئی ہو تو وہ سب سے زیادہ مقدم ہوتی ہے اور امام صاحب کے بارے میں ایسی تعدیلات بھی موجود ہیں ، خلاصہ یہ ہے کہ ’’الجرح مقدم علی التعدیل‘‘ کا قاعدہ اُس وقت معتبر ہوتا ہے جبکہ جرح مفسَّر ہو، اور اس کا سبب بھی معقول ہو اور بعض علماء کے نزدیک یہ شرط بھی ہے کہ معدلین کی تعداد جارحین سے زیادہ نہ ہو۔

(۴) امام اعظم پر ایک اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ امام دار قطنی رحمہ اللہ نے اپنی سنن میں حدیث نبوی ﷺ ’’من کان لہ امام فقراء ۃالامام لہ قراء ۃ‘‘ کے تحت لکھا ہے کہ’’ لم یسندہ عن موسیٰ بن ابی عاءشة غیر ابی حنیفة و الحسین بن عمارۃ وھما ضعیفان‘‘

(یعنی اس حدیث کو موسی بن ابی عائشہ سے امام ابو حنیفہ اور حسین بن عمارہ کے علاوہ کسی نے روایت نہیں کیا، اور یہ دونوں حضرات ضعیف ہیں)

بلاشبہ امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے بارے میں امام دار قطنی رحمہ اللہ کی جرح ثابت ہے ، لیکن اس کا جواب وہی ہے ، جو امام نسائی کی جرح کا ہے، غور کرنے کی بات ہے کہ امام ابو حنیفہ کے بارے میں امام شعبہ، یحییٰ بن سعید القطان، یحییٰ بن معین، علی بن المدینی، عبد اللہ بن مبارک، سفیان ثوری، وکیع بن الجراح، مکی بن ابراہیم، اسرائیل بن یونس اور یحییٰ بن آدم جیسے ائمہ حدیث کا قول معتبر ہوگا ، جو امام ابو حنیفہ کے معاصر ہیں یا اُنکے قریب العہد ہیں یا امام دار قطنی کا، جو امام صاحب کے دو سال بعد پیدا ہوئے ، بلکہ یحییٰ بن معین کے قول سے تو یہ معلوم ہوتا ہے کہ اُن کے زمانہ تک کسی شخص نے بھی امام صاحب پر جرح نہیں کی ، کیونکہ وہ کہتے ہیں کہ’’ ما سمعت احداً یجرحہ‘‘

اب سوال یہ رہ جاتا ہے کہ امام نسائی اور امام دار قطنی جیسے ائمہ حدیث نے امام صاحب کے بارے میں ایسی بے بنیاد بات کیسے کہہ دی؟؟

اس کا جواب یہ ہے کہ ہمیں ان بزرگوں کے اخلاص پر کوئی بد گمانی نہیں ، لیکن واقعہ یہ ہے کہ امام اعظم ابو حنیفہ کو اللہ تعالیٰ نے جو مقام بخشا تھا ، اُس کی بناء پر اُن کے حاسدین بے شمار تھے اور انہوں نے امام صاحب کے بارے میں طرح طرح کی باتیں مشہور کر رکھی تھی، مثلاً یہ پروپیگنڈہ تو عام تھا کہ امام صاحب قیاس کو احادیث پر ترجیح دیتے ہیں ، یہ پروپیگنڈہ اس شدت کیساتھ کیا گیا کہ بعض ایسے اہل علم بھی اس سے متاثر ہوگئے ،جو امام ابو حنیفہ کے حالات سے ذاتی طور پر واقف نہیں تھے ، اِن اہل علم میں سے جن حضرات کو حقیقتِ حال کا علم ہوگیا انہوں نے بعد میں امام صاحب کی مخالفت سے رجوع کرلیا، جیسے حافظ ابنِ عدی ،( جیسا کہ ان کے بارے میں بیان ہوچکا)

