Category Archives: Urdu Articles

ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍﺀ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ

ﺑﮭﺎﺭﺕ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﭘﯿﻠﯽ ﺑﮭﯿﺖ ﮐﮯ ﺭﮨﺎﺋﺸﯽ ﺷﯿﺦ ﺭﺣﯿﻢ ﺑﺨﺶ ﮐﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﻦ 1883 ﺀ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮨﻮﺋﯽ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﺭﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﯾﮩﯽ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﺁﮔﮯ ﭼﻞ ﮐﺮ ﺣﮑﯿﻢ ﻣﺤﻤﺪ ﺳﻌﯿﺪ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺑﻨﮯ۔ ﺁﭨﮫ ﺑﺮﺱ ﭘﯿﻠﯽ ﺑﮭﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎﺋﺶ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺷﯿﺦ ﺭﺣﯿﻢ ﺑﺨﺶ ﺩﮨﻠﯽ ﮐﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﺣﻮﺽ ﻗﺎﺿﯽ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﺗﻌﻠﻴﻢ ﺳﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﭘﺮ ﺣﮑﯿﻢ ﺣﺎﻓﻆ ﺣﺎﺟﯽ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﺑﺎﻧﯽ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮧ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﮐﺎ ﻧﮑﺎﺡ ﺭﺍﺑﻌﮧ ﺑﯿﮕﻢ ﺳﮯ ﮨﻮﺍ۔ ﺁﭖ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻧﯿﮏ، ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﻣﺖ ﮔﺰﺍﺭ، ﻧﻤﺎﺯ ﻭ ﺭﻭﺯﮦ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﺩﮦ ﮐﯽ ﭘﺎﺑﻨﺪ، ﻣﺤﻨﺘﯽ، ﻭﻓﺎﺷﻌﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﻓﮩﻢ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺗﮭﯿﮟ۔۔

ﺣﮑﯿﻢ ﻣﺤﻤﺪ ﺳﻌﯿﺪ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺣﮑﯿﻢ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﻣﺰﺍﺝ ﺷﺨﺺ ﺗﮭﮯ۔ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﺩﻭﯾﺎﺕ ﮐﮯ ﺧﻮﺍﺹ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﺹ ﺩﻟﭽﺴﭙﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺷﻮﻕ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﺎﺭﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺴﯿﺢ ﺍﻟﻤﻠﮏ ﺣﮑﯿﻢ ﺍﺟﻤﻞ ﺧﺎﮞ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻢ ﮐﺮﺩﮦ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﻼﺯﻣﺖ ﮐﺮﻟﯽ۔ ﺍﺱ ﻋﺮﺻﮯ ﻣﯿﮟ ﻃﺐ ﮐﺎ ﻣﻄﺎﻟﻌﮧ ﺑﮍﯼ ﮔﮩﺮﺍﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻃﺐ ﮐﯽ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﻄﺎﻟﻌﮧ ﺑﮍﯼ ﺑﺎﺭﯾﮏ ﺑﯿﻨﯽ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ۔ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﺳﮯﮔﮩﺮﺍ ﺷﻐﻒ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﮐﺎ ﻣﻠﮑﮧ ﺣﺎﺻﻞ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﺧﺮﮐﺎﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻧﺒﺎﺗﺎﺕ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﯿﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﺑﯿﻤﺎﺭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﻔﺎﺀ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﺑﮭﺮ ﺳﮯ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﺎﮞ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﯿﺎ۔ ﺑﻘﻮﻝ ﺣﮑﯿﻢ ﻣﺤﻤﺪ ﺳﻌﯿﺪ ” ﺁﭖ ﺍﯾﮏ ﺑﻠﻨﺪ ﭘﺎﯾﮧ ﻧﺒﺾ ﺷﻨﺎﺱ ﺍﻭﺭ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺎﮨﺮ ﺗﮭﮯ۔ ”
ﺣﮑﯿﻢ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﺑﮍﯼ ﻣﺤﻨﺖ ﺳﮯ ﺣﮑﯿﻢ ﺍﺟﻤﻞ ﺧﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﺎﻡ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺣﮑﯿﻢ ﺍﺟﻤﻞ ﺻﺎﺣﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺩﯾﺎﻧﺖ ﭘﺮ ﺷﮏ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﻏﯿﺮﺕ ﻭ ﻓﻄﺮﺕ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺷﺒﮧ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺳﺎﺯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﯿﺎ۔ 1904 ﺀ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮧ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﮈﺍﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺠﺎﺭﺕ ﺑﮭﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯽ۔ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﮐﺎﻥ ﮐﻮ ﭼﻼﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺣﮑﯿﻢ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﻧﮯ ﻧﺒﺎﺗﺎﺕ ﺳﮯ ﺩﻭﺍﺋﯿﮟ ﺑﻨﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺭﺍﺑﻌﮧ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮯ ﮨﺮ ﻣﺮﺣﻠﮯ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﺎ ﮨﺎﺗﮫ ﺑﭩﺎﯾﺎ۔ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﺩﻭﺍﺋﯽ ’’ ﺣﺐ ﻣﻘﻮﯼ ﻣﻌﺪﮦ ‘‘ ﺗﮭﯽ۔ ﺭﺍﺑﻌﮧ ﺑﯿﮕﻢ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﮩﻦ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺑﯿﮕﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﺎ ﮨﺎﺗﮫ ﺑﭩﺎﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﺳﻞ ﺑﭩﮯ ﺳﮯ ﻧﺒﺎﺗﺎﺕ ﭘﯿﺲ ﮐﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﮔﻮﻟﯿﺎﮞ ﺑﻨﺎﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔

ﺣﻮﺽ ﻗﺎﺿﯽ ﺳﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﮐﯽ ﻣﻨﺘﻘﻠﯽ ﻻﻝ ﮐﻨﻮﯾﮟ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻭﺳﻌﺖ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻻﻝ ﮐﻨﻮﯾﮟ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺟﮕﮧ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﺍ۔

ﺣﮑﯿﻢ ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ ﮐﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺣﮑﯿﻢ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺣﺴﻦ ﺧﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﻃﺒﯿﺐ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﻭﯾﮧ ﺳﺎﺯﯼ ﮐﮯ ﺷﻌﺒﮯ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﺻﻮﺑﮯ ﺍﺗﺮﭘﺮﺩﯾﺶ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﺳﮩﺎﺭﻧﭙﻮﺭ ﺳﮯ ﺗﮭﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﺗﻼﺵ ﻣﻌﺎﺵ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺩﮨﻠﯽ ﺁ ﺑﺴﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﮨﺠﺮﺕ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﺁﮔﺌﮯ۔ ﺳﻦ 2003 ﺀ ﺗﮏ ﻭﮦ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﻘﯿﻢ ﺗﮭﮯ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﻏﺎﻟﺒﺎ ‘ 120 ﺳﺎﻝ ﮨﻮﮔﯽ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮨﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﭩﺮﻭﯾﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﮯ ﺍﻭﺭﺍﻕ ﭘﻠﭩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺩﺍﺳﺘﺎﻥ ﺳﻨﺎﺋﯽ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﮦ ﭘﮩﻠﮯ ﺷﺨﺺ ﺗﮭﮯ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﺎ ﻧﺴﺨﮧ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺗﺮﺗﯿﺐ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔

ﯾﮧ ﺳﻦ 1907 ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ۔ﺍﺱ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﭘﮭﻠﻮﮞ، ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﺮﺑﺖ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺩﺳﺘﯿﺎﺏ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﺜﻼ ﺷﺮﺑﺖ ﮔﻼﺏ، ﺷﺮﺑﺖ ﺻﻨﺪﻝ، ﺷﺮﺑﺖ ﺍﻧﺎﺭ، ﺷﺮﺑﺖ ﺳﻨﮕﺘﺮﮦ، ﺷﺮﺑﺖ ﮐﯿﻮﮌﮦ، ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻭﻏﯿﺮﮦ، ﺟﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﺎﺛﯿﺮ ﺍﻭﺭ ﺫﺍﺋﻘﮯ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺗﮭﮯ۔ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﻭﺍ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﻧﯽ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﭘﮭﻠﻮﮞ، ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻼ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮯﻧﻈﯿﺮ ﻭ ﺑﮯﻣﺜﺎﻝ ﻧﺴﺨﮧ ﺗﺮﺗﯿﺐ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺟﻮ ﺫﺍﺋﻘﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﺎﺛﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﺁﭖ ﮨﻮ، ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﺎ ﻣﻌﺘﺪﻝ ﮨﻮ ﮐﮧ ﺑﭽﮯ ﺳﮯ ﺑﻮﮌﮬﺎ ﺗﮏ ﮨﺮ ﻣﺰﺍﺝ ﮐﺎ ﺷﺨﺺ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ۔ ﺟﺴﮑﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻧﺴﺨﮧ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺳﮑﻮ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﯾﮩﯿﮟ ﺳﮯ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﭘﺮ ﮐﺎﻡ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ۔ ﺣﮑﯿﻢ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺣﺴﻦ ﺧﺎﻥ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺣﮑﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺍﺹ، ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﮯ ﻧﺴﺨﮧ ﻭ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﻣﺰﯾﺪ ﺳﻤﻮ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﮔﺮ ﺻﺮﻑ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﭘﺮ ﮨﯽ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﮯ ﻟﻘﺐ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺑﮯﺟﺎ ﻧﮧ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﯿﺴﯽ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﺍﻭﺭ ﺣﯿﺮﺕ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺷﺨﺺ ﮔﻤﻨﺎﻣﯽ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﺴﺮ ﮐﺮﮔﯿﺎ ﻭﺭﻧﮧ ﺑﺠﺎ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺗﻤﻐﮧ ﺣﺴﻦ ﮐﺎﺭ ﮐﺮﺩﮔﯽ ﮐﺎ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﺗﮭﺎ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﻭﻗﻒ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮧ ﻭ ﻟﯿﺒﺎﺭﭨﺮﯾﺰ ﮐﯽ ﻭﯾﺐ ﺳﺎﺋﭧ ﭘﺮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺗﻌﺎﺭﻑ ﺑﺤﯿﺜﯿﺖ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﮯ ﺍﻭﻟﯿﻦ ﻧﺴﺨﮧ ﺳﺎﺯ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﺩﺭﺝ ﮨﮯ۔ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﭼﯿﺪﮦ ﭼﯿﺪﮦ ﺍﺟﺰﺍ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﺎﺛﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮯﻣﺜﻞ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﮍﯼ ﺑﻮﭨﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺣﮑﯿﻢ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺗﺨﻢ ﺧﺮﻓﮧ، ﻣﻨﻘﮧ، ﮐﺎﺳﻨﯽ، ﻧﯿﻠﻮﻓﺮ، ﮔﺎﺅﺯﺑﺎﻥ، ﮨﺮﺍ ﺩﮬﻨﯿﺎ ﻭﻏﯿﺮﮦ، ﭘﮭﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻨﮕﺘﺮﮦ، ﺍﻧﻨﺎﺱ، ﮔﺎﺟﺮ، ﺗﺮﺑﻮﺯ، ﻭﻏﯿﺮﮦ۔ ﺳﺒﺰﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﭘﺎﻟﮏ، ﭘﻮﺩﯾﻨﮧ، ﮨﺮﺍ ﮐﺪﻭ، ﻭﻏﯿﺮﮦ۔ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﻼﺏ، ﮐﯿﻮﮌﮦ، ﻟﯿﻤﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻧﺎﺭﻧﮕﯽ ﮐﮯ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﺭﺱ، ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﻨﮉﮎ ﻣﯿﮟ ﺑﮯﻣﺜﺎﻝ ﺧﺲ ﺍﻭﺭ ﺻﻨﺪﻝ ﮐﯽ ﻟﮑﮍﯼ ﻭﻏﯿﺮﮦ۔ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﺟﺰﺍ ﺍﻭﺭ ﻋﺮﻗﯿﺎﺕ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﺗﺮﺗﯿﺐ ﺳﮯ ﻣﻼ ﮐﺮ ﺟﻮ ﺷﺮﺑﺖ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮﺍ، ﻭﮦ ﺑﻼﺷﺒﮧ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﮩﻼﻧﮯ ﮐﺎ ﮨﯽ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺰﺍﺝ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﻠﮑﻞ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺗﮭﺎ ۔ ﻣﮕﺮ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺟﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﻃﺐ ﻣﺸﺮﻕ ﭘﺮ ﭼﮭﺎ ﮔﯿﺎ، ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎ ” 110 ﺳﺎﻝ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﻘﺒﻮﻟﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﯽ۔

ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﭙﻦ ﮐﺎ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﯾﺎﺩ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺟﻮﻥ ﺟﻮﻻﺋﯽ ﮐﯽ ﺗﭙﺘﯽ ﮔﺮﻣﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﭘﮩﺮ ﮐﮯ ﻗﯿﻠﻮﻟﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺷﺎﻡ ﭼﺎﺭ ﭘﺎﻧﭻ ﺑﺠﮯ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﮔﻼﺱ ﺑﺮﻑ ﺳﮯ ﯾﺦ ﺑﺴﺘﮧ ﺧﻮﺷﺒﻮﺩﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﺷﯿﺮﯾﮟ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ، ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻋﺠﯿﺐ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﻨﮉﮎ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺟﮕﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﮐﺴﯽ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺑﻨﺘﺎ ﺗﻮ ﭘﮍﻭﺱ ﺗﮏ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﮩﮏ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮧ ﺍﺟﺰﺍﺀ ﺩﺭﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﮑﻤﻞ ﮈﺍﻟﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻓﻄﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺗﻮ ﺗﺐ ﺳﮯ ﮔﻮﯾﺎ ﻻﺯﻡ ﻭ ﻣﻠﺰﻭﻡ ﮨﯿﮟ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺳﻮﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﯾﮏ ﮔﻼﺱ ﺩﻭﺩﮪ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﻦ ﺑﮍﮮ ﭼﻤﭻ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﺭﻧﮓ ﮔﻮﺭﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺩﻣﺎﻏﯽ ﺳﮑﻮﻥ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﻗﻠﻔﯽ ﺍﻭﺭ ﻓﻠﻮﺩﮦ ﭘﺮ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﮈﺍﭦ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﮐﮭﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻓﺮﻭﭦ ﮐﺮﯾﻢ ﭼﺎﭦ، ﻓﯿﺮﻧﯽ، ﮐﺴﭩﺮﮈ، ﮐﮭﯿﺮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺳﺮﺧﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﮏ ﻟﻄﻒ ﺩﻭﺑﺎﻻ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺗﭙﺘﯽ ﮔﺮﻣﯽ ﻣﯿﮟ ﻟﻮ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﺅ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﺎ ﺛﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺗﺮﺑﻮﺯ ﮐﮯ ﺷﺮﺑﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺍﻭﺭ ﺗﺨﻢ ﻣﻠﻨﮕﺎ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻧﻔﯿﺲ ﺷﺮﺑﺖ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺷﺪﯾﺪ ﮔﺮﻣﯽ ﮐﺎ ﺗﻮﮌ ﮨﮯ۔ ﮐﭽﮫ ﺟﺎﮨﻞ ﻟﻮﮒ ﻟﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﮔﺮﻣﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺧﺮﺑﻮﺯﮮ ﯾﺎ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﮔﺮﻣﮯ ﮐﻮ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺳﮯ ﭼﺎﮎ ﮐﺮ ﮐﺮ ﺑﯿﺞ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﮏ ﭘﯿﮏ ﺑﺎﻻﺋﯽ ﮈﺍﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﭼﻤﭽﮯ ﺳﮯ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﺰﮦ ﺁﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺳﭩﺮﺍ ﺑﯿﺮﯾﺰ ﮐﻮ ﮐﺮﯾﻢ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﻣﯿﮟ ﮈﺑﻮ ﮐﺮ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺻﻞ ﻟﻄﻒ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﮔﻮ ﯾﮧ ﻣﺸﺮﻭﺏ ﺗﺎﺛﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﭨﮭﻨﮉﺍ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﺧﻮﺍﮦ ﮔﺮﻣﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﺟﺎﮌﻭﮞ ﮐﮯ، ﺍﻓﻄﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺍﯾﮏ ﻻﺯﻣﯽ ﺟﺰ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﮭﻞ ﻓﺮﻭﺷﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﭘﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻻﺯﻣﯽ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ۔ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﻮﺍﻗﻊ ﭘﺮ ﺗﺤﻔﮯ ﺗﺤﺎﺋﻒ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻮ ﭘﮭﻠﻮﮞ ﮐﺎ ﭨﻮﮐﺮﺍ ﺟﺲ ﮐﻮ ﮈﺍﻟﯽ ﺑﮭﯽ ﺑﻮﻻ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺳﺖ ﺭﻧﮕﮯ ﭘﮭﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺑﻮﺗﻞ ﻻﺯﻣﯽ ﻣﻠﮯ ﮔﯽ۔ ﻣﮩﻨﺪﯼ ﻣﺎﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻘﺮﯾﺐ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯿﺠﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮈﺍﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺑﻮﺗﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﻮﮌﯼ ﻻﺯﻣﯽ ﺳﺠﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﯿﺲ ﭘﭽﯿﺲ ﺑﺮﺱ ﻗﺒﻞ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﮯ ﺍﺷﺘﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺩﻋﻮﯼٰ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺏ ﺗﮏ ﺍﺱ ﻣﺸﺮﻭﺏ ﮐﯽ ﺍﺗﻨﯽ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺍﻥ ﺑﻮﺗﻠﻮﮞ ﮐﻮ ﻗﻄﺎﺭ ﺳﮯ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﺮ ﺭﮐﮭﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﻮﺭﮮ ﮐﺮﮦ ﺍﺭﺽ ﮐﮯ ﮔﺮﺩ ﺍﯾﮏ ﺣﻠﻘﮧ ﻣﮑﻤﻞ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔

ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮧ ﺍﺏ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﻧﮧ ﻭﮦ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﻭﮦ ﻣﻌﯿﺎﺭ۔ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺣﮑﯿﻢ ﺳﻌﯿﺪ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﮏ ﺗﮏ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺑﮩﺮﺣﺎﻝ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﺍﯾﮏ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺑﺮﻗﺮﺍﺭ ﺭﮐﮭﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﺑﮭﯽ ﮔﻮﯾﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﻭﺡ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺗﻮﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺭﻭﺡ ﺍﻓﺰﺍ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﭽﮫ ﺍﺟﺰﺍ ﺍﺏ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﮩﻨﮕﮯ ﺩﺍﻣﻮﮞ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺴﮑﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﻮ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺩﻭﺍﺧﺎﻧﮧ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺍﺟﺰﺍ ﮐﻮ ﻏﺎﻟﺒﺎ ﺑﮭﺎﺭﺕ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻣﭙﻮﺭﭦ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔

ﻓﺘﻨﮧ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﺣﺪﯾﺚ

ﻓﺘﻨﮧ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺋﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮨﻢ ﺍﺱ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﮐﻮ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿں

ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﯽ ﺣﺠﯿﺖ ﮐﺎ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺆﻗﻒ ﮐﮯ ﺛﺒﻮﺕ ﻣﯿﮟ ﻗﺮﺁﻥ ﮨﯽ ﮐﯽ ﺑﻌﺾ ﺁﯾﺎﺕ ﺳﮯ ﻏﻠﻂ ﺍﺳﺘﺪﻻﻝ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﮨﮯ

ﻟﺤﺎﻅ ﮨﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﺣﻖ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﯽ ﺣﺠﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﮐﻮ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﻣﺤﮑﻢ ﺁﯾﺎﺕ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﮮ

ﺍﺱ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺁﯾﺘﯿﮟ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ،ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﺎ ﺍﺣﺎﻃﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﺫﯾﻞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮐﯽ ﭼﻨﺪ ﺁﯾﺎﺕ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ

ﯾٰۤﺎَﯾُّﮩَﺎ ﺍﻟَّﺬِﯾۡﻦَ ﺍٰﻣَﻨُﻮۡۤﺍ ﺍَﻃِﯿۡﻌُﻮﺍ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﻭَ ﺍَﻃِﯿۡﻌُﻮﺍ ﺍﻟﺮَّﺳُﻮۡﻝَ ﻭَ ﺍُﻭﻟِ. ﺍﻟۡﺎَﻣۡﺮِ ﻣِﻨۡﮑُﻢۡ ۚ ………
ﺍﻟﻨﺴﺎﺀ 56

 ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺮﻭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺮﻭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺟﻮ ﺗﻢ ﻣﯿﮟ ﺻﺎﺣﺐ ﺍﻣﺮ ﺣﺎﮐﻢ ‏)ہیں

 ﻣَﻦۡ ﯾُّﻄِﻊِ ﺍﻟﺮَّﺳُﻮۡﻝَ ﻓَﻘَﺪۡ ﺍَﻃَﺎﻉَ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ۚ ﻭَ ﻣَﻦۡ ﺗَﻮَﻟّٰﯽ ﻓَﻤَﺎۤ ﺍَﺭۡﺳَﻠۡﻨٰﮏَ ﻋَﻠَﯿۡﮩِﻢۡ ﺣَﻔِﯿۡﻈًﺎ
‏ ﺍﻟﻨﺴﺎﺀ 8
ﺟﺲ ﻧﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺭﻭ ﮔﺮﺩﺍﻧﯽ ﮐﯽ ﺗﻮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﻥ ﭘﺮ ﻧﮕﺮﺍﻥ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﯿﺠﺎ

 ﻗُﻞۡ ﺍِﻥۡ ﮐُﻨۡﺘُﻢۡ ﺗُﺤِﺒُّﻮۡﻥَ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﻓَﺎﺗَّﺒِﻌُﻮۡﻧِﯽۡ ﯾُﺤۡﺒِﺒۡﮑُﻢُ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﻭَ ﯾَﻐۡﻔِﺮۡ ﻟَﮑُﻢۡ ﺫُﻧُﻮۡﺑَﮑُﻢۡ ؕ ﻭَ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﻏَﻔُﻮۡﺭٌ ﺭَّﺣِﯿۡﻢٌ
‏ ﺁﻝ ﻋﻤﺮﺍﻥ 31

 ﮐﮩﻮ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﺗﺒﺎﻉ ﮐﺮﻭ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻢ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﮔﻨﺎﮦ ﺑﺨﺶ ﺩﮮ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﺨﺸﮯ ﻭﺍﻻ ﺭﺣﻢ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ

 ﻗُﻞۡ ﺍَﻃِﯿۡﻌُﻮﺍ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﻭَ ﺍﻟﺮَّﺳُﻮۡﻝَ ۚ ﻓَﺎِﻥۡ ﺗَﻮَﻟَّﻮۡﺍ ﻓَﺎِﻥَّ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﻟَﺎ ﯾُﺤِﺐُّ ﺍﻟۡﮑٰﻔِﺮِﯾۡﻦَ
‏ ﺁﻝ ﻋﻤﺮﺍﻥ 32

 ﮐﮩﻮ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺮﻭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﭘﺲ ﺍﮔﺮ ﻭﮦ ﺭﻭﮔﺮﺩﺍﻧﯽ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ

 ﻗُﻞۡ ﯾٰۤﺎَﯾُّﮩَﺎ ﺍﻟﻨَّﺎﺱُ ﺍِﻧِّﯽۡ ﺭَﺳُﻮۡﻝُ ﺍﻟﻠّٰﮧِ ﺍِﻟَﯿۡﮑُﻢۡ ﺟَﻤِﯿۡﻌَۨﺎ ﺍﻟَّﺬِﯼۡ ﻟَﮧٗ ﻣُﻠۡﮏُ ﺍﻟﺴَّﻤٰﻮٰﺕِ ﻭَ ﺍﻟۡﺎَﺭۡﺽِ ۚ ﻟَﺎۤ ﺍِﻟٰﮧَ ﺍِﻟَّﺎ ﮨُﻮَ ﯾُﺤۡﯽٖ ﻭَ ﯾُﻤِﯿۡﺖُ ۪ ﻓَﺎٰﻣِﻨُﻮۡﺍ ﺑِﺎﻟﻠّٰﮧِ ﻭَ ﺭَﺳُﻮۡﻟِﮧِ ﺍﻟﻨَّﺒِﯽِّ ﺍﻟۡﺎُﻣِّﯽِّ ﺍﻟَّﺬِﯼۡ ﯾُﻮٔۡﻣِﻦُ ﺑِﺎﻟﻠّٰﮧِ ﻭَ ﮐَﻠِﻤٰﺘِﮧٖ ﻭَ ﺍﺗَّﺒِﻌُﻮۡﮦُ ﻟَﻌَﻠَّﮑُﻢۡ ﺗَﮩۡﺘَﺪُﻭۡﻥَ
‏ ﺍﻻﻋﺮﺍﻑ 158 ‏

 ﮐﮩﻮ ﺍﮮ ﻟﻮﮔﻮ ! ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﺐ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﻮﮞ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﺳﻤﺎﻧﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﯽ ﺍﺳﯽ ﮐﯽ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻮﺕ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ، ﭘﺲ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻﺅ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﺒﯽ ﺍﻣﯽ ﭘﺮ ﺟﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﯿﺮﻭﯼ ﮐﺮﻭ ﻋﺠﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮ ﺟﺎﺅ

ﻟﻔﻆ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﯽ ﺑﺤﺚ

ﺍﻭﭘﺮ ﻧﻘﻞ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺁﯾﺎﺕ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺟﺐ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﺪﯾﺚ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﺣﺠﯿﺖ ﮐﻮ ﺩﻭ ﺍﻭﺭ ﺩﻭ ﭼﺎﺭ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ . ﺗﻮ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭﯼ ﻟﻔﻆ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﭘﺮ ﺑﺤﺚ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ﮐﮩﺘﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﯽ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﮯ،
” ﯾﮧ ﺗﻮ ﺷﺮﮎ ﮨﮯ ”
ﺍﺱ ﮐﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺩﻝ ﮐﺎ ﭨﯿﮍﮪ ﭘﻦ

ﺟﺐ ﺩﻝ ﮨﯽ ﭨﯿﮍﮬﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﮐﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﮬﺮﺗﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﮯ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﻝ ﭨﯿﮍﮬﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﮩﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﮨﮯ
ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺭﺷﺎﺩ ہے

ﻭَ ﺍِﺫۡ ﻗَﺎﻝَ ﻣُﻮۡﺳٰﯽ ﻟِﻘَﻮۡﻣِﮧٖ ﯾٰﻘَﻮۡﻡِ ﻟِﻢَ ﺗُﻮٔۡﺫُﻭۡﻧَﻨِﯽۡ ﻭَ ﻗَﺪۡ ﺗَّﻌۡﻠَﻤُﻮۡﻥَ ﺍَﻧِّﯽۡ ﺭَﺳُﻮۡﻝُ ﺍﻟﻠّٰﮧِ ﺍِﻟَﯿۡﮑُﻢۡ ؕ ﻓَﻠَﻤَّﺎ ﺯَﺍﻏُﻮۡۤﺍ ﺍَﺯَﺍﻍَ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﻗُﻠُﻮۡﺑَﮩُﻢۡ ؕ ﻭَ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﻟَﺎ ﯾَﮩۡﺪِﯼ ﺍﻟۡﻘَﻮۡﻡَ ﺍﻟۡﻔٰﺴِﻘِﯿۡﻦَ
‏ ﺍﻟﺼﻒ 5 ‏

 ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﻣﻮﺳﯽ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺍﮮ ﻟﻮﮔﻮ ! ﺗﻢ ﮐﯿﻮﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺘﺎﺗﮯ ﮨﻮ، ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﺗﻢ ﺧﻮﺏ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ،
ﭘﺲ ﺟﺐ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﭨﯿﮍﮬﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﻓﺎﺳﻘﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ

ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﻮ ﺷﺮﮎ ﺳﮯ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﮐﺮﻧﺎ ﺩﻝ ﮐﮯ ﭨﯿﮍﮪ ﭘﻦ ﮐﺎ ﺑﮩﺖ ﻭﺍﺿﺢ ﺛﺒﻮﺕ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻗﻤﺎﺵ ﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﯽ ﺳﻤﺠﮭﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﻟﮓ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﺎ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﺎ ﻣﺤﺎﻝ ﮨﮯ

ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺩﮦ ﺳﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﺣﮑﺎﻣﺎﺕ ﮐﯽ ﺗﻌﻤﯿﻞ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﺭﺳﻮﻝ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﺣﮑﺎﻡ ﻭ ﻓﺮﺍﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﺗﻌﻤﯿﻞ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﻣﻄﮩﺮﮦ ﮐﯽ ﭘﯿﺮﻭﯼ ﮨﮯ

ﺭﻭﺯ ﺍﻭﻝ ﺳﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺍﻣﺖ ﻧﮯ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺎ ﯾﮩﯽ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﮨﮯ ﻣﺎﺳﻮﺍﺋﮯ ﭼﻨﺪ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﻔﺴﺮﯾﻦ ﮐﮯ

ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺻﺎﻑ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺷﺮﮎ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﻋﯿﻦ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮨﮯ . ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﺍﻭﭘﺮ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﺮﯾﻢ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﺁﯾﺎﺕ ﺳﮯ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﮯ

ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺭﺳﻮﻝ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺋﯽ؟

ﺍﺱ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺷﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﮨﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻟﺒﺎﺱ ﻣﺠﺎﺯ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮐﺮ ﺑﺘﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺮﯾﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﻢ ﮐﻮ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﯿﺎ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻟﺌﮯ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﭼﮭﺖ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﻮ ﻓﺮﺵ ﺑﻨﺎﯾﺎ، ﺳﻮﺭﺝ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ
ﻟﺤﺎﻇﮧ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻﺅ،

ﺍﮔﺮﭼﮧ ﮨﺮ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻥ ﻭ ﺳﺮﮐﺶ ﻗﻮﻡ ﻧﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺳﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺋﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺒﮭﯽ ﮨﻮﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ
ﻗﺮﺁﻥ ﮐﺮﯾﻢ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﮐﮯ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﻻﯾﻌﻨﯽ ﻣﻄﺎﻟﺒﺎﺕ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ. ﺍﻥ ﻣﻄﺎﻟﺒﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ

ﻭَ ﺍِﺫۡ ﻗُﻠۡﺘُﻢۡ ﯾٰﻤُﻮۡﺳٰﯽ ﻟَﻦۡ ﻧُّﻮٔۡﻣِﻦَ ﻟَﮏَ ﺣَﺘّٰﯽ ﻧَﺮَﯼ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﺟَﮩۡﺮَۃً ﻓَﺎَﺧَﺬَﺗۡﮑُﻢُ ﺍﻟﺼّٰﻌِﻘَۃُ ﻭَ ﺍَﻧۡﺘُﻢۡ ﺗَﻨۡﻈُﺮُﻭۡﻥَ
‏ ﺍﻟﺒﻘﺮۃ 55 ‏

 ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺍﮮ ﻣﻮﺳﯽ ! ﮨﻢ ﮨﺮﮔﺰ ﺁﭖ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﻻﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﻇﺎﮨﺮﯼ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮫ ﻧﮧ ﻟﯿﮟ ﭘﺲ ‏( ﺍﺱ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﮐﯽ ﭘﺎﺩﺍﺵ ﻣﯿﮟ ‏) ﺗﻢ ﮐﻮ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﯽ ﮐﮍﮎ ﻧﮯ ﺁ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺩﯾﮑﮫ ﮨﯽ ﺗﻮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ

ﯾَﺴۡﺌَﻠُﮏَ ﺍَﮨۡﻞُ ﺍﻟۡﮑِﺘٰﺐِ ﺍَﻥۡ ﺗُﻨَﺰِّﻝَ ﻋَﻠَﯿۡﮩِﻢۡ ﮐِﺘٰﺒًﺎ ﻣِّﻦَ ﺍﻟﺴَّﻤَﺎٓﺀِ ﻓَﻘَﺪۡ ﺳَﺎَﻟُﻮۡﺍ ﻣُﻮۡﺳٰۤﯽ ﺍَﮐۡﺒَﺮَ ﻣِﻦۡ ﺫٰﻟِﮏَ ﻓَﻘَﺎﻟُﻮۡۤﺍ ﺍَﺭِﻧَﺎ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﺟَﮩۡﺮَۃً ﻓَﺎَﺧَﺬَﺗۡﮩُﻢُ ﺍﻟﺼّٰﻌِﻘَۃُ ﺑِﻈُﻠۡﻤِﮩِﻢۡ ۚ ……….
‏ ﺍﻟﻨﺴﺎﺀ 153 ‏

 ﺍﮮ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺍﮨﻞ ﮐﺘﺎﺏ ﺁﭖ ﺳﮯ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺭﻭ ﺑﺮﻭ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺅ ﺗﻮﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻮﺳﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﮍﺍ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﻇﺎﮨﺮﯼ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﯿﮟ ﺩﮐﮭﺎ ﺩﻭ، ﭘﺲ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻇﻠﻢ ﮐﯽ ﭘﺎﺩﺍﺵ ﻣﯿﮟ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﯽ ﮐﮍﮎ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺁ ﻟﯿﺎ

ﻭَ ﻗَﺎﻝَ ﺍﻟَّﺬِﯾۡﻦَ ﻟَﺎ ﯾَﻌۡﻠَﻤُﻮۡﻥَ ﻟَﻮۡ ﻟَﺎ ﯾُﮑَﻠِّﻤُﻨَﺎ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﺍَﻭۡ ﺗَﺎۡﺗِﯿۡﻨَﺎۤ ﺍٰﯾَۃٌ ؕ ﮐَﺬٰﻟِﮏَ ﻗَﺎﻝَ ﺍﻟَّﺬِﯾۡﻦَ ﻣِﻦۡ ﻗَﺒۡﻠِﮩِﻢۡ ﻣِّﺜۡﻞَ ﻗَﻮۡﻟِﮩِﻢۡ ؕ ﺗَﺸَﺎﺑَﮩَﺖۡ ﻗُﻠُﻮۡﺑُﮩُﻢۡ ؕ ﻗَﺪۡ ﺑَﯿَّﻨَّﺎ ﺍﻟۡﺎٰﯾٰﺖِ ﻟِﻘَﻮۡﻡٍ ﯾُّﻮۡﻗِﻨُﻮۡﻥَ
‏ ﺍﻟﺒﻘﺮۃ 118 ‏

 ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﻢ ﺳﮯ ( ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ‏) ﮐﻼﻡ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﯾﺎ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺸﺎﻧﯽ ﺁﺋﮯ، ﺍﻥ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ، ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻝ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﮯ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﮨﻢ ﻧﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺁﯾﺘﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮ ﺩﯼ ﮨﯿﮟ

ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺣﮑﺎﻣﺎﺕ ﺑﻨﺪﻭﮞ ﺗﮏ ﭘﮩﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺭﺳﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺧﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ
ﺍﻭﺭ ﺭﺳﻮﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺻﺤﯿﻔﮯ ﻧﺎﺯﻝ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﯾﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺸﺮﯾﺢ ﮐﺎ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﮨﮯ

ﻭَ ﺍَﻧۡﺰَﻟۡﻨَﺎۤ ﺍِﻟَﯿۡﮏَ ﺍﻟﺬِّﮐۡﺮَ ﻟِﺘُﺒَﯿِّﻦَ ﻟِﻠﻨَّﺎﺱِ ﻣَﺎ ﻧُﺰِّﻝَ ﺍِﻟَﯿۡﮩِﻢۡ ﻭَ ﻟَﻌَﻠَّﮩُﻢۡ ﯾَﺘَﻔَﮑَّﺮُﻭۡﻥَ
ﺍﻟﻨﺤﻞ 44 ‏
ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺁﭖ ﭘﺮ ﯾﮧ ﺫﮐﺮ ‏( ﻗﺮﺁﻥ ‏) ﻧﺎﺯﻝ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﺟﻮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻧﺎﺯﻝ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﺳﮯ ﺁﭖ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﻭﮦ ﻏﻮﺭ ﻭ ﻓﮑﺮ ﮐﺮﯾﮟ

ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺁﯾﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﻮ ﺷﺎﺭﺡ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ

کیا حضرت علی رضی اللہ عنہ کعبہ کے اندر پیدہ ہوئے؟

آز- نجیب اللہ عمر

ﺑﺮﯾﻠﻮیﻮں ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﻓﺾ ﮐﮯ ﻧﻈﺮﯾﺎﺕ ﮐﻮ ﻧﮧ ﺍﭘﻨﺎﺋﮯ ﺑﮭﻼ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﮬﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮬﮯ.
ﺍﺳﻠﺌﮯ ﺭﻭﺍﻓﺾ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻧﻈﺮﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ اﭘﻨﺎ ﻟﯿﺎﮬﮯ ﮐﮧ
ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﻌﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮬﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ .
ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﻟﺌﮯ ﺭﻭﺍﻓﺾ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻣﻮﻟﻮﺩ ﮐﻌﺒﮧ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮬﯿﮟ .
ﺍﻭﺭ ﺍﺳﭙﺮ ﻭﮦ ﭼﻨﺪ ﺩﻻﺋﻞ ﺩﯾﺘﮯ ﮬﯿﮟ
ﺟﻨﮑﺎ ﻋﻠﻤﯽ ﺗﻌﺎﻗﺐ ﮬﻢ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ .

ﺩﻟﯿﻞ ﻧﻤﺒﺮ 1

ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﮦ “ﺍﻟﻤﺴﺘﺪﺭﮎ ﻋﻠﯽ ﺍﻟﺼﺤﯿﺤﯿﻦ” ﺳﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﺎ ﻗﻮﻝ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ:

ﻗﺪ ﺗﻮﺍﺗﺮﺕ ﺍﻷﺧﺒﺎﺭ ﺃﻥ ﻓﺎﻃﻤﺔ ﺑﻨﺖ ﺃﺳﺪ ﻭﻟﺪﺕ ﺃﻣﻴﺮ ﺍﻟﻤﺆﻣﻨﻴﻦ ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻃﺎﻟﺐ ﻛﺮﻡ ﺍﻟﻠﻪ ﻭﺟﻬﻪ ﻓﻲ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﻜﻌﺒﺔ ۔ ‏(ﺍﻟﻤﺴﺘﺪﺭﮎ ﻋﻠﯽ ﺍﻟﺼﺤﯿﺤﯿﻦ 550:3 ﺑﺎﺏ ﺫﮐﺮ ﻣﻨﺎﻗﺐ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﺍﻟﻘﺮﺷﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ، ﺭﻗﻢ 6044 ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻜﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﻴﺔ ﺑﻴﺮﻭﺕ‏)

ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﺎ ﺍٓﺩﮬﺎ ﺍٓﺧﺮﯼ ﺣﺼﮧ ﮨﮯ ۔ ﭘﻮﺭﯼ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﯾﻮﮞ ﮨﮯ:

ﺃﺧﺒﺮﻧﺎ ﺃﺑﻮ ﺑﻜﺮ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﺑﺎﻟﻮﻳﻪ ﺛﻨﺎ ﺇﺑﺮﺍﻫﻴﻢ ﺑﻦ ﺇﺳﺤﺎﻕ ﺍﻟﺤﺮﺑﻲ ﺛﻨﺎ ﻣﺼﻌﺐ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﻪ ﻓﺬﻛﺮ ﻧﺴﺐ ﺣﻜﻴﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﻭﺯﺍﺩ ﻓﻴﻪ ﻭﺃﻣﻪ ﻓﺎﺧﺘﺔ ﺑﻨﺖ ﺯﻫﻴﺮ ﺑﻦ ﺃﺳﺪ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻌﺰﻯ ﻭﻛﺎﻧﺖ ﻭﻟﺪﺕ ﺣﻜﻴﻤﺎ ﻓﻲ ﺍﻟﻜﻌﺒﺔ ﻭﻫﻲ ﺣﺎﻣﻞ ﻓﻀﺮﺑﻬﺎ ﺍﻟﻤﺨﺎﺽ ﻭﻫﻲ ﻓﻲ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﻜﻌﺒﺔ ﻓﻮﻟﺪﺕ ﻓﻴﻬﺎ ﻓﺤﻤﻠﺖ ﻓﻲ ﻧﻄﻊ ﻭﻏﺴﻞ ﻣﺎ ﻛﺎﻥ ﺗﺤﺘﻬﺎ ﻣﻦ ﺍﻟﺜﻴﺎﺏ ﻋﻨﺪ ﺣﻮﺽ ﺯﻣﺰﻡ ﻭﻟﻢ ﻳﻮﻟﺪ ﻗﺒﻠﻪ ﻭﻻ ﺑﻌﺪﻩ ﻓﻲ ﺍﻟﻜﻌﺒﺔ ﺃﺣﺪ ﻗﺎﻝ ﺍﻟﺤﺎﻛﻢ ﻭﻫﻢ ﻣﺼﻌﺐ ﻓﻲ ﺍﻟﺤﺮﻑ ﺍﻷﺧﻴﺮ ۔
ﺍﺱ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺿﺢ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺣﻀﺮﺕ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﮐﻮ “ﻣﻮﻟﻮﺩ ﻓﯽ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ” ﮐﮩﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺍٓﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺮﺩﯾﺪ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ” ﻣﻮﻟﻮﺩ ﻓﯽ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ ” ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺧﺒﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺗﻮﺍﺗﺮ ﮐﺎ ﺩﻋﻮﯼٰ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ۔

‏(1‏) ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﻧﮯ ﺟﻦ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﻭﮨﻢ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﯾﮧ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺼﻌﺐ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﻗﺮﺷﯽ ﺍﺳﺪﯼ ﺍﯾﮏ ﺻﺤﺎﺑﯽ ﮐﮯ ﺍﻭﻻﺩ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﺴﺐ ﮐﮯ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﮮ ﻋﺎﻟﻢ ﺗﮭﮯ ۔ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﻧﺲ ﺑﻦ ﻣﺎﻟﮏ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﺘﻔﺎﺩﮦ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ۔ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﻧﮯ ﺍﻧﮭﯿﮟ “ﺛﺒﺖ”،”ﺛﻘۃ” ﺍﻭﺭ “ﺻﺪﻭﻕ” ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ۔ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﺎ ﺍﯾﺴﮯ ﺟﻠﯿﻞ ﺍﻟﻘﺪﺭ ﺍﻣﺎﻡ ﮐﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﻣﺆﯾﺪ ﮨﯿﮟ، ﺑﻼ ﺩﻟﯿﻞ ﻭﮨﻢ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﺬﺍﺕ ﺧﻮﺩ ﻭﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﺍ ﺗﺴﺎﻣﺢ ﮨﮯ ۔

‏(2) ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻓﺮﻣﺎﻧﺎ ﮐﮧ “ﻣﺘﻮﺍﺗﺮ ﺧﺒﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺎ “ﻣﻮﻟﻮﺩ ﻓﯽ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ” ﮨﻮﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﮯ” ﯾﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﺠﺎﺋﺒﺎﺕ ﻭﺗﻔﺮﺩﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ ۔

ﻣﺤﻘﻖ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﺮﺣﻤﺎﻥ ﻣﺤﻤﺪ ﺳﻌﯿﺪ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺗﺒﺼﺮﮦ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ:

ﺍﻥ ﻓﺎﻃﻤۃ ﺑﻨﺖ ﺍﺳﺪ ﻭﻟﺪﺕ ﻋﻠﯿﺎ ﻓﯽ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ ﻟﻢ ﺍﺟﺪ ﻓﯽ ﮐﺘﺐ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﺷﯿﺌﺎ ﻣﻦ ﺫٰﻟﮏ ﺑﻞ ﺍﻟﺜﺎﺑﺖ ﺍﻥ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﮬﻮ ﺍﻟﻤﻮﻟﻮﺩ ﻓﯽ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﮑﻌﺒﮧ، ﻣﻦ ﻋﺠﺎﺋﺐ ﺍﻟﺤﺎﮐﻢ ﺍﻧﮧ ﺭﻭﯼ ﻓﯽ ﻣﻨﺎﻗﺐ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﺍﻧﮧ ﻭﻟﺪ ﻓﯽ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ ﺗﻌﻘﺒﮧ ﺑﺎﻧﮧ ﻗﺪ ﺗﻮﺍﺗﺮﺕ ﺍﻻﺧﺒﺎﺭ ﺑﺎﻥ ﻓﺎﻃﻤۃ ﻭﻟﺪﺕ ﻋﻠﯿﺎ ﻓﯽ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ ﻭﮐﺎﻥ ﺍﻟﻼﺋﻖ ﺑﮧ ﺍﯼ ﯾﺎﺗﯽ ﺑﺘﻠﮏ ﺍﻟﺮﻭﺍﯾۃ ﺍﻟﻤﺘﻮﺍﺗﺮﺓ ۔ ‏(ﺷﺒﮭﺎﺕ ﻭﺭﺩﻭ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﯾﺤﺘﺞ ﺑﮭﺎ ﺍﻟﺸﯿﻌۃ 136:1‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ: ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﻣﺎﺟﺪﮦ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺑﻨﺖ ﺍﺳﺪ ﻧﮯ ﺟﻮﻑ ﮐﻌﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﻢ ﺩﯾﺎ ﺍﺱ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﺘﺐِ ﺣﺪﯾﺚ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻼ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺛﺎﺑﺖ ﺷﺪﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﮐﯽ ﻭﻻﺩﺕ ﺟﻮﻑ ﮐﻌﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ۔ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﺎ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﺎ ﮐﮧ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﻣﺎﺟﺪﮦ ﻧﮯ ﮐﻌﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﻢ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﺎﺑﺖ ﻣﺘﻮﺍﺗﺮ ﺧﺒﺮﯾﮟ ﮨﯿﮟ، ﯾﮧ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﮯ ﻋﺠﺎﺋﺐ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ ۔ ﺍﮔﺮ ﻭﺍﻗﻌﺘﺎً ﮨﯽ ﺍﺱ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺗﮭﯿﮟ ﺗﻮ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﺗﮯ ۔

ﺣﺎﻓﻆ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﺍﻣﺎﻡ ﺟﻼﻝ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺳﯿﻮﻃﯽ ﺷﺎﻓﻌﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻡ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻭﮦ ﺍﻣﺎﻡ ﺳﯿﻮﻃﯽ ﺟﻨﮭﯿﮟ ﻋﺎﻟﻢِ ﺑﯿﺪﺍﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﷺ ﮐﯽ ﺳﺘﺮ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺯﯾﺎﺭﺕ ﮐﺎ ﺷﺮﻑ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﺍ. ﻭﮦ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ:

ﻭﻣﺎ ﻭﻗﻊ ﻓﻲ ﻣﺴﺘﺪﺭﻙ ﺍﻟﺤﺎﻛﻢ ﻣﻦ ﺃﻥ ﻋﻠﻴﺎ ﻭﻟﺪ ﻓﻴﻬﺎ ﺿﻌﻴﻒ ۔ ‏(ﺗﺪﺭﻳﺐ ﺍﻟﺮﺍﻭﻱ ﻓﻲ ﺷﺮﺡ ﺗﻘﺮﻳﺐ ﺍﻟﻨﻮﺍﻭﻱ 880:2 ﺩﺍﺭ ﻃﻴﺒﺔ ﺑﺮﺗﻮﺕ)

ﺍﻭﺭ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺳﻮﻳﻠﻢ ﺃﺑﻮ ﺷُﻬﺒﺔ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ:

