Category Archives: Urdu Articles

ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﺎﻥِ ﮨﻨﺪ ﮐﺮﻭ ﯾﺎ ﻣﺮﻭ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣیں 

آز: ﻓﻀﯿﻞ ﺍﺣﻤﺪ ﻧﺎﺻﺮﯼ

ﺁﺝ ﮐﻞ * ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ * ﺍﻭﺭ * ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ * ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺯﺑﺮﺩﺳﺖ ﻣﻈﺎﮨﺮﮮ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﻠﮏ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ، ﺑﻠﮑﮧ ﺑﯿﺮﻭﻥِ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ۔ ﮨﺮ ﺭﻭﺷﻦ ﺩﻣﺎﻍ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺐِ ﻭﻃﻦ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻈﺎﮨﺮﮮ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺷﺪﺕ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ : * ﺳﭩﯿﺰﻥ ﺍﻣﯿﻨﮉﻣﻨﭧ ﺑﻞ * ﮐﺎ ﻣﺨﻔﻒ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ : * ﺳﭩﯿﺰﻥ ﺍﻣﯿﻨﮉﻣﻨﭧ ﺍﯾﮑﭧ * ﮐﺎ ﻣﺨﺘﺼﺮ۔ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﻣﻌﻨﯽٰ ﮐﯽ ﺩﻭ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺗﻌﺒﯿﺮﺍﺕ ﮨﯿﮟ۔ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ * ﮐﯿﺐ * ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺳﯽ ﮐﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ * ﺷﮩﺮﯾﺖ ﺗﺮﻣﯿﻤﯽ ﻗﺎﻧﻮﻥ * ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﻮﺍﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻨﻈﻮﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺻﺪﺭ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﮧ ﮐﮯ ﺩﺳﺘﺨﻂ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﯾﮩﯽ ﺑﻞ * ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ * ﺗﮭﺎ، ﺍﻥ ﻣﺮﺍﺣﻞ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﯾﮩﯽ * ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ * ﺍﺏ * ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ * ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺣﮑﻮﻣﺖِ ﮨﻨﺪ ﮐﺎ ﻧﯿﺎ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮﺩﮦ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﺍﺳﯽ ﻣﺎﮦ ﮐﯽ 11 ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﻮ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﻮﺍﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺻﺪﺭ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﮧ ﮐﮯ ﺑﻼ ﺗﺎﺧﯿﺮ ﺩﺳﺘﺨﻂ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮦ ﻗﺎﻧﻮﻧﯽ ﺷﮑﻞ ﺑﮭﯽ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺑﻞ ﮐﯽ ﻣﻨﺸﺎ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻓﻐﺎﻧﺴﺘﺎﻥ، ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺶ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺁ ﮐﺮ ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ 2014 ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﭘﻨﺎﮦ ﮔﺰﯾﮟ ﮨﻮﺍ، ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺍﺳﮯ ﺷﮩﺮﯾﺖ ﺩﮮ ﮔﯽ۔ ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺭﻭ ﺳﮯ ﺍﻥ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﺳﮯ ﺁﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻨﺪﻭ، ﺟﯿﻦ، ﺑﺪﮪ، ﺳﮑﮫ، ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﺮ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﺷﮩﺮﯾﺖ ﭘﺎ ﺳﮑﮯ ﮔﺎ، ﺟﺲ ﮐﺎ ﮐﻠﻤﮧٔ ﻃﯿﺒﮧ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺎﺩﮦ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﻄﻠﺐ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺯﺩ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺳﺎﺭﮮ ﻟﻮﮒ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺟﻦ ﮐﺎ ﺍﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﺑﻄﮧ ﮨﮯ۔ ﻋﺮﺑﯽ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺑﻞ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﺭ ﺑﻨﯿﮟ ﮔﮯ، ﭼﻨﺎﮞ ﭼﮧ ﻓﻘﻂ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ، ﻗﺎﺩﯾﺎﻧﯽ، ﻣﮩﺪﻭﯼ، ﺷﮑﯿﻠﯽ، ﺷﯿﻌﮧ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﺎ ﮨﺘﮭﻮﮌﺍ ﭼﻠﮯ ﮔﺎ۔ ﯾﮧ ﺧﺎﻟﺺ ﻣﺘﻌﺼﺒﺎﻧﮧ ﺑﻞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﺭﻭﺡ ﮐﮯ ﻗﻄﻌﯽ ﻣﻐﺎﺋﺮ۔

* ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﯾﺎ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﯿﻮﮞ ﭘﯿﺶ ﺁﺋﯽ؟ *

ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺳﻮﺍﻝ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺳﯿﺎﮦ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺁﺧﺮ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﭘﯿﺶ ﺁﺋﯽ؟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺳﺎ ﮨﮯ * : ﺁﺳﺎﻡ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﯽ ﻧﺎﮐﺎﻣﯽ ﮐﻮ ﭼﮭﭙﺎﻧﺎ * ۔ ﯾﺎﺩ ﮨﻮﮔﺎ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺑﮭﺎﺟﭙﺎ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﯾﮧ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻋﺎﺋﺪ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺸﯽ ﺳﺮﺣﺪ ﺳﮯ ﺍﺗﺼﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﺁﺳﺎﻡ ﻣﯿﮟ * ﮔﮭﺲ ﭘﯿﭩﮭﯿﻮﮞ * ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﭘﻨﺎﮦ ﮔﺰﯾﮟ ﮨﮯ۔ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺩﯼ ﺟﺎﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﮔﮭﺲ ﭘﯿﭩﮭﯿﮯ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ۔ ﺍﻇﮩﺎﺭِ ﻧﻔﺮﺕ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﺳﺘﻌﺎﺭﮦ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﮯ ﭘﯿﺶِ ﻧﻈﺮ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﺎ ﻋﻤﻞ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﻋﻼﻣﯿﮯ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻭﮦ ﺳﺎﺭﮮ ﺁﺳﺎﻣﯽ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﺷﮩﺮﯼ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺟﻮ 24 ﻣﺎﺭﭺ 1971 ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﺁﺳﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎﺋﺶ ﭘﺬﯾﺮ ﮨﯿﮟ، ﻣﮕﺮ ﺟﺐ ﻗﻮﻣﯽ ﺭﺟﺴﭩﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﺭﺍﺝ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺧﻼﻑِ ﻗﯿﺎﺱ 1951 ﺗﮏ ﮐﮯ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﻣﺎﻧﮕﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺁﺑﺎ ﻭ ﺍﺟﺪﺍﺩ ﮐﯽ ﺗﻔﺼﯿﻼﺕ ﺑﮭﯽ۔ ﮐﻢ ﻋﻠﻢ ﺍﻭﺭ ﺟﺎﮨﻞ ﻋﻮﺍﻡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﺻﻮﺭﺕِ ﺣﺎﻝ ﺷﻮﺭﺵِ ﻣﺤﺸﺮ ﺳﮯ ﮐﻢ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ۔

ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ * ﻧﯿﺸﻨﻞ ﺭﺟﺴﭩﺮ ﺁﻑ ﺳﭩﯿﺰﻥ * ﮐﺎ ﻣﺨﻔﻒ ﮨﮯ، ﺟﺲ ﮐﺎ ﻣﻌﻨﯽٰ ﮨﮯ : * ﻗﻮﻣﯽ ﺷﮩﺮﯼ ﺭﺟﺴﭩﺮ * ۔ ﯾﮧ ﻋﻤﻞ ﺻﻮﺑﮧٔ ﺁﺳﺎﻡ ﻣﯿﮟ 2015 ﻣﯿﮟ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﺌﯽ ﻣﺮﺣﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺧﺘﺘﺎﻡ ﮐﻮ ﭘﮩﻮﻧﭽﺎ۔ ﺭﺟﺴﭩﺮ ﮐﯽ ﺁﺧﺮﯼ ﻓﮩﺮﺳﺖ ﺑﮭﯽ ﺟﺐ ﺑﺮﺁﻣﺪ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﻏﯿﺮ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﻣﻘﯿﻤﯿﻦ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ 19 ﻻﮐﮫ ﮐﻮ ﭘﮩﻮﻧﭻ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ 12 ﻻﮐﮫ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﮨﻨﺪﻭ ﮨﯽ ﻧﮑﻠﮯ، ﺟﺐ ﮐﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ 7 ﻻﮐﮫ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﻧﮧ ﺑﮍﮪ ﺳﮑﯽ۔ ﻣﻀﺤﮑﮧ ﺧﯿﺰ ﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﮐﮧ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺑﻖ ﺻﺪﺭ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﮧ ﻓﺨﺮﺍﻟﺪﯾﻦ ﻋﻠﯽ ﺍﺣﻤﺪ ﮐﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺷﮩﺮﯾﺖ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮧ ﮐﺮ ﺳﮑﯽ۔ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﺑﻖ ﻓﻮﺟﯽ ﺑﮭﯽ ﻏﯿﺮ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﻗﺮﺍﺭ ﭘﺎﺋﮯ۔ ﺍﺱ ﻓﮩﺮﺳﺖ ﻧﮯ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﻮﻧﮑﺎ ﮐﺮ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ ﺟﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﻣﺴﻠﻢ ﮔﮭﺲ ﭘﯿﭩﮭﯽ ﺑﮍﯼ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺑﻮﮐﮭﻼ ﮐﺮ ﭼﺎﺭﮦ ﺟﻮﺋﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺗﻮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﯿﻦ ﮨﯽ ﺯﺩ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﮐﺎ ﺟﻦ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻋﻤﻞ ﺟﻮ ﺻﺮﻑ ﺁﺳﺎﻡ ﮨﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺏ ﭘﻮﺭﮮ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﻔﺎﺫ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﯿﮟ۔

* ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﯾﺎ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ *

ﺭﻭﺍﮞ ﺳﺎﻝ ﮨﻮﺋﮯ ﻟﻮﮎ ﺳﺒﮭﺎ ﺍﻧﺘﺨﺎﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻌﮯ ﭘﺮ ﺍﻣﺖ ﺷﺎﮦ ﮐﺌﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺻﺎﻑ ﺻﺎﻑ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﺍﺳﮯ ﻻﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﺍﻥ ﺗﯿﻦ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﺳﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺟﺘﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﻏﯿﺮ ﻗﺎﻧﻮﻧﯽ ﭘﻨﺎﮦ ﮔﺰﯾﮟ ‏( ﺷﺮﻧﺎﺭﺗﮭﯽ ‏) ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ، ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺷﮩﺮﯾﺖ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﻧﺎﻓﺬ ﺍﻟﻌﻤﻞ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﻣﻄﻠﻮﺑﮧ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﺗﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻮﻧﭻ ﺳﮑﯿﮟ ﮔﮯ، ﺍﺳﮯ * ﮔﮭﺲ ﭘﯿﭩﮭﯿﺎ * ﯾﻌﻨﯽ ﻏﯿﺮ ﻗﺎﻧﻮﻧﯽ ﺭﮨﺎﺋﺸﯽ ﻣﺎﻥ ﮐﺮ ﮈﭨﯿﻨﺸﻦ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﻇﺎﮨﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﺻﺮﻑ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﻮﮔﺎ، ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﺷﮩﺮﯾﺖ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﺩﮮ ﺩﯼ ﺟﺎ ﭼﮑﯽ ﮨﻮﮔﯽ، ﺟﺐ ﮐﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﻣﺖ ﺷﺎﮦ ﮐﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﺷﺪﮦ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﯾﺴﯽ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺭﻋﺎﯾﺖ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ۔

* ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ *

ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﻮﻟﯽ ﺩﺍﻣﻦ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﮨﮯ۔ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﻻﯾﺎ ﮨﯽ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺁﻧﭻ ﻧﮧ ﺁﻧﮯ ﭘﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﮯ ﻣﺮﺍﺣﻞ ﺳﮯ ﺑﺂﺳﺎﻧﯽ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﺋﯿﮟ، ﺟﺐ ﮐﮧ ﻧﺎﻣﮑﻤﻞ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﻭﺍﻟﮯ ﯾﺎ ﺩﺳﺘﺎﻭﯾﺰ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮈﭨﯿﻨﺸﻦ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮔﺎ۔

ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﻗﻮﻣﯽ ﺷﮩﺮﯼ ﺭﺟﺴﭩﺮ۔ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﺎﻡ ﭘﺬﯾﺮ ﺳﺎﺭﮮ ﮨﯽ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﺳﮯ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﻣﺎﻧﮕﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﺻﺮﻑ ﺩﺳﺘﺎﻭﯾﺰ، ﺧﻮﺍﮦ ﻭﮦ ﻧﺌﯽ ﮨﻮ ﯾﺎ ﭘﺮﺍﻧﯽ، ﻣﮕﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﺭﺝ ﺫﯾﻞ ﺩﺳﺘﺎﻭﯾﺰﺍﺕ ﺿﺮﻭﺭ ﻃﻠﺐ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ :

ﺯﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﻣﻠﮑﯿﺖ ﮐﮯ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ
ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﺎ ﺳﺮﭨﯿﻔﮑﯿﭧ
ﮔﻮﺭﻧﻤﻨﭧ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺳﺮﭨﯿﻔﮑﯿﭧ
ﺑﯿﻨﮏ ﺍﮐﺎﺅﻧﭧ
ﻣﻼﺯﻣﺖ ﮐﮯ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ
ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺳﺮﭨﯿﻔﮑﯿﭧ
ﭘﺮﺍﻧﯽ ﻭﻭﭨﺮ ﻟﺴﭧ ﻭﻏﯿﺮﮦ

* ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺳﮯ ﭘﯿﺶ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﻘﺼﺎﻧﺎﺕ *

ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻧﺎﻗﺎﺑﻞِ ﻗﺒﻮﻝ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺣﻖ ﻣﯿﮟ ﺗﻠﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﯿﺰ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻝ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﺎﺭﯾﮏ ﮨﮯ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﮐﺜﺮﯾﺖ ﯾﮧ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻻﺋﮯ ﮔﯽ؟ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﺩﻭ ﻣﺎﮦ ﮐﯽ ﺩﺳﺘﺎﻭﯾﺰ ﺑﮍﯼ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﻣﻞ ﭘﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ 1951 ﺗﮏ ﮐﮯ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﺍﺳﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻞ ﺳﮑﯿﮟ ﮔﮯ؟ ﺁﺩﮬﺎﺭ ﮐﺎﺭﮈ ﺍﻭﺭ ﻭﻭﭨﺮ ﺁﺋﯽ ﮈﯼ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﻠﮯ ﮔﯽ۔ ﭘﯿﻦ ﮐﺎﺭﮈ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﻠﮯ ﮔﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﯾﮧ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﺭﺍﺟﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺧﺎﻣﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻏﺬ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﻣﻼ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ۔ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﻧﺠﺎﺕ ﭘﺎ ﺳﮑﮯ ﮔﯽ؟ ﺭﺷﻮﺕ ﮐﺎ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﮔﺮﻡ ﮨﻮﮔﺎ ﻭﮦ ﺍﻟﮓ۔

ﻣﻠﮏ ﮐﻮ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺳﮯ ﺟﻮ ﻧﻘﺼﺎﻧﺎﺕ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﻗﻄﻌﯽ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ۔ ﺁﺳﺎﻡ ﮐﮯ ﺗﯿﻦ ﮐﺮﻭﮌ ﺗﯿﺲ ﻻﮐﮫ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﯽ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺩﻭ ﮨﺰﺍﺭ ﮐﺮﻭﮌ ﺭﻭﭘﮯ ﺻﺮﻑ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺍﮔﺮ ﻧﺎﻓﺬ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﺍﺭﺏ ﺗﯿﺲ ﮐﺮﻭﮌ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻣﻌﺎﺷﯽ ﺗﻨﮕﯽ ﺳﮯ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﻣﻠﮏ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮔﺮﮮ ﮔﺎ ﮐﮧ ﺍﭨﮭﻨﺎ ﻣﺤﺎﻝ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﺭﮨﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻧﻘﺼﺎﻧﺎﺕ، ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺗﺼﻮﺭ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺭﻭﺡ ﮐﺎﻧﭗ ﺍﭨﮭﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﯾﮧ ﮨﻮﮔﺎ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﻧﺨﻮﺍﺳﺘﮧ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺩﮬﻮ ﺑﯿﭩﮭﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﻭﮦ ﺟﺐ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﮧ ﻣﻄﻠﻮﺑﮧ ﮐﺎﻏﺬﺍﺕ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻮﻟﯿﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﻇﺎﮨﺮ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﺭﺗﺪﺍﺩ ﮐﯽ ﺑﮭﯿﺎﻧﮏ ﻭﺑﺎ ﻣﻠﮏ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻞ ﭘﮍﮮ ﮔﯽ۔ ﺟﻦ ﺍﺻﺤﺎﺏِ ﻋﺰﯾﻤﺖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﮍﯼ ﮨﻮﮔﯽ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮈﭨﯿﻨﺸﻦ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ۔ ﯾﮧ ﮈﭨﯿﻨﺸﻦ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﮐﯿﺎ ﺑﻼ ﮨﮯ ! ﺍﯾﮏ ﺟﯿﻞ ﮨﮯ۔ ﺟﯽ ﮨﺎﮞ ! ﺟﯿﻞ۔ ﻣﺸﮑﻼﺕ ﺍﻭﺭ ﻋﻘﻮﺑﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ۔ ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﺳﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﻮﮔﯽ۔ ﮐﺴﻤﭙﺮﺳﯽ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻢ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﺗﻤﻨﺎﺋﯽ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﺍﺳﮯ ﻧﮧ ﺗﻮ ﻭﻭﭦ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﯽ ﺷﮩﺮﯼ ﻣﺮﺍﻋﺎﺕ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺟﺎﺋﯿﺪﺍﺩ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺿﺒﻂ ﮐﺮ ﻟﮯ ﮔﯽ۔ ﺣﺞ ﻋﻤﺮﮮ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﻨﺪ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺳﻔﺮ ﭘﺮ ﻣﮑﻤﻞ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﻟﮓ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺣﻘﻮﻕ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﺒﮧ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﺼﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﻏﺮﺽ ﯾﮧ ﮈﭨﯿﻨﺸﻦ ﺟﯿﻞ ﭨﯿﻨﺸﻦ ﺳﮯ ﺑﮭﺮ ﭘﻮﺭ ﺍﻭﺭ ﺗﻨﺎﺅ ﺳﮯ ﻣﻌﻤﻮﺭ ﮨﻮﮔﯽ۔

* ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ ﺳﯿﺎﮦ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮨﮯ *

ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﮨﺮ ﺭﻭﺷﻦ ﻧﻈﺮ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﯾﺎ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺍﮮ ﺳﯿﺎﮦ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﻘﺼﺎﻧﺎﺕ ﺩﻭﺭ ﺭﺱ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﮮ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﻦ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺑﺮﺍﮦِ ﺭﺍﺳﺖ ﺍﺛﺮ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﭘﺮ ﮨﯽ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ، ﻣﮕﺮ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﻮﺗﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﯽ۔ ﺁﮔﮯ ﭼﻞ ﮐﺮ ﺳﮑﮭﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺪﻑ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻋﯿﺴﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ۔ ﭘﮭﺮ ﺩﻟﺘﻮﮞ ﮐﻮ۔ ﺑﺎﺭﯼ ﺑﺎﺭﯼ ﺍﻥ ﺁﻓﺎﺕ ﺳﮯ ﺳﺒﮭﯽ ﮔﺰﺭﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺻﺮﻑ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮨﻮﺷﯿﺎﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﻣﻠﮏ ﮐﻮ ﮨﻨﺪﻭ ﺭﺍﺷﭩﺮ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺳﺎﺭﯼ ﺣﺪﻭﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺑﺮﺍﮦِ ﮐﺮﻡ ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺳﻨﮕﯿﻨﯽ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﯿﮟ۔ ﻣﻮﺕ ﺗﻮ ﮈﭨﻨﯿﺸﻦ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ، ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﮐﺮﺗﮯ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯽ ﻋﺰﺕ ﮐﯽ ﻣﻮﺕ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ !!

* ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮨﻤﺖ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺋﯽ؟ *