دوسری مثال امام اوزاعی کی ہے،
علامہ کردری نے صیمری سے اپنی سند سے عبد اللہ بن البارک کا یہ قول ’’مناقب الامام الاعظم‘‘ جلد اول میں صفحہ ۳۹ پر نقل کیا ہے کہ ’’میں شام آیا اور امام اوزاعی سے ملا ، انہوں نے جب یہ سنا کہ میں کوفہ سے آیا ہوں تو مجھ سے پوچھا،  ’’من ھٰذا المبتدع الخارج بالکوفة یکنی بابی حنیفة ‘‘ ٰ(یعنی کوفہ میں یہ بدعتی و خارجی کون ہے؟ وہ امام ابو حنیفہ سے کنایہ کر رہے تھے۔)
عبد اللہ ابن المبارک فرماتے ہیں کہ میں نے اس وقت اُن کوئی مفصل جواب دینا مناسب نہیں سمجھا اور اپنے ٹھکانے پر واپس آگیا، البتہ بعد میں نے یہ کیا کہ امام ابو حنیفہ کے مستنبط کئے ہوئے فقہی مسائل، جو میرے پاس محفوظ تھے، تین دن میں اُن کا مجموعہ تیار کیا اور اُن کے شروع میں’’قال ابو حنیفہ‘‘ (ابو حنیفہ نے فرمایا) کے بجائے ’’قال النعمان بن ثابت‘‘ لکھ دیا، اور اسے تیسرے دن امام اوزاعی کے پاس لے گیا، انہوں نے اس کا مطالعہ کیا اور مجھ سے دریافت کیا ’’من النعمان؟ (کون ہے یہ نعمان؟) ’’قلت ابو حنیفة الذی ذکرتہ‘‘ (میں نے کہا یہ امام ابو حنیفہ ہیں ، جنکا آپ نے ذکر کیا تھا)  اس کے بعد میں نے دیکھا کہ امام اوزاعی کی ملاقات ابو حنیفہ سے ہوئی، دونوں میں انہی مسائل میں گفتگو ہوتی رہی، جو مسائل میں نے لکھ کر امام اوزاعی کو پیش کئے تھے، امام اعظم اُن مسائل کو مجھ سے زیادہ کھول کھول کر وضاحت کے ساتھ بیان کرتے رہے،  جب امام ابو حنیفہ چلے گئے تو میں نے امام اوزاعی سے دریافت کیا ’’کیف رأیتہ؟ (آپ نے ان کو کیسا پایا؟) تو انہوں نے جواب دیا
’’غبطت الرجل لکثرۃ علمہ و فور عقلہ استغفر اﷲ لقد کنت فی غلط ظاھر الزمہ فانہ بخلاف ما بلغنی عنہ‘‘ (مجھے اس شخص پر، اس کی کثرتِ علم اور بے انتہاء دانائی کی وجہ رشک آتا ہے، میں اللہ سے معافی چاہتا ہوں، میں ان الزامات کے بارے میں واضح طور پر غلط تھا، بلاشبہ وہ تو ،ان الزامات کے بالکل برعکس ہیں ،جو مجھ تک پہنچے۔)

البتہ جن اہل علم کو امام صاحب کے بارے میں حقیقت معلوم نہ ہو سکی وہ اپنے موقف پر قائم رہے، اپنے اخلاص کی وجہ سے وہ انشاء اللہ معذور ہیں، لیکن اُن کے اقوال کو ایسے لوگوں کے مقابلہ میں حجت نہیں بنایا جا سکتا، جو امام اعظم رحمہ اللہ سے حقیقتاً واقف تھے،
خلاصہ یہ کہ علمِ حدیث میں امام ابو حنیفہ کا مقام نہایت بلند پایہ ہے اور جن حضرات کو اس سے تکدّر ہوا، وہ غلط اطلاعات کی بناء پر ہوا، یہی وجہ ہے کہ جن حضرات نے انصاف کے ساتھ امام صاحب کے حالات کا مطالعہ کیا ہے، وہ اسی نتیجہ پر پہنچے ہیں کہ علمِ حدیث میں بھی امام ابو حنیفہ بلند مقام کے حامل ہیں اور اُن پر اعتراضات درست نہیں۔