ﻭﻣﺎ ﻭﻗﻊ ﻓﻲ “ﺍﻟﻤﺴﺘﺪﺭﻙ” ﻟﻠﺤﺎﻛﻢ ﻣﻦ ﺃﻥ ﻋﻠﻴﺎ ﻭﻟﺪ ﻓﻴﻬﺎ ﺿﻌﻴﻒ ۔ ‏(ﺍﻟﻮﺳﻴﻂ ﻓﻲ ﻋﻠﻮﻡ ﻭﻣﺼﻄﻠﺢ ﺍﻟﺤﺪﻳﺚ، ﺹ 660 ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻔﻜﺮ ﺍﻟﻌﺮﺑﻲ ﺑﺮﻣﻮﺕ)

ﯾﮧ ﺗﻮ ﺣﺎﻝ ﮨﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﮯ ﺩﻋﻮﯼٰ ﺑﻼ ﺩﻟﯿﻞ ﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ ﯾﮩﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﻧﮯ “ﺍﻟﻤﺴﺘﺪﺭﮎ” ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﮐﻤﺰﻭﺭﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﮐﻮ ﺻﺤﯿﺢ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ۔ﺟﻨﮑﺎ ﺗﻌﺎﻗﺐ ﻋﻼﻣﮧ ﺫﮬﺒﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮬﮯ
ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﯿﺎ؟ ﺣﺎﻓﻆ ﺳﯿﻮﻃﯽ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ:

ﻭﺇﻧﻤﺎ ﻭﻗﻊ ﻟﻠﺤﺎﻛﻢ ﺍﻟﺘﺴﺎﻫﻞ ﻷﻧﻪ ﺳﻮﺩ ﺍﻟﻜﺘﺎﺏ ﻟﻴﻨﻘﺤﻪ ﻓﺄﻋﻠﺘﻪ ﺍﻟﻤﻨﻴﺔ ۔ ‏(ﺗﺪﺭﻳﺐ ﺍﻟﺮﺍﻭﻱ ﻓﻲ ﺷﺮﺡ ﺗﻘﺮﻳﺐ ﺍﻟﻨﻮﺍﻭﻱ 113:1 ﺩﺍﺭ ﻃﻴﺒﺔ ﺑﺮ ﻭﺕ)

ﺗﺮﺟﻤﮧ: ﺣﺎﮐﻢ ﮐﯽ ﻏﻔﻠﺖ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﻮ ﻣﺴﻮﺩﮦ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﯿﺎ، ﺍﺑﮭﯽ ﻧﻈﺮ ﺛﺎﻧﯽ ﮐﺮﻧﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ۔

ﺍﻣﺎﻡ ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﺮﺣﻤﺎﻥ ﺍﻟﺴﺨﺎﻭﯼ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ:

‏(ﻭﻛﺎﻟﻤﺴﺘﺪﺭﻙ) ﻋﻠﻰ ﺍﻟﺼﺤﻴﺤﻴﻦ ﻣﻤﺎ ﻓﺎﺗﻬﻤﺎ ﻟﻠﺤﺎﻛﻢ ﺃﺑﻲ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﻪ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﻪ ﺍﻟﻀﺒﻲ ﺍﻟﻨﻴﺴﺎﺑﻮﺭﻱ ﺍﻟﺤﺎﻓﻆ ﺍﻟﺜﻘﺔ ‏( ﻋﻠﻰ ﺗﺴﺎﻫﻞ ‏) ﻣﻨﻪ ﻓﻴﻪ، ﺑﺈﺩﺧﺎﻟﻪ ﻓﻴﻪ ﻋﺪﺓ ﻣﻮﺿﻮﻋﺎﺕ، ﺣﻤﻠﻪ ﻋﻠﻰ ﺗﺼﺤﻴﺤﻬﺎ ; ﺇﻣﺎ ﺍﻟﺘﻌﺼﺐ ﻟﻤﺎ ﺭﻣﻲ ﺑﻪ ﻣﻦ ﺍﻟﺘﺸﻴﻊ، ﻭﺇﻣﺎ ﻏﻴﺮﻩ، ﻓﻀﻼ ﻋﻦ ﺍﻟﻀﻌﻴﻒ ﻭﻏﻴﺮﻩ ۔ ﺑﻞ ﻳﻘﺎﻝ : ﺇﻥ ﺍﻟﺴﺒﺐ ﻓﻲ ﺫﻟﻚ ﺃﻧﻪ ﺻﻨﻔﻪ ﻓﻲ ﺃﻭﺍﺧﺮ ﻋﻤﺮﻩ، ﻭﻗﺪ ﺣﺼﻠﺖ ﻟﻪ ﻏﻔﻠﺔ ﻭﺗﻐﻴﺮ، ﺃﻭ ﺃﻧﻪ ﻟﻢ ﻳﺘﻴﺴﺮ ﻟﻪ ﺗﺤﺮﻳﺮﻩ ﻭﺗﻨﻘﻴﺤﻪ ۔ ‏(ﻓﺘﺢ ﺍﻟﻤﻐﻴﺚ ﺑﺸﺮﺡ ﺍﻟﻔﻴﺔ ﺍﻟﺤﺪﻳﺚ ﻟﻠﻌﺮﺍﻗﻲ 54:1 ﻣﻜﺘﺒﺔ ﺍﻟﺴﻨﺔ ﺍﻟﻘﺎﻫﺮﺓ‏)

ﺍﺱ ﻃﻮﯾﻞ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺎ ﺧﻼﺻﮧ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﺎ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ “ﻣﻮﻟﻮﺩ ﻓﯽ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ” ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺗﻮﺍﺗﺮ ﮐﺎ ﺩﻋﻮﯼٰ ﺑﻼ ﺩﻟﯿﻞ ﮨﮯ ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﻧﮯ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﮐﮯ “ﻣﻮﻟﻮﺩ ﻓﯽ ﺍﻟﮑﻌﺒۃ” ﮐﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻧﻘﻞ ﮐﯽ ﮨﮯ، ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﮐﻮ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ۔

ﺩﻟﯿﻞ ﻧﻤﺒﺮ 2

ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﮦ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﺎﮦ ﻭﻟﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺤﺪﺙ ﺩﮨﻠﻮﯼ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺏ “ﺍﺯﺍﻟۃ ﺍﻟﺨﻔﺎﺀ” ﮐﺎ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭘﮭﻼ ﺟﻮﺍﺏ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ
ﺷﺎﮦ ﻭﻟﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺤﺪﺙ ﺩﮨﻠﻮﯼ ﺭﺡ ﮐﻮ ﻣﺸﮭﻮﺭ ﺑﺮﯾﻠﻮﯼ ﻋﺎﻟﻢ ﻋﻤﺮ ﺍﭼﮭﺮﻭﯼ ﻧﮯ ﻭﮬﺎﺑﯽ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮬﮯ.

ﺍﻭﺭﻇﺎﮬﺮ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮑﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﻭﮬﺎﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﮔﺴﺘﺎﺥ ﮬﻢ ﻣﻌﻨﯽ ﻟﻔﻆ ﮬﮯ.

ﺗﻮ ﻧﻌﻮﺫﺑﺎﻟﻠﮧ ﺍﯾﮏ ﮔﺴﺘﺎﺥ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﯿﺴﮯ ﺣﺠﺖ ﮐﮯ ﻃﻮﺭﭘﺮ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺳﮑﺘﯽ ﮬﮯ.

ﺑﮭﺮﺣﺎﻝ ﺷﺎﮦ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﺎ ﮨﯽ ﻗﻮﻝ ﻧﻘﻞ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺎﮐﻢ ﮐﮯ ﺩﻋﻮﯼٰ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺗﻮ ﺍٓﭖ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮨﯽ ﻟﯽ ۔

ﺩﻟﯿﻞ ﻧﻤﺒﺮ 3

ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﮦ ﻋﻼﻣﮧ ﺳﺒﻂ ﺍﺑﻦ ﺍﻟﺠﻮﺯﯼ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺏ “ﺗﺬﮐﺮﺓ ﺍﻟﺨﻮﺍﺹ” ﺳﮯ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﺿﻌﯿﻒ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻋﻼﻣﮧ ﺳﺒﻂ ﺍﻟﺠﻮﺯﯼ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺻﯿﻐﮧ ﺗﻤﺮﯾﺾ ﺳﮯ ﺫﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ، ﻣﻼﺣﻈﮧ ﮐﯿﺠﯿﮯ:

ﻭﺭﻭﯼ ﺍﻥ ﻓﺎﻃﻤﺔ ﺑﻦ ﺍﺳﺪ ﮐﺎﻧﺖ ﺗﻄﻮﻑ ﺑﺎﻟﺒﯿﺖ ﻭﮬﯽ ﺣﺎﻣﻞ ﺑﻌﻠﯽ ‏(ﻉ‏) ﻓﻀﺮﺑﮭﺎ ﺍﻟﻄﻠﻖ ﻓﻔﺘﺢ ﻟﮭﺎ ﺑﺎﺏ ﺍﻟﮑﻌﺒﺔ ﻓﺪﺧﻠﺖ ﻓﻮﺿﻌﺘﮧ ﻓﯿﮭﺎ ﻭﮐﺬﺍ ﺣﮑﯿﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﻭﻟﺪﺗﮧ ﺍﻣﮧ ﻓﯽ ﺍﻟﮑﻌﺒﺔ ۔ ‏(ﺗﺬﮐﺮﺓ ﺍﻟﺨﻮﺍﺹ، ﺹ 10 ﺫﮐﺮ ﻧﺴﺐ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﻃﺎﻟﺐ، ﻓﺼﻞ ﻓﯽ ﺫﮐﺮ ﻭﺍﻟﺪﺗﮧ، ﻃﺒﻊ ﻃﮩﺮﺍﻥ‏)

ﺍﮨﻞِ ﻋﻠﻢ ﺳﮯ ﭘﻮﺷﯿﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ “ﺭﻭﯼ” ﺳﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺩﺭﺟﮧ ﺻﺤﺖ ﮐﻮ ﻧﮭﯿﮟ ﭘﮭﻨﭽﺘﯽ ۔

ﺩﻟﯿﻞ ﻧﻤﺒﺮ 4

ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﮦ ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﺤﻖ ﻣﺤﺪﺙ ﺩﮨﻠﻮﯼ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺏ “ﻣﺪﺍﺭﺝ ﺍﻟﻨﺒﻮﺓ” ﺳﮯ ﺍﺭﺩﻭ ﻋﺒﺎﺭﺕ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﯾﮧ ﮐﺘﺎﺏ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ۔ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻋﺒﺎﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ، ﺷﯿﺦ ﻣﺤﻘﻖ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ: ﮔﻔﺘﮧ ﺍﻧﺪ ﮐﮧ ﺑﻮﺩ ﻭﻻﺩﺕ ﻭﯼ ﺩﺭ ﺟﻮﻑ ﮐﻌﺒﮧ. ‏(ﻣﺪﺍﺭﺝ ﺍﻟﻨﺒﻮﺓ 531:2)

“ﮔﻔﺘﮧ ﺍﻧﺪ” ﯾﻌﻨﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﮐﻮﻥ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺼﺮﯾﺢ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻞِ ﻋﻠﻢ ﺑﺨﻮﺑﯽ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ “ﮔﻔﺘﮧ ﺍﻧﺪ” ﺻﯿﻐﮧ ﺗﻤﺮﯾﺾ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﻘﻞ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﺻﺤﯿﺢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯿﮟ ۔

ﺩﻟﯿﻞ ﻧﻤﺒﺮ 5

ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﮦ ﺍﻣﺎﻡ ﺑﺮﮬﺎﻥ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺣﻠﺒﯽ ﮐﯽ “ﺍﻟﺴﻴﺮﺓ ﺍﻟﺤﻠﺒﻴﺔ” ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ “ﻣﺨﺘﺼﺮ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﻌﺒﮧ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ” ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﻋﺮﺑﯽ ﻋﺒﺎﺭﺕ ﻧﻘﻞ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﯾﺎ ﺷﺎﯾﺪ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﮐﺎﭘﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ۔

ﻋﻼﻣﮧ ﺣﻠﺒﯽ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ:

ﺣﻜﻴﻢ ﺑﻦ ﺣﺰﺍﻡ ﻭﻟﺪ ﻓﻲ ﺟﻮﻑ ﺍﻟﻜﻌﺒﺔ، ﻭﻻ ﻳﻌﺮﻑ ﺫﻟﻚ ﻟﻐﻴﺮﻩ ۔ ﻭﺃﻣﺎ ﻣﺎ ﺭﻭﻱ ﺃﻥ ﻋﻠﻴﺎ ﻭﻟﺪ ﻓﻴﻬﺎ ﻓﻀﻌﻴﻒ ﻋﻨﺪ ﺍﻟﻌﻠﻤﺎﺀ ۔ ‏(ﺍﻟﺴﻴﺮﺓ ﺍﻟﺤﻠﺒﻴﺔ 202:1 ﺑﺎﺏ ﺗﺰﻭﺟﻪ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﺧﺪﻳﺠﺔ ﺑﻨﺖ ﺧﻮﻳﻠﺪ ﺭﺿﻲ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻨﻬﺎ ﺍﻟﺦ، ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻜﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﻴﺔ ﺑﻴﺮﻭﺕ‏)

ﯾﮩﺎﮞ ﻋﻼﻣﮧ ﺣﻠﺒﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻗﻮﻝ ﮐﻮ ﺿﻌﯿﻒ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ‏

ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﺮﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺟﮩﮧ ﮐﯽ ﻭﻻﺩﺕ ﮔﺎﮦ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﮯ؟
ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﻋﻠﻲ، ﺗﻘﻲ ﺍﻟﺪﻳﻦ، ﺃﺑﻮ ﺍﻟﻄﻴﺐ ﺍﻟﻤﻜﻲ ﺍﻟﺤﺴﻨﻲ ﺍﻟﻔﺎﺳﻲ ‏(ﺍﻟﻤﺘﻮﻓﻰ: 832 ﻫـ) ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ:

ﻣﻮﻟﺪ ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻃﺎﻟﺐ ﺭﺿﻲ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻨﻪ ﻗﺮﻳﺒﺎ ﻣﻦ ﻣﻮﻟﺪ ﺍﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻣﻦ ﺃﻋﻼﻩ ﻣﻤﺎ ﻳﻠﻲ ﺍﻟﺠﺒﻞ، ﻭﻫﻮ ﻣﺸﻬﻮﺭ ﻋﻨﺪ ﺃﻫﻞ ﻣﻜﺔ ﺑﺬﻟﻚ ﻻ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﺑﻴﻨﻬﻢ ﻓﻴﻪ ……… ﻭﻋﻠﻰ ﺑﺎﺑﻪ ﻣﻜﺘﻮﺏ : ﻫﺬﺍ ﻣﻮﻟﺪ ﺃﻣﻴﺮ ﺍﻟﻤﺆﻣﻨﻴﻦ ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻃﺎﻟﺐ ﺭﺿﻮﺍﻥ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ. ‏(ﺷﻔﺎﺀ ﺍﻟﻐﺮﺍﻡ ﺑﺄﺧﺒﺎﺭ ﺍﻟﺒﻠﺪ ﺍﻟﺤﺮﺍﻡ 358:1 ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻜﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﻴﺔ ﺑﯿﺮﻭﺕ‏)

ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﻟﻀﻴﺎﺀ ﻣﺤﻤﺪ ﺍﻟﻘﺮﺷﻲ ﺍﻟﻌﻤﺮﻱ ﺍﻟﻤﻜﻲ ﺍﻟﺤﻨﻔﻲ، ﺑﻬﺎﺀ ﺍﻟﺪﻳﻦ ﺃﺑﻮ ﺍﻟﺒﻘﺎﺀ، ﺍﻟﻤﻌﺮﻭﻑ ﺑﺎﺑﻦ ﺍﻟﻀﻴﺎﺀ ‏(ﺍﻟﻤﺘﻮﻓﻰ 854) ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ:

ﻣﻮﻟﺪ ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻃﺎﻟﺐ ﺭﺿﻲ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻨﻪ ﻭﻫﺬﺍ ﺍﻟﻤﻮﺿﻊ ﻣﺸﻬﻮﺭ ﻋﻨﺪ ﺍﻟﻨﺎﺱ ﺑﻘﺮﺏ ﻣﻮﻟﺪ ﺍﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﺑﺄﻋﻠﻰ ﺍﻟﺸﻌﺐ ﺍﻟﺬﻱ ﻓﻴﻪ ﺍﻟﻤﻮﻟﺪ ……… ﻭﻋﻠﻰ ﺑﺎﺑﻪ ﺣﺠﺮ ﻣﻜﺘﻮﺏ ﻓﻴﻪ ﻫﺬﺍ ﻣﻮﻟﺪ ﺃﻣﻴﺮ ﺍﻟﻤﺆﻣﻨﻴﻦ ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻃﺎﻟﺐ ۔ ‏(ﺗﺎﺭﻳﺦ ﻣﻜﺔ ﺍﻟﻤﺸﺮﻓﺔ ﻭﺍﻟﻤﺴﺠﺪ ﺍﻟﺤﺮﺍﻡ ﻭﺍﻟﻤﺪﻳﻨﺔ ﺍﻟﺸﺮﻳﻔﺔ ﻭﺍﻟﻘﺒﺮ ﺍﻟﺸﺮﻳﻒ، ﺻﻔﺤﮧ 185 ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻜﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﻴﺔ ﺑﻴﺮﻭﺕ)

ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﯽ ﻭﻻﺩﺕ ﮔﺎﮦ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﷺ ﮐﯽ ﻭﻻﺩﺕ ﮔﺎﮦ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﮨﻞِ ﻣﮑﮧ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺑﻼ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﮯ ۔ ﻧﯿﺰ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﻭﻻﺩﺕ ﮨﮯ.