ﺑﮭﺎﺟﭙﺎﺋﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺁﺗﮯ ﮨﯽ ﺍﺳﻼﻡ ﭘﺮ ﺣﻤﻠﮯ ﻟﮕﺎﺗﺎﺭ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﺠﻮﻣﯽ ﺗﺸﺪﺩ ﺁﯾﺎ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺳﮍﮐﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﭼﻮﺭﺍﮨﻮﮞ ﭘﺮ ﻏﯿﺮ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﯿﮟ ﮔﺎﺟﺮ ﻣﻮﻟﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺿﺎﺋﻊ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺭﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﮐﺎﺭﺭﻭﺍﺋﯽ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﭼﻠﯽ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺭﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺭﮐﺎ ﺗﻮ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﻧﮯ ﻣﺴﺌﻠﮧٔ ﻃﻼﻕ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﺸﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﻟﯿﺎ۔ ﻟﻮﮎ ﺳﺒﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺟﯿﮧ ﺳﺒﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﺷﮑﺴﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁﺭ ﮈﯼ ﻧﯿﻨﺲ ﻻﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﯽ ﺭﮨﮯ۔ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﮐﯽ ﺩﻓﻌﮧ 370 ﺧﺘﻢ ﮐﺮ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ، ﺟﺲ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺸﻤﯿﺮﯾﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﯿﻨﺎ ﻋﺬﺍﺏ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻣﮩﺮ ﺑﻠﺐ ﺭﮨﮯ۔ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺑﮍﮬﺎ ﺗﻮ ﺑﺎﺑﺮﯼ ﻣﺴﺠﺪ ﮐﺎ ﻧﺎﻣﻌﻘﻮﻝ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺑﮭﯽ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺭﯼ ﻧﺎﻗﺎﺑﻞِ ﺷﮑﺴﺖ ﺩﻻﺋﻞ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻣﺴﺠﺪ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﺎﺗﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺑﯿﺪﺍﺭ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﮯ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﺳﺎﺭﮮ ﺍﻣﻮﺭ ﭘﺮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺑﻌﺾ ﺑﮍﻭﮞ ﻧﮯ ﮐﮭﻞ ﮐﺮ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﯽ ﺗﺎﺋﯿﺪ ﺑﮭﯽ ﮐﯽ۔ ﺟﺐ ﻟﮕﺎﺗﺎﺭ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﺍﻣﻮﺭ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﭘﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺑﮯ ﺣﺲ ﻭ ﺣﺮﮐﺖ ﭘﮍﮮ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺩﺷﻤﻨﺎﻥِ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﺑﮍﮬﺘﮯ ﻗﺪﻡ ﮐﯿﻮﮞ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﭩﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﺗﻮﻝ ﻟﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﻧﺎﻡ ﻟﯿﻮﺍ ﯾﮧ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﺟﮭﺎﮒ ﺑﻦ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺡ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﭼﯿﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﮐﺎﻡ ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺻﻔﺎﯾﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺑﻨﺪ ﻭ ﺑﺴﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﭘﻮﺭﮮ ﻋﺮﺻﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺣﺎﻟﺖ ﻓﺎﺭﻣﯽ ﻣﺮﻏﻮﮞ ﺟﯿﺴﯽ ﺭﮨﯽ، ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﻗﻌﮯ ﭘﺮ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮑﺎﻟﺘﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﻠﻖ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺻﺪﺍ ﺍﺳﯽ ﻭﻗﺖ ﻧﮑﻠﺘﯽ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺍﻥ ﭘﺮ ﭼﮭﺮﯾﺎﮞ ﭘﮭﯿﺮﯼ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ۔ ﺍﺏ ﺟﺐ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﺎﺅﮞ ﺍﭼﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻨﺪﮪ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﻧﺎﻣﯽ ﭼﮭﺮﯼ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮔﻠﮯ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭼﯿﺦ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺴﻠﻢ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﻧﯿﻨﺪ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﮯ ﮨﻮﺷﯽ ﮐﯽ !!!