چنانچہ نواب صدیق حسن خان صاحب نے اپنی کتاب ’’التاج المکلل‘‘ میں امام ابو حنیفہ کا تذکرہ کرتے ہوئے ان کی فقہ اور ورع کی تعریف کرتے ہیں اور آخر میں لکھتے ہیں ’’ولم یکن یعاب بشیءٍ سویٰ قلّة العربیة‘‘ (یعنی ان میں کوئی عیب نہیں تھا، سوائے قلّتِ عربیت کے)

یہاں نواب صدیق حسن خان صاحب نے علمِ حدیث کے اعتبار سے امام ابو حنیفہ پر کوئی اعتراض نہیں کیا ، البتہ قلّتِ عربیہ کا الزام لگایا ہے اور یہ الزام بھی کسی طرح بھی درست نہیں، دراصل یہ جملہ نواب صاحب نے قاضی ابنِ خلکان کی ’’وفیات الاعیان‘‘ سے نقل کیا ہے، لیکن آگے خود قاضی ابنِ خلکان نے اِس الزام کی جو تردید نقل کی ہے، اسے نواب صاحب نے نقل نہیں کیا (اب اِس ادھوری بات کے نقل کرنے کو کیا کہا جائے؟؟؟)
قاضی ابنِ خللکان نے لکھا ہے کہ امام صاحب پر قلّتِ عربیہ کا جو الزام عائد کیا گیا ، اِ س کی بنیاد صرف ایک واقعہ پر ہے، اور وہ یہ کہ ایک مرتبہ امام ابو حنیفہ مسجد حرام میں تشریف فرماتھے، وہاں ایک مشہور نحوی نے اُن سے پوچھا کہ اگر کوئی شخص کسی کو پتھر مار کر ہلاک کردے، تو اس پر قصاص آئے گا یا نہیں؟

امام صاحب نے فرمایا کہ نہیں، اس پر نحوی نے متعجب ہوکر پوچھا ’’ولو رماہ بصخرۃ ؟‘‘ (اگرچہ اس نے چٹان سے مارا ہو؟) اس پر امام صاحب نے فرمایا کہ’’نعم ولو رماہ بابا قبیس‘‘

اس سے اس نحوی نے یہ مشہور کردیا کہ امام صاحب کو عربیت میں مہارت نہیں ،کیونکہ ’’بابی قبیس‘‘ کہنا چاہیئے تھا، لیکن قاضی ابنِ خلکان لکھتے ہیں کہ امام صاحب پر یہ اعتراض درست نہیں کیونکہ بعض قبائلِ عرب کی لغت میں اسماء ستّہ مکبّرہ کا اعراب حالتِ جرّی میں بھی الف سے ہوتا ہے، چنانچہ ایک شاعر کا مشہور شعر ہے ع
ان اباھا و ابا اباھا۔۔۔ قد بلغا فی المجد غایتاھا
(بلا شبہ اُس کا باپ اور اُس کے باپ کا باپ، دونوں بزرگی کی انتہاء کو پہنچ گئے)
یہاں قاعدہ کی رُو سے ’’ابا ابیھا‘‘ ہونا چاہیئے تھا، لیکن شاعر نے حالتِ جری میں بھی اعراب الف سے ظاہر کیا ، لہٰذا امام ابو حنیفہ کا مذکورہ بالاقول انہی قبائلِ عرب کی لغت کے مطابق تھا، صرف اس واقعہ کو بنیاد کر امام اعظم ابو حنیفہ جیسی شخصیت پر قلّتِ عربیت کا الزام نا انصافی اور شاید حسد کے سوا کچھ نہیں، یہاں اِس بحث کا مختصر خلاصہ ذکر کیا گیا ہے ، تفصیل کے لئے ملاحظہ ہو ، علامہ ظفر احمد عثمانی نور اللہ مرقدہ کی کتاب ’’انجاء الوطن من الازدراء بامام الزمن‘‘ میں دیکھی جاسکتی ہے۔