ﺍﻭﺭ ﺍﺣﻤﺪ ﺭﺿﺎ ﺧﺎﻥ “ﺗﺤﻔﮧ ﺍﺛﻨﺎﺀ ﻋﺸﺮﯼ” ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺑﻨﺖ ﺍﺳﺪ ﮐﻮ ﻭﺣﯽ ﺁﺋﯽ ﮐﮧ ﺗﻮ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﻌﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮨﺎﮞ ﺑﭽﮯ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﺮ، ﯾﮧ ﺳﺐ ﺟﮭﻮﭦ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﭘﺮ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ۔” ‏(ﻓﺘﺎﻭﯼٰ ﺭﺿﻮﯾﮧ 193:15 ﺍﻭﺭ 248:15 ﺭﺿﺎ ﻓﺎﺅﻧﮉﯾﺸﻦ)

موسمِ گرما اور پانی پلانے کی فضیلت

مفتی رفیع الدین حنیف قاسمی

موسمِ گرما کی آمد آمد ہے ، ایسے میں انسان کو پیاس شدت سے لگتی ہے ، اس موقع سے بلا لحاظِ مذہب وملت کے بہت ساری ہمدرد ، بہی خواہ ، رفاہی اور عوامی خدمات پر ایقان رکھنے والے ، مخلوقِ خدا کی خدمت کی شوقین وشیدا مختلف مقامات اور بازاروں ، چوراہوں اور گلی نکڑوں پر پانی پلانے کانظم کرتے ہیں ، آبدار خانے قائم کرتے ہیں ،اس عمل کے تعلق سے ہمت افزائی کی جانی چاہئے ، اور لوگوں کو اس کی ترغیب دی جانی چاہئے ، اور یہ عمل نہایت ثواب اور فضیلت کا حامل ہے پھر کیوں کر رسولِ رحمت صلی اللہ علیہ وسلم اس کی ترغیب نہ دیتے ؟ اسلام جیسا انسانیت کابہی خواہ ، اور انسانیت کا پاسدار مذہب اس کی تعلیمات سے کیسے پہلو تہی کرتا؟ چنانچہ رسول اللہ ﷺ کے ارشادات میں اسکی اہمیت وافادیت زوردیا گیا ہے ، یہ عمل اس کے بظاہر نہایت معمولی ہونے کے باوجود نہایت اہمیت کا حامل ہے ۔میں نے شہر حیدرآباد میں دیکھا ہے بعض غیر مسلم تنظیموں کی طرف سے بھی بڑے پیمانے پر موسم گرما میں پانی پلانے کا نظم بڑے تزک واہتمام سے ہوتا ہے ۔ہم تو اس نبی کی امتی ہیں جن کا ایقان یہ ہے کہ اللہ کے راہ میں خرچ کرنا در اصل یہ اللہ کے خزانے میں اپنے لئے بطورِ ذخیرۂ آخرت کے اکٹھا کرنا ہے ۔، شہر کے سلم گلیوں میں گرما کے موسم سے پانی کے لئے لوگ ترس جاتے ہیں ، ایسے جب کہ بورویل وغیرہ بھی سوکھ جاتے ہیں ، اس طرح کی سلم اور غریبوں سے معمور بستیوں میں بھی پانی کی ٹینکروں کے ذریعے آبرسانی کی خدمت میں شامل ہونا اور اپنے اور اپنے مرحومین کے ایصال ثواب کے لئے پانی کا نظم کرنا یہ مرحومین کے لئے ثواب جاریہ کا ذریعہ ہوسکتا ہے ۔یہ تو انسان ہیں،نبی کریم ﷺ کے ارشادات میں جانوروں تک کے لئے پانی کے نظم کرنے پر اجر وثواب اور جنت کی بشارتیں سنائی
گئیں ہیں ۔

پانی پلانا ۔ ثوابِ جاریہ

پانی پلانی کو احادیث نبویہ میں صدقۂ جاریہ فرمایا گیاہے ، جس کا ثواب مرنے کے بعد بھی انسان کو ملتارہتا ہے ، کنویں ، بوریل، ٹانکی وغیرہ کی شکل میں غریبوں اور ناداروں کے لئے پانی کا نظم کرنا یہ مرحومین کے ایصال ثواب اور ان کے اجرِ آخرت اور صدقہ جاریہ ہوسکتا ہے ۔
سیدنا سعد بن عبادہ رضی اللہ عنہ نے رسول اللہ ﷺ سے عرض کیا: اللہ کے رسول : میری والدہ وفات پاگئی ہیں اوران کی طرف سے کونسا صدقہ افضل رہے گا؟ اللہ کے رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: پانی کا صدقہ، چنانچہ انہوں نے ایک کنواں کھدوا کر وقف کردیا اور کہا یہ سعد کی والدہ کے ثواب کے لئے ہے ’’ فحفر بئرا وقال : ھذہ لأم سعد‘‘ (ابوداؤد: باب فی فضل سقی الماء، حدیث:
(۱۶۸۳)۔

پانی پلانا بہترین صدقہ ہے

پانی پلانے اور پیاسوں کی سیرابی کا عمل یہ ایک نہایت
بہترین صدقہ ہے ، جس کی احادیث میں ترغیب دی گئی ہے۔چنانچہ حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:’’بہترین صدقہ پانی پلانا ہے ، کیا تم نے جہنمیوں کے اس قول کو نہیں سناجب انہوں نے اہل جنت سے مدد چاہی او ران لوگوں نے کہا:’’أَفِیْضُوْا عَلَیْنَا مِنَ الْمَاءِ أَوْ مِمَّا رَزَقَکُمُ اللہُ‘‘ ہم پر تھوڑا سا پانی بہا دو ،یا کچھ اس چیز میں سے دو جو تمہیں اللہ نے رزق دیا ہے(مسند ابی یعلی، مسند ابن عباس، حدیث: ۶۲۷۳) ۔
اورایک روایت میں حضرت سعد بن عبادہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم ﷺنے ان سے فرمایا: اے سعد! کیا میں تمہیں ایسا ہلکا صدقہ جس میں بوجھ بالکل کم ہو نہ بتاؤں؟ فرمایا: کیوں نہیں اے اللہ کے رسول! فرمایا: ’’سقی الماء‘‘ پانی پلانا، چنانچہ حضرت سعد نے پانی پلایا۔(المعجم الکبیر للطبرانی، حدیث:۵۲۴۷)

پانی پلانا ۔مغفرت وبخشش کا باعث:

پانی پلانے کا عمل نہایت معمولی ہونے کے باوجود ، ثواب اور اجر آخرت اور رضائے خداوندی اور خوشنودی رب کا نہایت بڑا ذریعہ، روزِ آخرت بخش اور مغفرت کا باعث ہوتا ہے ،صرف اسی عمل کی وجہ سے انسان جہنم سے خلاصی حاصل کر کے جنت کا مستحق ہوسکتا ہے ،
اسی کوحدیث میں یوں فرمایا گیا:
ابوہریرہ رضی اللہ تعالی عنہ روایت ہے، کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ ایک آدمی چل رہا تھا، اسی دوران میں اسے پیاس لگی وہ ایک کنویں میں اترا اور اس سے پانی پیا، کنویں سے باہر نکلا تو دیکھا کہ ایک کتا ہانپ رہا ہے اور پیاس کی وجہ سے کیچڑ چاٹ رہا ہے، اس نے کہا کہ اس کو بھی ویسی ہی پیاس لگی ہوگی جیسی مجھے لگی تھی، چنانچہ اس نے اپنا موزہ پانی سے بھرا پھر اس کو منہ سے پکڑا پھر اوپر چڑھا اور کتے کو پانی پلایا، اللہ نے اس کی نیکی قبول کی، اور اس کو بخش دیا، لوگوں نے عرض کیا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کیا چوپائے میں بھی ہمارے لئے اجر ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہر تر جگر والے یعنی جاندار میں ثواب ہے’’ فی کل کبد رطبۃ
أجر‘‘(بخاری: باب فضل سقی الماء: حدیث: ۲۲۳۴،)۔

:دنیا کے پانی کے بدلے جنت کی شراب

دنیا میں پانی پلانے اور انسانوں اور جانوروں وغیرہ کا
سیراب اور ان کی تشنگی کا سامان کرنے کا اجر وثواب اس قدر ہے کہ اس پانی پلانے کے عوض اللہ عزوجل روز قیامت اور یومِ آخرت اس شخص کو اس پانی کے بدلے جنت کی شراب مرحمت فرمائیں گے چنانچہ حدیث میں آیا
ہے :
حضرت ابوسعد رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ
رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جو مسلمان کسی ننگے کو کپڑا پہنائے گا تو اللہ تعالی اس کو جنت کا ہرا لباس پہنائے گا اور جو مسلمان کسی بھوکے کو کھانا کھلائے تو اللہ تعالی اس کو جنت کے پھل کھلائے گا، اور جو مسلمان کسی پیاسے کو پانی پلائے تو اس کو اللہ تعالی جنت کی شراب پلائے گا۔’’ وأیما مسلم سقی مسلمان علی ظمأ سقاہ اللہ من الرحیق المختوم‘‘(ابوداؤد: باب فی فضل سقی الماء ، حدیث: ۱۶۸۴)
انسانوں کی تشنگی کا سامان کرنا اور ان کو پانی پلانا اور شدت پیاس میں ان کو سیراب کرنایہ ایساعمل ہے جس کو جنت سے قربت اور جہنم سے دوری کاباعث بتلایا گیا ہے ۔ایک روایت میں ہے کہ ایک دیہاتی نبی کریم ﷺ کی خدمت اقدس میں حاضر ہوا، اور کہنے لگا: مجھے کوئی ایسا عمل بتلادیئجے جو مجھے اللہ عزوجل کی اطاعت سے قریب اور جہنم سے دور کردے ، فرمایا: کیا تم ان دونوں پر عمل کرو گے ؟ تو اس نے کہا : ہاں ، تو آپ ﷺ نے فرمایا: انصاف کی بات کہو اور زائد کو دوسروں کو مرحمت کردو، فرمایا: اللہ کی قسم ! میں نہ تو انصاف کی بات کرسکتا ہوں اور نہ زائد چیز کسی کو دے سکتا ہوں ، فرمایا: کھانا کھلاؤں اور سلام کرو، اس نے کہا : یہ بھی مشکل ہے ، فرمایا: کیا تمہارے پاس اونٹ ہیں، اس نے کہا:ہاں، تو آپ ﷺ نے فرمایا: اپنے ایک اونٹنی اور ایک مشکیزہ لو، پھر ان لوگوں کے گھر جاؤ جن کو کبھی کبھی ملتا ہے ، انہیں پانی پلاؤ، شاید کہ تمہاری اونٹنی ہلاک ہواور تمہارے مشکیزہ پھٹ جائے اس سے پہلے تمہارے لئے جنت واجب ہوجائے گی، راوی کہتے ہیں کہ : وہ دیہاتی تکبیر کہتا ہوا چلا، کہتے ہیں : اس کے مشکیزہ سے کے پھٹنے اور اور اس کی اونٹنی کے ہلاک ہونے سے پہلے وہ شہادت کی موت مرا ’’ فما انخرق سقاء ہ ولا ہلک بعیرہ حتی قتل شھیدا‘‘(السنن الکبری للبیہقی، باب ما ورد فی سقی الماء، حدیث: ۷۵۹۸)

جانوروں کو سیراب کا بھی ثواب کا باعث:

اتنا ہی نہیں انسانی کی تشنگی کا سامان کرنے پر ہی انسان کو ثواب ملتا ہے ؛ بلکہ کسی پیاسے اور سسکتے بلتے اور پیاس کی شدت سے تڑپتے ہوئے جانور کے لئے پانی پلانے اور اور اس کی سیرابی کا سامان کرنے پر اجر وثواب کاوعدہ کیا گیا ہے چنانچہ ایک روایت میں سراقہ بن مالک بن جعشم سے مروی ہے :
حضرت سراقہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے مرض الوفات میں حاضر خدمت ہوا، میں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے سوالات پوچھنا شروع کر دیئے، حتی کہ میرے پاس سوالات ختم ہو گئے تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کچھ اور یاد کرلو، ان سوالات میں سے ایک سوال میں نے یہ بھی پوچھا تھا کہ یا رسول اللہ(صلی اللہ علیہ وسلم) وہ بھٹکے ہوئے اونٹ جو میرے حوض پر آئیں تو کیا مجھے ان کو پانی پلانے پر اجروثواب ملے گا؟ جبکہ میں نے وہ پانی اپنے اونٹوں کے لئے بھرا ہو، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہاں ! ہر تر جگر رکھنے والے میں اجروثواب ہے۔’’ نعم فی الکبد الحراء أجر‘‘ (مسند احمد، حدیث سراقۃ بن جعشم، حدیث: ۱۷۶۲۴)
الغرض یہ کہ پیاسوں کو پانی پلانا، تشنہ لبوں کی سیراب کاسامان کرنا، انسانی کی پانی کی ضروریات کی تکمیل یہ نہایت اجر وثواب اور بلندی درجات کا باعث ہے، نہ صرف انسانوں کو پانی پلانا یہ اجر وثواب آخرت اور رضائے خداوندی اور دخول جنت کا ذریعہ کا ہے ؛ بلکہ پیاسے جانوروں کے لئے پانی کانظم کرنا یہ بھی ثواب اور اجر آخرت کا باعث ہے ۔

کرسمس اور اسلام

ﺑﺴﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺍﻟﺮﺣﯿﻢ

ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﮩﻮﺍﺭﻭﮞ ﻣﺜﻼ ﮐﺮﺳﻤﺲ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﻣﻨﺎﻧﺎ

ﺗﺤﺮﯾﺮ : ﺳﺎﺟﺪ ﺧﺎﻥ ﻧﻘﺸﺒﻨﺪﯼ

ﻧﻮﭦ : ﯾﮧ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﻓﯿﺼﻞ ﺍٓﺑﺎﺩ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﻌﻠﯽ ﭘﯿﺮ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻟﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺏ ﻣﻮﻗﻊ ﮐﯽ ﻣﻨﺎﺳﺒﺖ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺗﺮﺍﻣﯿﻢ ﮐﺮﮐﮯ ﺷﺎﯾﻊ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ ۔

ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﺍﮨﻠﺴﻨﺖ ! ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻧﺠﺎﺕ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﻃﻞ ﻣﺬﮨﺐ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺳﻼﻡ ﻗﺒﻮﻝ ﻧﮧ ﮐﺮﻟﯿﮟ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺭﺏ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﺎ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﮨﮯ ﮐﮧ:

ﻟَﻘَﺪْ ﮐَﻔَﺮَ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﻗَﺎﻟُﻮْ ٓﺍ ﺍِﻥَّ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﮬُﻮَ ﺍﻟْﻤَﺴِﯿْﺢُ ﺍﺑْﻦُ ﻣَﺮْﯾَﻢَ ﻭَ ﻗَﺎﻝَ ﺍﻟْﻤَﺴِﯿْﺢُ ﯾٰٓﺒَﻨِﯽْ ﺍِﺳْﺮَﺍٓﺋِﯿْﻞَ ﺍﻋْﺒُﺪُﻭْﺍٓ ﺍﻟﻠّٰﮧَ ﺭَﺑِِّﯽْ ﻭَ ﺭَﺑَّﮑُﻢْ ﺍِﻧَّﮧ ‘ ﻣَﻦْ ﯾُّﺸْﺮِﮎْ ﺑِﺎﻟﻠّٰﮧِ ﻓَﻘَﺪْ ﺣَﺮَّﻡَ ﺍﻟﻠّٰﮧُ ﻋَﻠَﯿْﮧِ ﺍﻟْﺠَﻨَّۃَ ﻭَﻣَﺎْﻭٰﮦُ ﺍﻟﻨَّﺎﺭَ ﻭَﻣَﺎ ﻟِﻠﻈَّﺎِﻟﻤِﯿْﻦَ ﻣِﻦْ ﺍَﻧْﺼَﺎﺭٍﻟَﻘَﺪْ ﮐَﻔَﺮَ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﻗَﺎﻟُﻮﺍٓ ﺍِﻥَّ ﺍﻟﻠَّﮧَ ﺛَﺎﻟِﺚ ‘’ ﺛَﻼَﺛَۃ ﻭَﻣَﺎ ﻣِﻦْ ﺍِﻟٰﮧٍ ﻭَّﺍﺣِﺪ ‘’ ﻭَّ ﺍِﻥْ ﻟَّﻢْ ﯾَﻨْﺘَﮭُﻮْﺍ ﻋَﻤَّﺎ ﯾَﻘُﻮْﻟُﻮْﻥَ ﻟَﯿَﻤَﺴَّﻦَّ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﮐَﻔَﺮُﻭْﺍ ﻣِﻨْﮭُﻢْ ﻋَﺬَﺍﺏ ‘’ ﺍَﻟِﯿْﻢ ‘’ ۔
‏( ﺳﻮﺭۃ ﺍﻟﻤﺎﺋﺪﮦ : ﺍٓﯾﺖ ۷۲۔۷۳ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺑﮯ ﺷﮏ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﮨﯽ ﻣﺴﯿﺢ ﺍﺑﻦ ﻣﺮﯾﻢ ﮐﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﮨﮯ ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻣﺴﯿﺢ ﻧﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﮮ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﺮﻭ ﺟﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﺭﺏ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﺑﻼﺷﺒﮧ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺷﺮﯾﮏ ﭨﮭﺮﺍﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺟﻨﺖ ﺣﺮﺍﻡ ﮐﺮﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﻨﻢ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭨﮭﮑﺎﻧﮧ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻇﺎﻟﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺪﺩﮔﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺷﮏ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺟﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﯿﻦ ﺧﺪﺍﻭٔﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﺑﺎﺯ ﻧﮧ ﺍٓﺋﮯ ﺗﻮ ﺟﻮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ‏( ﻣﺮﯾﮟ ﮔﮯ ‏) ﺿﺮﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺩﺭﺩﻧﺎﮎ ﻋﺬﺍﺏ ﭘﮩﻨﭽﮯ ﮔﺎ۔

ﺍﻥ ﺍٓﯾﺎﺕ ﻣﺒﺎﺭﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺿﺢ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﭘﺎﮎ ﻧﮯ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﺎﻓﺮ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺿﺢ ﻓﺮﻣﺎﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺸﺮﮐﺎﻧﮧ ﻋﻘﺎﺋﺪ ﺳﮯ ﺗﻮﺑﮧ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﭨﮭﮑﺎﻧﮧ ﺟﮩﻨﻢ ﮨﮯ ۔ﺍﻭﺭ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﻮﺩﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ :

ﯾٰﺎَﯾُّﮭَﺎ ﺍﻟَّﺬِﯾْﻦَ ﺍَﻣَﻨُﻮْﺍ ﻟَﺎ ﺗَﺘَّﺨِﺬُﻭْﺍ ﺍﻟْﯿَﮭُﻮْﺩَ ﻭَ ﺍﻟﻨَّﺼَﺎﺭٰﯼ ﺍٓﻭْﻟِﯿَﺎٓﺉً ﺑَﻌْﻀُﮭُﻢْ ﺍَﻭْﻟِﯿَﺎٓﺉَ ﺑَﻌْﺾٍ ﻭَّ ﻣَﻦْ ﯾَّﺘَﻮَﻟَّﮭُﻢْ ﻣِﻨْﮑُﻢْ ﻓَﺎِﻧَّﮧ ‘ ﻣِﻨْﮭُﻢْ ﺍِﻥَّ ﺍﻟﻠَّﮧَ ﻻَ ﯾَﮭْﺪِﯼ ﺍﻟْﻘَﻮْﻡَ ﺍﻟﻈَّﺎﻟِﻤِﯿْﻦَ۔ ‏( ﺳﻮﺭۃ ﺍﻟﻤﺎﺋﺪﮦ : ﺍٓﯾﺖ ۵۱ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ ! ﯾﮩﻮﺩ ﻭ ﻧﺼﺎﺭﯼ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺖ ﻧﮧ ﺑﻨﺎﻧﺎ ،ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﻌﺾ ﺑﻌﺾ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﮭﺮﺍ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﻧﮩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﻇﺎﻟﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ۔
ﺍﺱ ﺍٓﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺿﺢ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﻓﺮﻣﺎﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﻮﺩﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﺮ ﮔﺰ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﭘﯿﻨﮕﮯ ﻧﮧ ﺑﮍﮬﺎﻧﺎ ﯾﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍٓﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﻤﺎﻧﻌﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺑﺎﺯ ﻧﮧ ﺍٓﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﯾﮩﯽ ﺳﻤﺠﮭﻮ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﻮ۔ﺣﻀﺮﺕ ﻗﺎﺿﯽ ﻋﯿﺎﺽ ﻣﺎﻟﮑﯽ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

’’ ﻭﻣﻦ ﻟﻢ ﯾﮑﻔﺮ ﺍﺣﺪﺍ ﻣﻦ ﺍﻟﻨﺼﺎﺭﯼ ﻭﺍﻟﯿﮭﻮﺩ ﻭﮐﻞ ﻣﻦ ﻓﺎﺭﻕ ﺍﻟﻤﺴﻠﻤﯿﻦ ﺍﻭ ﻭﻗﻒ ﻓﯽ ﺗﮑﻔﯿﺮﮬﻢ ﺍﻭ ﺷﮏ ﻗﺎﻝ ﺍﻟﻘﺎﺿﯽ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﻻﻥ ﺍﻟﺘﻮﻗﯿﻒ ﻭﺍﻻﺟﻤﺎ ﻉ ﺍﺗﻔﻘﺎ ﻋﻠﯽ ﮐﻔﺮﮬﻢ ﻓﻤﻦ ﻭﻗﻒ ﻓﯽ ﺫﺍﻟﮏ ﻓﻘﺪ ﮐﺬﺏ ﺍﻟﻨﺺ ﺍﻟﺘﻮﻗﯿﻒ ﻭﺍﻟﺸﮏ ﻓﯿﮧ ﻭﺍﻟﺘﮑﺬﯾﺐ ﺍﻭ ﺍﻟﺸﮏ ﻓﯿﮧ ﻭﻻ ﯾﻘﻊ ﺍﻻ ﻣﻦ ﮐﺎﻓﺮ ۔ ‏( ﺍﻟﺸﻔﺎﺀ : ﺝ۲ : ﺹ ۱۷۰۔ﺣﻘﺎﻧﯿﮧ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺍﺟﻤﺎﻉ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﻔﺮ ﭘﺮ ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﯾﮩﻮﺩﯼ ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﺟﻮ ﺩﯾﻦ ﺍﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﻮ ﮐﺎﻓﺮ ﻧﮧ ﮐﮩﮯ ﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺎﻓﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﻗﻒ ﮐﺮﮮ ﯾﺎ ﺷﮏ ﮐﺮﮮ ﺍﻣﺎﻡ ﻗﺎﺿﯽ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﻧﮯ ﺍ ﺳﮑﯽ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮐﮧ ﻧﺼﻮﺹ ﺷﺮﻋﯿﮧ ﻭ ﺍﺟﻤﺎﻉ ﺍﻣﺖ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﻔﺮ ﭘﺮ ﻣﺘﻔﻖ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺟﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﻗﻒ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻧﺺ ﻭ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﯽ ﺗﮑﺬﯾﺐ ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ ﯾﺎ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﮏ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯽ ﺳﮯ ﮨﻮﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ۔

ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﺼﻮﺹ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ﻧﮧ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﻭ ﻣﻮﺍﻻﺕ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮩﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻌﺾ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ،ﻣﺤﺒﺖ ،ﺍﺧﻮﺕ ،ﺑﮭﺎﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﻦ ﮐﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺍٓﮌﻣﯿﮟ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﭘﯿﺎﺭ ﻭﻣﺤﺒﺖ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﯾﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺬﺍﮨﺐ ﺍﯾﮏ ﮔﻠﺪﺳﺘﮧ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﻦ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﺗﮩﻮﺍﺭ ’’ ﮐﺮﺳﻤﺲ ‘‘ ﮐﻮ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﯿﺴﯽٰ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﺎ ﺟﻨﻢ ﺩﻥ ﻣﺎﻥ ﮐﺮ ﺑﮍﮮ ﺩﮬﻮﻡ ﺩﮬﺎﻡ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﻮ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﮐﺮ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ ۔ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺍﺳﻼﻡ ﻧﮯ ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺗﮩﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﮐﺖ ﮐﻮ ﮐﻔﺮ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔

ﮐﺮﺳﻤﺲ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ

ﺍﺧﺒﺮﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﺍﻟﻔﺎﺭﺳﯽ ﺍﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺍﺳﺤﺎﻕ ﺍﻻﺻﺒﮭﺎﻧﯽ ﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺍﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﻓﺎﺭﺱ ﻧﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﺳﻤﺎﻋﯿﻞ ﺍﻟﺒﺨﺎﺭﯼ : ﻗﺎﻝ : ﺍﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﺎ ﻧﺎﻓﻊ ﺑﻦ ﯾﺰﯾﺪ ﺳﻤﻊ ﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﺯﯾﻨﺐ ﻭ ﻋﻤﺮﻭ ﺑﻦ ﺍﻟﺤﺎﺭﺙ ﺳﻤﻊ ﺳﻌﯿﺪ ﺑﻦ ﺍﺑﯽ ﺳﻠﻤۃ ﺳﻤﻊ ﺍﺑﺎﮦ ﺳﻤﻊ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﺍﻟﺨﻄﺎﺏ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻋﻨﮧ ﺍﻧﮧ ﻗﺎﻟـ : ﺍﺟﺘﻨﺒﻮﺍ ﺍﻋﺪﺍٓﺀ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﯿﮭﻮﺩ ﻭﺍﻟﻨﺼﺎﺭﯼ ﻓﯽ ﻋﯿﺪﮬﻢ ﯾﻮﻡ ﺟﻤﻌﮭﻢ ﻓﺎﻥ ﺍﻟﺴﺨﻂ ﯾﻨﺰﻝ ﻋﻠﯿﮩﻢ ﻓﺎﺧﺸﯽ ﺍﻥ ﯾﺼﯿﺒﮑﻢ ﻭﻻ ﺗﻌﻠﻤﻮﺍ ﺑﻄﺎﻧﺘﮭﻢ ﺗﺨﻠﻘﻮﺍ ﺑﺨﻠﻘﮭﻢ۔
‏( ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ : ﺝ۷ : ﺹ ۴۳۔ﺩﺍﺭﺍﻟﮑﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﯿﮧ ﺑﯿﺮﻭﺕ ‏)

ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﮨﻤﯿﮟ ﺧﺒﺮ ﺩﯼ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺑﻮ ﺍﺳﺤﻖ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺑﻮ ﺍﺣﻤﺪﻧﮯ ﺍﻥ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﺳﻤﻌﯿﻞ ﺑﺨﺎﺭﯼ ﻧﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺑﻦ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﻮ ﺧﺒﺮ ﺩﯼ ﻧﺎﻓﻊ ﺑﻦ ﯾﺰﯾﺪ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻨﺎﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﺍﺑﻮ ﺯﯾﻨﺐ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﺣﺎﺭﺙ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻌﯿﺪ ﺑﻦ ﺍﺑﻮ ﺳﻠﻤﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺳﮯ ﺳﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﺳﮯ ﮐﮧ ﺍٓﭖ ؓ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﯾﮭﻮﺩ ﻭ ﻧﺼﺎﺭﯼ ﺳﮯ ﺑﭽﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﮐﮭﭩﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻧﺎﺭﺍﺿﯽ ﺍﺗﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺭﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﻧﺪﺭﻭﻧﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻣﺖ ﺟﺎﻧﺎ ﮐﺮﻭ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺗﻢ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺗﯿﮟ ﺳﯿﮑﮫ ﺟﺎﻭ ﮔﮯ ‏( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺟﺎﻭﮔﮯ ‏) ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ :

ﺍﺧﺒﺮﻧﺎ ﺍﺑﻮ ﺍﻟﻘﺎﺳﻢ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﺤﺮﻓﯽ ﻧﺎ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺍﻟﺰﺑﯿﺮ ﺍﻟﮑﻮﻓﯽ ﻧﺎ ﺍﻟﺤﺴﻦ ﺍﺑﻦ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﻋﻔﺎﻥ ﻧﺎ ﺯﯾﺪ ﺑﻦ ﺍﻟﺤﺒﺎﺏ ﻧﺎ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻋﻘﺒﮧ ﺣﺪﺛﻨﯽ ﻋﻄﺎﺀ ﺑﻦ ﺩﯾﻨﺎﺭ ﺍﻟﮭﺬﻟﯽ ﺍﻥ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﺍﻟﺨﻄﺎﺏ ﻗﺎﻝ : ﺍﯾﺎﮐﻢ ﻭ ﻣﻮﺍﻃﻨۃ ﺍﻻﻋﺎﺟﻢ ﻭ ﺍﻥ ﺗﺪﺧﻠﻮﺍ ﻋﻠﯿﮩﻢ ﻓﯽ ﺑﯿﻌﮭﻢ ﯾﻮﻡ ﻋﯿﺪﮬﻢ ﻓﺎﻥ ﺍﻟﺴﺨﻂ ﯾﻨﺰﻝ ﻋﻠﯿﮩﻢ۔
‏( ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ : ﺝ۷ : ﺹ۴۳ ‏)

ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺍٓﭖ ﮐﻮ ﺑﭽﺎﻭٔ ﺍﮨﻞ ﻋﺠﻢ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﻮﺩ ﻭ ﺑﺎﺵ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺧﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﯿﺪ ﮐﮯ ﺍﯾﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﺍﺱ ﺩﻥ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ۔

ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﺍﮨﻠﺴﻨﺖ ! ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﺗﻮ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﺮﺳﻤﺲ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺩﻥ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﻭ ﻧﺎﺭﺍﺿﮕﯽ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﺟﻌﻠﯽ ﺻﻮﻓﯽ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺧﯿﺮ ﻭ ﺑﺮﮐﺖ ﻭﺍﻻ ﺩﻥ ﮨﮯ ۔ﺍﺏ ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺎﻧﯿﮟ ﯾﺎ ﺣﻀﺮ ﺕ ﻋﻤﺮ ؓ ﮐﯽ ؟

ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺍﯾﺎﻡ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﮐﻔﺮ ﮨﮯ

ﻣﻼ ﻋﻠﯽ ﻗﺎﺭﯼ ﺣﻨﻔﯽ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ : ؎

ﻓﯽ ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺍﻟﺼﻐﺮﯼ ﻣﻦ ﺍﺷﺘﺮﯼ ﯾﻮﻡ ﺍﻟﻨﻮﺭﻭﺯ ﺷﯿﺌﺎ ﻭ ﻟﻢ ﯾﮑﻦ ﯾﺸﺘﺮﯾﮧ ﻗﺒﻞ ﺫﺍﻟﮏ ﺍﺭﺍﺩ ﺑﮧ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﺍﻟﻨﻮﺭﻭﺯ ،ﮐﻔﺮ ﺍﯼ ﻻﻧﮧ ﻋﻈﻢ ﻋﯿﺪ ﺍﻟﮑﻔﺮۃ۔ )) ﺷﺮﺡ ﻓﻘﮧ ﺍﻻﮐﺒﺮ : ﺹ ۴۹۹ ۔ﺑﯿﺮﻭﺕ ‏)

ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻧﻮﺭﻭﺯ ‏( ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ‏) ﮐﮯ ﺩﻥ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﺧﺮﯾﺪﯼ ﺟﻮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﺗﺎ ﺗﮭﺎ ،ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﺍﺱ ﺍﺷﺘﺮﺍﺀ ﺳﮯ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ،ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ ﺍ ﺱ ﻧﮯ ﮐﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﯽ۔

ﻣﺰﯾﺪ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

ﻟﻮﺍﻥ ﺭﺟﻼ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺧﻤﺴﯿﻦ ﻋﺎﻣﺎ ﺛﻢ ﺟﺎﺀ ﯾﻮﻡ ﺍﻟﻨﻮﺭﻭﺯ ﻓﺎﮬﺪﯼ ﺍﻟﯽ ﺑﻌﺾ ﺍﻟﻤﺸﺮﮐﯿﻦ ﯾﺮﯾﺪ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﺫﺍﻟﮏ ﺍﻟﯿﻮﻡ ﻓﻘﺪ ﮐﻔﺮ ﺑﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﻌﻈﯿﻢ ﻭ ﺣﺒﻂ ﻋﻤﻠﮧ ﺧﻤﺴﯿﻦ ﻋﺎﻣﺎ۔
‏( ﺷﺮﺡ ﻓﻘﮧ ﺍﻻﮐﺒﺮ : ﺹ ۵۰۰ ‏)

ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﭘﭽﺎﺱ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﭘﮭﺮ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﺎ ﺩﻥ ﺍٓﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﻣﺸﺮﮎ ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﮨﺪﯾﮧ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﯿﺖ ﺍﺱ ﮨﺪﯾﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﻔﺮ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﭽﺎﺱ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔

ﺍﻭﺭ ﺍٓﮔﮯ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

’’ ﻭ ﻋﻠﯽ ﻗﯿﺎﺱ ﻣﺴﺎﻟۃ ﺍﻟﺨﺮﻭﺝ ﺍﻟﯽ ﺍﻟﻨﯿﺮﻭﺯ ﺍﻟﻤﺠﻮﺳﯽ ﺍﻟﻤﻮﺍﻓﻘۃ ﻣﻌﮭﻢ ﻓﯿﻤﺎ ﯾﻔﻠﻌﻮﻥ ﻓﯽ ﺫﺍﻟﮏ ﺍﻟﯿﻮﻡ ﯾﻮﺟﺐ ﺍﻟﮑﻔﺮ ‘’

ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺟﺸﻦ ﮐﮯ ﺩﻥ ﻧﮑﻠﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﻣﺠﻮﺳﯽ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺍﻗﻔﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﻔﺮ ﮐﻮ ﻻﺯﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ۔

ﺍﺏ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭼﯿﻠﮯ ﺟﻮ ﮐﺮﺳﻤﻦ ﮐﮯ ﺩﻥ ﮐﯿﮏ ﮐﺎﭨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮔﯿﺖ ﮔﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺸﻦ ﻣﻨﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺭﮨﮯ؟
ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺷﮭﺎﺏ ﯾﻮﺳﻒ ﺍﻟﮑﺮﺩﺭﯼ ﺍﻟﺤﻨﻔﯽ ؒ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ :

’’ ﻭﮐﺬﺍ ﺍﺟﺘﻤﺎﻉ ﺍﻟﺴﻤﻠﻤﯿﻦ ﯾﻮﻡ ﻓﺼﺢ ﺍﻟﻨﺼﺎﺭﯼ ﻟﻮ ﻣﻮﺍﻓﻘۃ ﻟﮭﻢ۔ ‏( ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺑﺰﺍﺯﯾﮧ : ﺝ۳ : ﺹ ۱۸۶ ‏)

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺟﺘﻤﺎﻉ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺍﮔﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺍﻓﻘﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮨﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﮔﺌﮯ۔

ﻋﻼﻣﮧ ﺑﺰﺍﺯﯼ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﻋﺠﯿﺐ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺟﻮ ﺻﻮﻓﯽ ﻣﺴﻌﻮﺩ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻣﻮﺍﻓﻖ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻧﻮﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺩﻥ ﻧﮑﻠﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﺳﺮﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﺎ ﺟﻮ ﻣﺠﻮﺳﯽ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﻔﺮ ﮨﮯ ،ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﺎﻡ ﺍﮐﺜﺮ ﻭﮦ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﺠﻮﺳﯿﺖ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺳﻼﻡ ﻻﺋﮯ ﭘﺲ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺩﻥ ﺍﻥ ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﻮﺳﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻮﺍﻓﻘﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻋﻠﻢ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ‘‘ ۔ ‏( ﻓﺘﺎﻭﯼ ﺑﺰﺍﺯﯾﮧ : ﺝ۳ : ﺹ ۱۸۶ ‏)

ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﮐﺮﺍﻡ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﺟﺎﺕ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺭﻭﺯ ﺭﻭﺷﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮐﮧ ﮐﻔﺎﺭ ﮐﮯ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﺗﮩﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﮐﺮﻧﺎ ،ﺍﺱ ﺩﻥ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﻧﺎ،ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﻔﺮ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﮯ ۔

گیارہویں شریف کی بدعات

ماہِ ربیع الثانی قمری سال کا چوتھا مہینہ ہے۔ اس مہینہ سے متعلق اسلام نے کوئی خاص حکم نہیں دیا ہے؛ البتہ اس مہینہ میں برصغیر میں ایک عمل بہت رواج پاگیا ہے، جسے شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ کی جانب منسوب کیا جاتا ہے اور وہ ہے: ’گیارھویں شریف‘۔

گیارہویں شریف

ہر قمری مہینے کی گیارہویں رات شیخ عبد القادر جیلانی کے نام جو کھانا بنایا جاتا ہے،وہ ’گیارہویں شریف ‘کے نام سے مشہور ہے۔(دیوبندی بریلوی اختلافات:۴۶)گویا ہر مہینے کی گیارہ تاریخ کو چھوٹی گیارہویں اور سالانہ، ربیع الثانی کی گیارہ تاریخ کو بڑی گیارہویں شریف منائی جاتی ہے۔    
گیارہویں کی ابتداء

گیارہویں کی ابتداء کے متعلق مطالعہٴ بریلویت میں ہے:

سوال پیدا ہوتا ہے کہ آخر یہ گیارھویں چلی کہاں سے ہے؟ اور ہندوستان میں انگریز کی آمد سے پہلے کیا کبھی گیارہویں کا عمل کسی جگہ ہوا تھا؟

شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ چھٹی صدی میں پیدا ہوئے۔ ظاہر ہے کہ اس سے پہلے اسلام کی پانچ صدیوں میں ”گیارہویں شریف“ کی رسم یا تقریب کہیں نہ تھی، آپ کے بعد یہ کب جاری ہوئی؟ اس کی تاریخی تحقیق نہایت ضروری ہے۔ جب ہم اس کی جستجو کرتے ہیں تو پتہ چلتا ہے کہ تیرہویں صدی کے نصف اول تک اہل السنة والجماعة میں گیارھویں کے نام سے کوئی دینی تقریب یا مذہبی رسم قائم نہ ہوئی تھی․․․․ہم تو اس کی تلاش کرتے کرتے تھک گئے؛ مگر افسوس! کہ ہمارے ان صاحبوں نے بھی جو کہ اسے بڑی دھوم دھام سے مناتے ہیں، اس سلسلہ میں ہماری کوئی مدد نہیں کی اور اس باب میں کوئی مستند حوالہ ہمیں نہیں دکھاسکے۔(مطالعہٴ بریلویت: ۶/۳۱۵-۳۱۳)

صرف شیخ جیلانی کی ہی گیارہویں

بے شک حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ ایک بڑے بزرگ ہیں، جن کی عظمت مسلَّم ہے، ان کی شان میں بے ادبی وگستاخی گمراہی کی علامت ہے؛ لیکن اہل السنة والجماعة کا عقیدہ ہے کہ تمام مخلوق میں انبیاء علیہم السلام کا مرتبہ سب سے بڑا ہے، اور انبیاء میں سب سے افضل آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم ہیں، پھر خلفاءِ راشدین اور ان کے بعد عشرہٴ مبشرہ وباقی ماندہ صحابہٴ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین کا درجہ بدرجہ مقام ہے۔ بہ غور سوچئے کہ انبیاء اور صحابہ جیسی مقدس ہستیوں کا ’یومِ وفات‘ منانے کی شریعت نے کوئی تاکید نہیں کی تو شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ جیسے ایک ولی کا یومِ وفات منانے کا کیا مطلب؟

ویسے بھی دن منانا ہر ایک کے لیے ممکن نہیں؛ کیوں کہ مراتب ودرجات کا لحاظ کرکے سب سے پہلے حضرات انبیاء کرام علیہم السلام اور صحابہ رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین-ہزاروں کی تعداد میں ہیں اور سال کے کل ایام تین سو چون یا تین سو ساٹھ ہیں، تو سب کے ایام وفات منانے کے لیے مزید دن کہاں سے لائیں گے؟ اور انبیاء کرام وصحابہٴ کرام کو چھوڑ کر ان سے کم اور نیچے کے درجے والے بزرگوں کے دن منائے جائیں تو یہ انبیا علیہم السلام و صحابہٴ کرام کے مراتب میں رخنہ اندازی ہے۔

اس کے علاوہ واقعہ یہ ہے کہ شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ کی تاریخِ وفات میں بڑا اختلاف ہے۔ ’تفریح الخاطر فی مناقب شیخ عبدالقادر‘ میں آٹھ اقوال بیان کیے گئے ہیں: ساتویں، آٹھویں، نویں، دسویں، گیارہویں اور سترہویں ربیع الاول اور اس کے بعد لکھا ہے کہ صحیح دسویں ربیع الاول ہے۔اس اختلاف سے معلوم ہوا کہ حضرت شیخ کے خلفاء ومریدین ومتبعین نے بھی آپ کی تاریخِ وفات اور دن وماہ کی تعیین کے ساتھ برسی اور یومِ وفات منانے کا اہتمام نہیں کیا ہے، ورنہ تاریخِ وفات میں اتنا شدید اختلاف نہ ہوتا۔

حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ بزبانِ خود فرماتے ہیں:

اپنے آقا کی خوشنودی سے محروم ہے وہ شخص جو اس پر تو عمل نہ کرے جس کااسے حکم دیا گیاہے اور اس میں مشغول رہے، جس کا حکم نہیں دیا گیا، یہی اصل محرومی ہے۔ (فتاویٰ رحیمیہ جدیدترتیب : ۲/۷۷-۷۶ بتصرف)

یہ سب متأخرین کی خود کاریاں ہیں

شیخ عبدالحق محدث دہلوی علیہ الرحمہ فرماتے ہیں، میرے استفسار پر میرے استاذ شیخ عبدالوہاب متقی علیہ الرحمہ نے ارشاد فرمایا:

بعض متأخرین نے بعض مغربی مشائخ کی زبانی بیان کیا کہ جس دن حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ نے وصالِ الٰہی فرمایا،اس دن کو لوگوں نے از خود دیگر دنوں کی بہ نسبت زیادہ خیر وبرکت اور نورانیت کا دن بنالیا ہے۔ اس کے بعد تھوڑی دیر سر جھکائے رہے، پھر سر اٹھا کر ارشاد فرمایا کہ زمانہٴ ماضی میں یہ سب التزامات کچھ نہ تھے، یہ سب تو صرف متأخرین کی اختیار کی ہوئی باتیں اورخود کاریاں ہیں۔ (ما ثبت بالسنة:۶۹)

یہی وجہ ہے کہ ہندوستان سے باہر عراق (جہاں حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی علیہ الرحمہ کا مزار ہے) اور مصر وشام بلکہ ملیشیا اور انڈونیشیا تک کہیں یہ بات نہیں ملتی کہ کسی مسجد یا مدرسہ یا کسی قبرستان میں کوئی تقریب ’گیارہویں شریف‘ کے نام سے منعقدکی گئی ہو۔ (مطالعہٴ بریلویت: ۶/۳۱۳)

اس کا سرا ہندوانہ رسوم سے ملتا ہے

’تحفة الہند‘ میں مولانا عبیداللہ رقمطراز ہیں :

”ہندوٴوں کے ہاں میت کو کھانے کا ثواب پہنچانے کا نام ’سرادھ‘ ہے اور جب سرادھ کا کھانا تیار ہو جائے تو پہلے اس پر پنڈت کو بلا کر کچھ ’بید ‘ پڑھواتے ہیں اور مُردوں کے لیے ثواب پہنچانے کے لیے ان کے ہاں خاص دن مقرَّر ہیں ، خصوصاً جس دن (وہ) فوت ہو ، ہر سال اسی دن ختم دلانا یعنی برسی یا موت کے تیرھویں دن ، بعض کے نزدیک پندرھویں دن اور بعض کے نزدیک تیسویں یا اکتیسویں دن ، ثواب پہنچانے کے لیے مقرر ہیں ۔ اسی طرح مسلمانوں نے بھی تیجہ ، ساتواں ، چالیسواں اور برسی مقرر کر لیے اور کھانا تیار کرواکر اس پر ختم پڑھوانا شروع کر دیا ؛ حالاں کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم سے ان میں سے کوئی رسم بھی ثابت نہیں“۔(مسلمانوں میں ہندوانہ رسوم و رواج :۲۳ ، دارالاندلس)

گیارہویں شریف اور اس کے کھانے کا حکم

حضرت مولانا خلیل احمد سہارنپوری نوراللہ مرقدہ فرماتے ہیں:

”غر یبوں کو کھانا کھلانا،اور قراء تِ قرآن کے ذریعے مُردوں کو ثواب پہنچانے کو کسی نے منع نہیں کیا،اس باب میں جو منع ہے تو (وہ)اس طرح مخصوص ہےئت سے ایصال(ثواب کرنے)کو منع کرتے ہیں،جس میں تشبہ بکفّار لازم آجاوے،یا تقییدِمطلق کی آجاوے کہ یہ دونوں (امور؛ تشبہ بالکفار اورمطلق کو مقید کرنا لازم آئے؛ کیوں کہ)تمام امت کے نزدیک (یہ دونوں باتیں) حرام وبدعت ہیں۔(البراہین القاطعہ:۱۷)

حضرت مفتی کفایت اللہ دہلوی فرماتے ہیں:

گیارہویں کی نیاز سے اگر مقصود ایصال ِ ثواب ہے تو، اس کے لیے گیارہویں تاریخ کی تعیین شرعی نہیں ۔ نیز حضرت غوث الاعظم کی(کوئی) تخصیص نہیں۔تمام اولیاء ِکرام اور صحابہٴ عظام  اس کے مستحق ہیں ۔ سال کے جن دنوں میں میسر ہو اور جو کچھ میسر ہو، اور جو کچھ صدقہ کر دیا جائے ، اور اس کا ثواب بزرگان ِ دین اور اموات ِ مسلمین کو بخش دیا جائے ۔ فقراء اس کھانے کو کھا سکتے ہیں ، امراء اور صاحب ِ نصاب نہیں کھا سکتے؛ کیوں کہ یہ ایصال ِ ثواب کے لیے بطور ِ صدقہ ہے ۔( کفایت المفتی : ۱ / ۱۶۶)

مولانا احمد رضا خاں صاحب بھی اسی کے قائل ہیں:

جو عامی شخص اس تعیینِ عادی کو توقیتِ شرعی جانے اور گمان کرے کہ ان کے علاوہ دنوں میں ایصالِ ثواب ہوگا ہی نہیں،یا جائز نہیں،یا ان ایام میں ثواب دیگر ایام سے زیادہ کامل ووافر ہے،تو بلا شبہ وہ شخص غلط کار اور جاہل ہے اور اس گمان میں خطاکار اور صاحبِ باطل ہے۔(فتاویٰ رضویہ جدید:۹/۹۵۱)

گیارھویں شریف میں چراغاں کرنا

”گیارہ ربیع الاول کو چراغاں یا روشنی کرنا․․․․․ بالکل ناجائز اور بدعت ہے اور دیوالی کی پوری نقل ہے۔ مساجد میں بھی نمازیوں کی ضرورت سے زیادہ رسماً ورواجاً روشنی کرنا اسراف وحرام ہے۔ اگر متولی مسجد کے مال میں سے ایسا کرے گا تو اس کو اس کا تاوان دینا ہوگا“۔ (فتاویٰ رحیمیہ جدید ترتیب : ۲/۷۷)

مولانا ندیم قاسمی

گمبد خزرا کو علماء دیوبند نے بچایا

image

ﻧﺤﻤﺪﻩ ﻭ ﻧﺼﻠﻰ ﻭﻧﺴﻠﻰ ﻋﻠﻰ ﺭﺳﻮﻟﻪ ﺍﻟﻜﺮﻳﻢ ﺃﻣﺎ ﺑﻌﺪ

ﺑﺴﻢ ﺍﻟﻠﻪ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺍﻟﺮﺣﻴﻢ

1343 ہجری میں سلطان ابن سعود نے حجاز مقدس کی سرزمین پر قبضہ کر لیا اور حرمین شریفین کے جنت معلی اور جنت البقع کے مزاروں کے قبے گرا دیئے- جس کہ وجہ سے عام تور پر عالم اسلام کے مسلمانوں میں سخط ناراضگی پہدا ہوگئی تو سلطان نے 1343 ہجری کے موقع حج پر ایک موتمر منعقد کی- جس میں ہندوستان کے علماء کی طرف سے حضرت مفتی کفایت اللہ رحماللہ صدر جمعیت علماء ہند دہلی، حضرت علامہ شبیر احمد عثمانی، علامہ سید سلیمان ندوی، مولانا محمد علی جوہر، مولانا شوکت علی اور کچھ دیگر علماء بھی شامل ہوئے-

سلطان ابن سعود کی تقریر

اس موقع پر سلطان ابن ابن سعود نے تقریر کرتے ہوئے فرمایا:

(الف) “چار اماموں کے فروعی اختلافات میں ہم تشدد نہیں کرتے لیکن اصل توحید اور قرآن و حدیث کی اتباع کے کوئی طاقت ہمیں الگ نہیں کر سکتی خواہ دنیا راضی ہع یا ناراض-”

(ب) “یہودی و نصارا کو ہم کیوں کافر کہتے ہیں؟ اس لیے کہتے ہیں کہ وہ گیراللہ کی پرستش کرتے ہیں، لیکن ساتھ ہی یہ بھی کہتے ہہں کہ: ما نعبد ھم الا ليقربونآ اليالله زلفا (یعنی ہم انکی پوجا و عبادت اللہ تعالی کے تقریب و رضا حاصل کرنے کے لیے کرتے ہیں) تو جو لوگ بزرگان دین کی قبروں کی پرستش اور ان کے سامنے سجدے کرتے ہیں، وہ بت پرستوں ہی کی طرح کافر و مشرک ہیں-”

(ج) جب حضرت عمر کو پتہ چلا کہ کچ لوگ وادی حدیبیہ میں شجرة الرضوان کے پاس جاکر نمازیں پڑھتے ہیں تو حضرت عمر نے اس درخت کو کٹوا دیا تھا کہ آئندہ خدانخواستہ لوگ اس درقت کی پوجہ نہ شروع کردیں-”

سلطان کا مطلب یہ تھا کہ قبتے گرانا بھی درقت رضوان کٹوانے کی طرح ہی ہے-

ہندوستان کے تمام علماء نے یہ طے کیا کہ ہماری طرف سے شیخ الاسلام حضرت علامہ شبیر احمد عثمانی دیوبندی سلطان ابن سعود کی تقریر کا جواب دیں گے-

مولانا عثمانی کی ایمان افروز تقریر

مولانا عثمانی نے پھلے تو اپنی شاندار پزیرائی اور مہمان نوازی کا شکریہ ادا کیا- اس کے بعد فرمایا:

(الف) ہندوستان کے اہل سنت علماء پوری بسیرت کے ساتھ تصریح کرکے کتاباللہ اور سنت رسول صلی اللہ علی وسلم کے اتبع پر پورا زور صرف کرتے ہیں اور یہ بھی کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علی آلہ وسلم کے مکمل اتبع میں ہی ہر کامیابی ہے لیکن کتاباللہ اور سنت رسول اللہ کے مواقع استمال کو سمجھنا ہر کس و ناکس کے بس کی بات نہیں- اد کے لئے صائب رائے اور صحیح اجتہاد کی اشد ضرورت ہے-

(ا) حضور صلی اللہ علی وسلم نے حضرت زینب سے نکاہ فرمایا اور اس بات کا بلکل خیال نہ رکھا کہ دنیا کیا کہے گی- دوسری طرف خانہ کعبہ کو گرا کر بنائے ابراہیمی پر تعمیر کرنے سے نئے نئے مسلمانوں کے جذبات کا لحاظ کرتے ہوئے آپ رگ گئے تا کہ دنیا والے یہ نا کہیں کہ محمد نے خانہ کابہ ڈھا دیا- دونوں موقوں کا فرق حضور کے اجتہاد مبارک پر موقوف ہیں-

(ب) اللہ تعالی نے حکم دیا: جاهد الكفار و المنافقين واغلظ عليهم- (یعنی کفار اور منافقين سے جہاد کرو اور ان پر سختی کرو) ایک طرف تو اس حکم خداوندی کا تقاضا ہے کہ کفار و منافقین کے ساتھ سختی کی جائے اور دوسری طرف آپ نے رئیس المنافقين عبداللہ بن ابی کی نماز جنازہ پڈھا دی- پھر صحابہ نے عرض کیا کہ منافقین کو قتل کر دیا جائے- مگر آپ نے بات منظور نہ فرمائی- خشية ان ليقول الناس ان محمد ايقتل اصحابه (یعنی اس اندیشہ کے پیش نظر کہ لوگ یہ نہ کھنے کگے کی محمد (صلی اللہ علی وسلم) اپنے ساتھیوں کو قتل کرتے ہیں- حالانکہ یہ دونوں باتیں واغلظ عليهم سے بظاہر مطابقت نہیں رکھتے تو اس فرق کو سمجھنے کے لیے بھی مجتہدانہ نظر کی ضرورت ہوتی ہے جو ہما و شما کے بس کی بات نہیں اور ایسے مواقع پر فیصلہ کرنے کے لیے بڑے تفقہ اور مجتہدانہ بصیرت کی ضرورت ہوتی ہے کہ نص کے تقاضے پر کھاں عمل کیا جائے گا اور کس طرح عمل کیا جائے گا- یہ تفقہ اور اجتہاد کی بات ہے-

(ب) سجدہ عبادت اور سجدہ تعظیم کا فرق بیان کرتے ہوئے مولانا عثمانی نے فرمایا:

“اگر کوئی شخس کسی قبر کو یا غیراللہ کو سجدہ کرے تو وہ قطعی طور پر کافر ہو جاتا ہے لیکن یہ ضروری نہیں کہ ہر سجدہ سجدہ عبادت ہی ہو جو شرک حقیقی اور شرک جلی ہے، بلکہ وہ سجدہ تحیت بھی ہو سکتا ہے جس کا مقصد دوسرے کی تعظیم کرنا ہوتا ہے اور ہی سجدہ تعظیمی شرک جلی کے حکم ہیں نہیں ہے- ہاں ہماری شریعت میں قطعا ناجائز ہے اور اس کے مرتکب کو سزا دی جا سکتی ہے، لیکن اس شخس کو مشرک قطعی کہنا اور اس کے قتل اور مال ضبط کرنے کو جائز قرار نہیں دیا جا سکتا- خود قرآن پاک میں حضرت آدم علیہ السلام کو فرشتوں کے سجدہ کرنے اور یوسف علیہ السلام کو ان کے بھائیوں اور والدین کے سجدہ کرنے کا ذکر موجود ہے اور مفسرین کی اظیم اکثریت نے اس سجدہ سے معروف سجدہ (زمین پر ماتھا رکھنا) ہی مراد لیا ہے اور پھر اس کو سجدہ تعظیمی ہی کرار دیا ہے- بہر حال اگر کوئی شخس کسی غیراللہ کو سجدہ تعظیمی کرے تو وہ ہماری شریعت کے مطابق گنہگار تو ہوگا، کیکن اسے مشرک، کافر اور مباح الدم و المال کرار نہیں دیا جاسکتا اور اس بیان سے میرا مقصد سجدہ تعظیمی کو جائز سمجھنے والوں کی وکالت کرنا نہیں بلکہ سجدہ عبادت اور سجدہ تعظیمی کے فرق کو بیان کرنا ہے-

رہا مسئلہ قبوں کے گرانے کا اگر ان کا بنانا صحیح نہ بھی ہو تو پم قبوں کو گرا دینا بھا صحیح نہیں سمجھتے- امیر المؤمنین ولید بن عبد الملک عبشمی (اموی) نے حاکم مدینہ عمر بن عبدالعزیز عبشمی کو حکم بھیجا کہ امہات المؤمنین کے حجرات مبارکہ کو گرا کر مسجد نبوی کی توسیع کی جائے – اور حضرت عمر بن عبدالعزیز عبشمی نے دوسرے حجرات کو گراتے ہوئے ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ زضی اللہ تعالی عنہا کا حجرہ بھی گرا دیا- جس سے حضور صلی اللہ علیہ وسلم، حضرت صدیق اکبر اور حضرت فاروق اعظم رضی اللہ عنہما کی قبریں ظاہر ہو گیئں تو اس وقت حضرت عمر بن عبدالعزیز اتنے روئے کہ ایسے روتے کبھی نہ دیکھے گیے تھے- حالانکہ حجرات کو گرانے کا حکم بھی خود ہی دیا تھا- پھر سیدہ عائشہ زضی اللہ عنہا کے حجرے کو دوبارہ تعمیر کرنے کا حکم دیا اور وہ حجرہ مبارکہ دوبارہ تعمیر کرنے کا حکم دیا اور وہ حجرہ مبارکہ تعمیر ہوا-

اس بیان سے میرا مقصد قبروں پر گنبد بنانے کی ترغیب دینا نہیں بلکہ یہ بتانا مقصود ہے کی قبر عاظم کے معاملے کو قلوب الناس میں تاثیر اور دخل ہے جو اس وقت حضرت عمر بن عبدالعزیز کے بے تہاشا رونے اور اس وقت عالم اسلام کی آپ سے ناراضگی سے ظاہر ہے-

(ج) حضرت عمر نے درخت کو اس خطرہ سے کٹوا دیا تھا کہ جاہل لوگ آئندہ چل کر اس درخت کی پوجا نہ شروع کردیں- بعیت رضوان 6 ہجری ہیں ہوئی تھی اور حضور الیہ السلام کا وسال پر ملال 11 ہجری ہیں ہوا- آپ کے بعد خلیفہ اول کے عہد خلافت کے اڑھائی سال بھی گزرے لیکن اس درخت کو کٹوانے کا نہ حضور الیہ السلام کو خیال آیا نہ صدیق اکبر کو- ان کے بعد حضرت عمر کی خلافت راشدہ قائم ہوئی- لیکن یہ بھی متعین نہیں ہے کہ حضرت عمر نے اپنی دس سالہ خلافت کے کونسے سال میں اس درخت کے کٹوانے کا ارادہ کیا- گو حضرت عمر کی صوابدید بلکل صحیح تھی لیکن یہ گنبد تو صدیوں سے بنے چلے آ رھے تھے اور اس چودھویں صدی میں بھی کوئی آدمی ان کی پرستش کرتا ہوا نہیں دیکھا گیا-

(ه) رہا وہاں نماز پڑھنا، تو حدیث معراج میں آتا ہے- کہ جبرائیل علیہ السلام نے حضور صلی علیہ وسلم کو چار جگہ براق سے اتر کر نماز پڑوائی- پھلے مدینہ میں اور بتایا کہ یہ جگہ آپ کی ہجرت کی ہے، دوسرے جبل طور پر کہ یھاں اللہ تعالی نے حضرت موسی علیہ السلام سے کلام فرمایا- پھر مسکن حضرت شعیب پر چوتھے بیت اللہم پر جھاں حضرت عیسی علیہ السلام کی ولادت ہوئی تھی- (نسائی شریف کتاب الصلاة ص٨٠ مطبع نظامی کانپور ١٢٩٦ھ)

  ١ پس اگر جبل طور پر حضور سے نماز پڑھوائی گئی کہ یہاں اللہ تعالی نے حضرت موسی علیہ السلام کے ساتھ کلام کیا تھا، تو جبل نور پر ہم کو نماز سے کیوں روکا جائے کہ جہاں اللہ تعالی کی پہلی وحی حضور الیہ السلام پر آئی تھی-

٢ مسکن شعیب پر حضور سے نماز پڑھوائی گئی تو کیا غضب ہو جائے گا جو ہم مسکن خدیجہ الکبرا رضی اللہ عنہا پر دو نفل پڑھ لیں جہاں حضور الیہ السلام نے اپنی مبارک زندگی کے اٹھائیس نورانی سال گزارے تھے-

٣ جب بیت اللہم مولد حضرت عیسی علیہ السلام پر حضور الیہ السلام سے دو رکعت پڑھوائی جائیں تو امت محمدیہ کیوں مولد نبی کریم پر دو رکعت پڑھنے سے روکی جائے طبرانی نے مقام مولد النبی صلی اللہ الیہ وسلم کو “انفس البقاع بعد المسجد الحرام فى” مکہ مکرمہ میں مسجد الحرام کے بعد مقام مولد النبی کریم علیہ السلام کو کائنات ارضی کا نفیس ترین ٹکڑاقرار دیا ہے-

٤. مسکن شعیب پر حضرت موسی علیہ السلام نے پناہ لی تھی، تو اس جگہ آپ سے دو رکعت نفل پڑھوائے گئے تو کونسی قیامت ٹوٹ پڑےگی جو ہم لوگ غار ثور جہاں حضور الیہ السلام نے تین دن پناہ لی تھی، دو نفک پڑھ لیں-

سلطان ابن سعود کا جواب

مولانا عثمانی رحمااللہ کے اس مفصل جواب سے شاہی دربار پر سناٹا چھاگیا- آخر سلطان ابن سعود نے یہ کہہ کر بات ختم کی کہ:

“میں آپ کا بہت ممنون ہوں اور آپ کے بیان اور خیالات میں بہت رفعت اور علمی بلندی ہے- لہاذا میں ان باتوں کا جواب نہیں دے سکتا- ان تفاصیل کا بہتر جواب ہمارے علماء ہی دے سکیں گے- ان سے  ہی یہ مسائل حل ہو سکتے ہیں-“