* ﯾﮧ ﺟﻨﮓ ﮐﺎ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﺤﺎﺫ ﮨﮯ *

ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﺎﻥِ ﮨﻨﺪ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﺳﻼﻡ ﺩﺷﻤﻦ ﻋﻨﺎﺻﺮ ﮐﯽ ﺗﺤﺮﯾﮑﯿﮟ ﭼﻠﺘﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﺍﺏ ﺁﺧﺮﯼ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﻨﮓ ﮐﺎ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﺤﺎﺫ ﮨﮯ۔ ﮨﻢ ﮐﺮﻭ ﯾﺎ ﻣﺮﻭ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﺁﺝ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﻣﺤﺎﺫ ﭘﺮ ﺍﮨﻞِ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻧﮯ ﺯﻭﺭِ ﺑﺎﺯﻭ ﺍﻭﺭ ﺷﺠﺎﻋﺖ ﻭ ﺳﺮﻓﺮﻭﺷﯽ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﺸﺎﻥ ﺍﺱ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺻﻔﺤﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﭩﺎ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﻣﻘﺎﻡِ ﺷﮑﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮨﻞِ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﻃﺒﻘﮧ ﺧﻮﺍﺏِ ﻏﻔﻠﺖ ﺳﮯ ﺑﯿﺪﺍﺭ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺍﺣﺘﺠﺎﺟﺎﺕ ﺟﻮ ﺍﺏ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﺳﯽ ﺑﯿﺪﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﮐﯽ ﯾﮧ ﭼﻨﮕﺎﺭﯼ ﻃﻠﺒﮧٔ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﺳﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺋﯽ، ﭘﮭﺮ ﺟﺎﻣﻌﮧ ﻣﻠﯿﮧ ﺩﮨﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺷﻌﻠﮯ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﺍﭘﻨﺎ ﻟﯽ۔ ﯾﮩﯽ ﺷﻌﻠﮧ ﺟﺐ ﻣﺴﻠﻢ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻋﻠﯽ ﮔﮍﮪ ﭘﮩﻮﻧﭽﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺁﺗﺶ ﻓﺸﺎﮞ ﮐﺎ ﺭﻭﭖ ﺩﮬﺎﺭ ﻟﯿﺎ۔ ﺍﺏ ﯾﮧ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﯽ ﺁﮒ ﺑﻦ ﮐﺮ ﮐﺸﻤﯿﺮ ﺳﮯ ﮐﻨﯿﺎ ﮐﻤﺎﺭﯼ ﺗﮏ ﭘﮭﯿﻞ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﻮﺭﺍ ﻣﻠﮏ ﺳﺮﺍﭘﺎ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﻭ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺳﯿﺴﮧ ﭘﻼﺋﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ۔

ﻓﺎﺭﺳﯽ ﮐﺎ ﻣﻘﻮﻟﮧ ﮨﮯ : ﻋﺪﻭ ﺷﺮﮮ ﺑﺮ ﺍﻧﮕﯿﺰﺩ ﮐﮧ ﺧﯿﺮﮮ ﻣﺎﺩﺭﺍﮞ ﺑﺎﺷﺪ، ﺩﺷﻤﻦ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺒﮭﺎﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺷﺮ ﺍﺑﮭﺎﺭ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﯾﻖِ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺎﺅﮞ ﺟﯿﺴﯽ ﺧﯿﺮ ﭘﻮﺷﯿﺪﮦ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﮨﺰﺍﺭﮨﺎ ﺷﮑﺮ ﮐﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻭﮨﯽ ﮨﻮﺍ۔ ﻭﮦ ﮐﻠﻤﮧ ﮔﻮ ﺟﻮ ﮐﻞ ﺗﮏ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﺗﮭﮯ، ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺮﯾﻠﻮﯼ ﺗﮭﺎ، ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪﯼ۔ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻮﺩﻭﺩﯼ ﺗﮭﺎ، ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪ۔ ﺳﺐ ﻓﺮﻗﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﮈﻓﻠﯽ ﺑﺠﺎﻧﺎ ﺑﮭﻮﻝ ﭼﮑﮯ۔ ﺍﺏ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﻠﻤﮧ ﺧﻮﺍﮞ ﻓﻘﻂ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﺑﺎﮨﻢ ﺷﯿﺮ ﻭ ﺷﮏ۔ ﺍﺧﺘﻼﻓﺎﺕ ﺑﮭﻼ ﺩﯾﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﻧﻔﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﺗﻘﺮﯾﺮﻭﮞ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺍ۔ ﻓﺮﻗﮧ ﺑﻨﺪﯼ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭِ ﭼﯿﻦ ﮈﮬﺎ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ۔ ﺳﺐ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ۔ ﻣﺎﺿﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﮨﺰﺍﺭ ﮐﻮﺷﺸﯿﮟ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ، ﻣﮕﺮ ﺛﻤﺮ ﺁﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺳﮑﯿﮟ۔ ﻭﻗﺖ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﻣﺴﻠﻢ ﻓﺮﻗﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻭﺵ ﮐﮯ ﮨﯽ ﺍﯾﮏ ﺟﮭﻨﮉﮮ ﺗﻠﮯ ﺁ ﮔﺌﮯ۔