(۵) امام اعظم پر ایک اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ امام بخاری نے ’’تاریخ صغیر‘‘ میں نعیم ابن حماد کے حوالہ سے روایت کیا ہے کہ جب امام ابو حنیفہ کی وفات کی خبر سفیان ثوری کی مجلس میں پہنچی، تو انہوں نے فرمایا ’’الحمد اﷲ کان ینقض الاسلام عروۃعروۃ ما ولد فی الاسلام اشئم منہ‘‘

(الحمد للہ! وہ اسلام کو واضح طور پر ڈھانے والا تھا، اس سے نامبارک شخص اسلام میں نہیں آیا)

اس کا جواب یہ ہے کہ یہ روایت بلاشبہ غلط ہے، اس کے بارے میں امام بخاری کو تو متّہم نہیں کیا جاسکتا، انہوں نے جیسا سنا ویسا لکھ دیا، یہ نعیم بن حماد امام ابو حنیفہ کے بارے میں نہایت متعصب ہے، اس لئے اس روایت کی تکذیب کے لئے صرف اتنا کہنا ہی کافی ہے کہ یہ نعیم بن حماد سے مروی ہے، کیونکہ حافظ ابنِ حجر نے ’’تہذیب التہذیب‘‘ میں کئی ائمہ حدیث سے نقل کیا ہے کہ اگرچہ بعض لوگوں نے نعیم کی توثیق کی ہے، لیکن وہ امام ابو حنیفہ کے معاملہ میں جھوٹی روایات نقل کرتے ہیں، حافظ فرماتے ہیں ’’یروی حکایات فی ثلب ابی حنیفة کلہا کذب‘‘ (یعنی وہ امام ابو حنیفہ کو عیب دار کرنے کے لئے ایسی حکایات روایت کرتا ہے، جو ساری کی ساری جھوٹی ہیں)

اس جملہ کے کے بعد اس حکایت کی جواب دہی کی ضرورت نہیں رہتی اور سوچنے کی بات ہے کہ سفیان ثوری ایسی بات کیسے کہہ سکتے ہیں، جبکہ وہ خود امام صاحب کے شاگرد ہیں، اور تقریباً نوّے فیصد مسائلِ فقہیّہ میں امام ابو حنیفہ کی موافقت کرتے ہیں، اور خود انہی کا واقعہ ہے، جو غالباً حافظ ابنِ حجر ہی نے نقل کیا ہے کہ جب امام ابو حنیفہ اُن کے بھائی کی تعزیت کے لئے اُن کے پاس آئے تو سفیان ثوری نے اپنے حلقۂ درس سے کھڑے ہوکر اُن کا استقبال کیا، بعض حاضرین نے اس تعظیم پر اعتراض کیا، تو امام سفیان ثوری نے جواب دیا، ’’ھٰذا رجل من العلم بمکان فان لم اقم لعلمہ قمت لسنّہ و ان لم اقم لسنّہ قمت لفقھہ و ان لم اقم لفقھہ قمت لورعہ‘‘ (یعنی یہ شخص علم کی بناء پر ایسے مقام پر ہے، اگر میں اس کے علم کی وجہ سے کھڑا نہ ہوں، تو اس کی عمر وجہ سے کھڑا ہوں گا، اور اگر میں اس کی عمر وجہ سے کھڑا نہ ہوں تو اس فقاہت کی وجہ سے کھڑا ہوں گا اور اگر اس کی فقاہت کی وجہ سے بھی نہ کھڑا ہوں، تو پھر اس کے تقویٰ کی وجہ سے کھڑا ہوں۔)

اس سے صاف ظا ہر ہے کہ سفیان ثوری امام ابو حنیفہ کی کتنی عزت کرتے تھے۔

یہاں یہ سوال پیدا ہوسکتا ہے کہ امام بخاری جیسے جلیل القدر محدث نے ایسا جھوٹا قصہ کیونکر روایت کردیا؟؟؟

اس کا جواب یہ ہے کہ امام ابو حنیفہ کے خلاف تعصب رکھنے والوں نے امام بخاری کو امام ابو حنیفہ کے خلاف بہت مکدر کیا ہوا تھا، اس لئے انہیں نعیم بن حماد کی روایات میں کوئی خرابی محسوس ہی نہ ہوسکی، حاسدین کی سازشوں کے علاوہ امام بخاری کے تکدر کا ایک سبب یہ بھی ہے کہ امام بخاری رحمہ اللہ کے استاذ حُمیدی ظاہری المسلک تھے، اور ظاہریہ کو حنفیہ کے خلاف ہمیشہ سے غیظ رہا ہے، لہٰذا امام بخاری بھی اپنے استاذ کے اثرات سے خالی نہ رہ سکے۔

شیخ عبد الوہاب شعرانی نے ’’المیزان الکبریٰ‘‘ میں نقل کیا ہے کہ شروع میں سفیان ثوری بھی بعض لوگوں کے اس خیال سے متاثر ہوگئے تھے کہ امام صاحب قیاس کو نصوص پر مقدم رکھتے ہیں، چنانچہ ایک دن سفیان ثوری مقاتل بن حیان، حماد بن سلمہ اور جعفر صادق رحمہ اللہ اُن کے پاس گئے، اور بہت سے مسائل پر صبح سے ظہر تک گفتگو رہی، جس میں امام صاحب نے اپنے مذہب کے دلائل پیش کئے، تو آخر میں سب حضرات نے امام صاحب کے ہاتھ چومے اور اُن سے کہا کہ ’’انت سیّد العلماء فاعف عنا فیما مضیٰ منا من وقیعتنا فیک بغیر علم ‘‘
(آپ تو علماء کے سردار ہیں، ہم سے آپ کے متعلق لاعلمی میں جو کچھ ہوا، اسے درگزر فرمادیں)

امام اعظم امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ تعالٰی پر کئے جانے والے اعتراضات کا تحقیقی جائزہ

(۶) امام اعظم پر ایک اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ ولید بن مسلم کہتے ہیں کہ ’’قال مالک بن انس ایذکر ابو حنیفة فی بلادکم قلت نعم فقال ما ینبغی لبلادکم ان تسکن‘‘ (ترجمہ) امام مالک بن انس رحمہ اللہ نے فرمایا، کیا تمہارے شہروں میں ابو حنیفہ کا تذکرہ ہوتا ہے، میں نے کہا، ہاں! تو انہوں نے جواب میں فرمایا کہ ان شہروں میں تمہارا رہنا مناسب نہیں۔

اس کے جواب میں شیخ عبد الوہاب شعرانی ’’المیزان الکبریٰ‘‘ میں لکھتے ہیں کہ حافظ مزنی نے فرمایا ہے کہ اس روایت کے راوی ولید بن مسلم ضعیف ہیں، اور اگر بالفرض امام مالک رحمہ اللہ کا یہ قول ثابت بھی ہو تو اس کا مطلب یہ ہوگا کہ جس شہر میں امام ابو حنیفہ جیسا عالم موجود ہو تو وہاں کسی اور عالم کی ضرورت نہیں۔

(۷) امام ابو حنیفہ پرسب سے بڑا اعتراض یہ کیا جاتا ہے کہ وہ قیاس کو نصوص پر مقدم کرتے ہیں۔

اس کا جواب یہ ہے کہ یہ بات واقعہ کے بالکل خلاف ہے، اس کے برعکس امام صاحب تو بعض اوقات متکلم فیہ حدیث کی وجہ سے بھی قیاس کو چھوڑ دیتے ہیں، جیسا کہ ’’نقض الوضوء بالقھقھة‘‘ کے مسئلہ میں انہوں نے قیاس کو ترک کر دیا، حالانکہ اس باب میں احادیث متکلم فیہ ہیں اور دوسرے ائمہ نے اُن کو چھوڑ کر قیاس پر عمل کیا ہے۔

اس مسئلہ میں شیخ عبد الوہاب شعرانی نے ،جو خود شافعی المسلک ہیں، اپنی کتاب ’’المیزانالکبریٰ‘‘ میں ایک مستقل فصل قائم کی ہے،  ’’فصل فی بیان ضعف قول من نسب الامام ابا حنیفة الیٰ انہ یقدّم القیاس علیٰ حدیث رسول اﷲصلی اللہ علیہ وسلم‘‘
(یعنی یہ فصل اُس شخص کے قول کے ضعیف ہونے کے بیان میں ہے ،جو امام ابو حنیفہ کی طرف اس بات کی نسبت کرتا ہے کہ وہ قیاس کو حدیث پر مقدم رکھتے ہیں)

’’اعلم! ان ھٰذا الکلام صدر من متعصب علی الامام متھور فی دینہ غیر متورع فی مقالہ غافلاً عن قولی تعالٰی ’’ان السمع و البصر و الفؤاد کل اولٰٓئک کان عنہ مسؤلاً‘‘ و عن قولہ تعالیٰ ’’مایلفظ من قول الا لدیہ رقیب عتید‘‘ وقد روی الامام جعفر الشیزاماری (نسبۃ الٰی قریۃمن قری بلخ) بالسند المتصل الی الامام ابی حنیفة رضی اﷲ عنہ‘‘ کذب واﷲ وافتری علینا من یقول عنا اننا نقدم القیاس علی النص وھل یحتاج بعد النص الٰی قیاس وکان رضی اﷲ عنہ یقول نحن لانقیس الا عند الضرورۃالشدیدۃ وذٰلک اننا ننظر اولا فی دلیل تلک المسءلة من الکتاب والسنة وقضیة الصحابۃ فان لم نجد دلیلا قسنا حینئذ،  وفی روایة اخری کا یقول ماجاء عن رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم فعلی الرأس والعین بابی ھووامی ولیس لنا مخالفة ولاجائنا عن اصحابہ تخیرنا وماجاء نا عن غیرھم فھم رجال ونحن رجال‘‘

(ترجمہ)خوب جان لو، کہ بلاشبہ یہ کلام امام ابو حنیفہ کے خلاف ایسے متعصب سے صادر ہوا، جو اپنے دین سے لاپرواہی کرنے والا اور اپنے کلام میں غیر محتاط ہے اور اللہ رب العزت کے اس فرمان سے غفلت برتنے والا ہے ’’بلاشبہ کان، آنکھ اور دل، ان سب کے متعلق اس سے پوچھا جائے گا۔‘‘ اوروہ اللہ تعالیٰ کے اس فرمان سے بھی غافل ہے، ’’وہ کوئی بات نہیں بولتا مگر اس کے پاس ایک نگہبان تیار ہوتا ہے۔‘‘ تحقیق امام ابو جعفر شیزاماری (شیزاماری بلخ کی بستیوں میں سے ایک بستی کی طرف نسبت ہے) نے سندِ متصل سے امام اعظم رضی اللہ عنہ روایت کیا کہ ’’خدا کی قسم !یہ ہم پر جھوٹ اور افتراء ہے ، جو ہمارے بارے میںیہ کہتا ہے کہ ہم قیاس کو نص پر مقدم کرتے ہیں، اور کیا نص کے آنے کے بعد قیاس کی احتیاج ہوسکتی ہے؟؟؟ (یعنی ہرگز نہیں ہوسکتی)

امام اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ تو یہ کہتے تھے کہ ہم صرف ضرورتِ شدیدہ کے وقت ہی قیاس کرتے ہیں اور وہ بھی اس طرح کہ ہم اوّلاً ، اس مسئلہ کی دلیل کتاب اللہ، سنتِ رسول اللہ ﷺ اور صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم کے قضایا میں دیکھتے ہیں، اور اگر ہم اِن تمام میں کوئی دلیل نہیں پاتے ، تو پھر اُس وقت ہم قیاس کرتے ہیں۔

اور دوسری روایت میں ہے کہ امام اعظم فرماتے ہیں کہ جو چیز رسول اللہ ﷺ سے ثابت ہے ، وہ تو ہمارے سر آنکھوں پر، ان پر میرے ماں باپ قربان ہوں،اس سے تو کوئی مخالفت نہیں اور جو چیز صحابۂ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم سے ثابت ہے، اُسے تو ہم اختیار کرتے ہیں ، اور جو چیز ان کے علاوہ اور لوگوں سے ثابت ہے، تو وہ تو لوگ ہیں اور پھر ہم بھی تو لوگ ہیں۔

اس کے علاوہ شیخ شعرانی رحمہ اللہ تحریر فرماتے ہیں، ’’اعلم یا اخی! انی لم اجب علٰی الامام بالصدر واحسان الظن فقط کما یفعل بعض وانما اجبت عنہ بعد التتبع والفحص فی کتب الادلة و مذھبہ اول المذاھب تدویناً و اٰخرھا انقراضاً کما قال بعض اھل الکشف‘‘

(ترجمہ) خوب اچھی طرح جان لو میرے بھائی! میں امام ابو حنیفہ کے خلاف ہونے اعتراض کا جواب فقط اپنے دل سے پوچھ کر یا صرف انکے ساتھ حنِ ظن ہی کی وجہ سے نہیں دے دیتا ، جیسا کہ بعض حضرات کرتے ہیں،بلکہ میں دلائل کی کُتب کی خوب چھان پھٹک اور تحقیق کے بعد جواب دیتا ہوں، امام اعظم کامذہب(مسلک) وہ پہلا مذہب ہے ، مدوّن ہونے کے اعتبار سے اور آخری مذہب ہے ، مٹ جانے کے اعتبار سے ، جیسا کہ بعض اہلِ کشف نے فرمایا۔

(۸) امام اعظم پر ایک اعتراض یہ بھی کیا جاتا ہے کہ اُن کے مستدلات علمِ حدیث کی رُو سے ضعیف ہوتے ہیں۔

اس کا تفصیلی جواب جو تو ہر ہر ایسے مسئلہ کے ذیل میں ہی دینا مناسب ہے، جس مسئلہ کے مستدل کو لوگوں نے ضعیف کہا ہے، البتہ ان کا مجموعی جواب شیخ عبد الوہاب شعرانی رحمہ اللہ نے دیا ہے، وہ لکھتے ہیں کہ ’’میں نے امام ابو حنیفہ کے ادلّہ پر خوب غور کیا ، اور اس نتیجہ پر پہنچا کہ امام صاحب کے دلائل یا تو قرآن کریم سے ماخوذ ہیں یا احادیثِ صحیحہ سے یا احادیث سے حسنہ سے، یا ایسی ضعیف احادیث سے جو تعددِ طُرق کی وجہ سے حَسَن کے درجہ میں آگئی ہیں، اس سے نیچے کوئی دلیل نہیں۔

المصادر و المراجع و التفاصیل

(۱) انجاء الوطن عن الازدراء بامام الزمن للشیخ ظفر احمد عثمانی نور اﷲ مرقدہ
(۲)الرفع و التکمیل فی الجرح والتعدیل للامام عبد الحیی اللکھنوی مع تعلیقہ للشیخ عبدالفتاح ابی غدۃ الحلبی رحمہ اﷲ
(۳)مقدمۃ التعلیق الممجد علی المؤطا للامام محمد للشیخ اللکھنوی
(۴)الانتقاء فی فضائل الثلاثۃ الائمۃ الفقہاء للحافظ ابن عبد البر الاندلسی
(۵)تبییض الصحیفۃ فی مناقب الامام ابی حنیفۃ لجلال الدین السیوطی