ﺍﻥ ﺍﺣﺘﺠﺎﺟﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﺷﺎﻥ ﺩﺍﺭ ﭘﮩﻠﻮ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﺎ ﮐﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﺎﻧﮧ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﺍﻣﺖ ﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﺗﻘﺮﯾﺮﯾﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺣﻖ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﯿﮟ، ﻣﮕﺮ ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﺣﺼﮧ ﺷﺎﮦ ﮐﮯ ﺟﮭﺎﻧﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﺖ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﻠﮑﯽ ﺁﺋﯿﻦ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺧﻮﺏ ﺻﻮﺭﺗﯽ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺤﺒﺖ ﻭ ﮨﻢ ﺁﮨﻨﮕﯽ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﻧﻔﺮﺕ ﻭ ﺗﻌﺼﺐ ﮐﮯ ﺑﺒﻮﻝ ﺍﮔﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺩ ﭘﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺭﮮ ﮐﺮ ﻭ ﻓﺮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ۔ ﺑﻨﮕﺎﻝ ﮐﯽ ﻭﺯﯾﺮِ ﺍﻋﻠﯽٰ ﻣﻤﺘﺎ ﺑﻨﺮﺟﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺟﺴﺘﮭﺎﻥ ﮐﮯ ﻭﺯﯾﺮِ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺍﺷﻮﮒ ﮔﮩﻠﻮﺕ ﺑﮭﯽ ﺭﯾﻠﯿﺎﮞ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺩﯾﮕﺮ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺟﻤﺎﻋﺘﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺑﺮ ﺳﺮِ ﭘﯿﮑﺎﺭ ﮨﯿﮟ۔ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﻧﮯ ﮨﺮ ﻣﻤﮑﻦ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﮧ ﺍﺳﮯ ﮨﻨﺪﻭ ﺑﻨﺎﻡ ﻣﺴﻠﻢ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻨﮩﺎ ﮐﺮ ﺩﮮ، ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻣﮩﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﮨﮯ۔ ﺑﮭﺎﺟﭙﺎ ﮐﯽ ﭼﺎﻝ ﺳﮯ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﺳﺎﺭﯼ ﺟﻤﺎﻋﺘﯿﮟ ﺩﻝ ﺟﻤﻌﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﺍﯾﻨﮉ ﮐﻤﭙﻨﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﺕ ﺳﮯ ﻧﺒﺮﺩ ﺁﺯﻣﺎ ﮨﯿﮟ۔ ﭘﻮﻟﯿﺲ ﮐﯽ ﻻﭨﮭﯿﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﮈﻧﮉﮮ ﮐﮭﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ، ﻣﮕﺮ ﭨﺲ ﺳﮯ ﻣﺲ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺭﮨﯿﮟ۔ ﺍﮔﺮ ﭼﮧ ﻣﻠﮏ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ 20 ﻣﻈﺎﮨﺮﯾﻦ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﯿﮟ ﺟﺎ ﭼﮑﯿﮟ۔ ﺳﯿﮑﮍﻭﮞ ﺯﺧﻤﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﻣﻘﺪﻣﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﺭﺝ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ، ﻣﮕﺮ ﻣﻈﺎﮨﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺁﮒ ﻣﺰﯾﺪ ﺷﺪﺕ ﭘﮑﮍ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﺧﻮﺵ ﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﯾﮧ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﻗﻮﻣﯽ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﮐﺮ ﺍﺏ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ۔ ﭼﻨﺎﮞ ﭼﮧ ﻣﻈﺎﮨﺮﮮ ﺻﺮﻑ ﺧﺎﮎِ ﮨﻨﺪ ﺗﮏ ﮨﯽ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﻧﮩﯿﮟ، ﻋﺎﻟﻤﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻣﯿﺪ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﮔﺰﺭﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ، ﺗﺎ ﺁﮞ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﯿﺎﮦ ﺑﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﻞ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﮔﮭﺲ ﺟﺎﺋﮯ۔

* ﺍﻭﺭ ﻗﺎﺋﺪﯾﻦ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﺟﺎﮔﮯ *

ﺍﺱ ﻗﻀﯿﮯ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﻧﺎﮎ ﭘﮩﻠﻮ ﯾﮧ ﺭﮨﺎ ﮐﮧ ﺑﻞ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﻣﺴﻠﻢ ﻗﺎﺋﺪﯾﻦ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﻮ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﭼﯿﻠﻨﺞ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﯾﻌﻨﯽ ﻭﮨﯽ ﺍﻓﯿﻮﻥ ﺯﺩﮦ ﻓﮑﺮ ﻭ ﺧﯿﺎﻝ۔ ﻭﮨﯽ ﻓﺮﺳﻮﺩﮦ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺴﯽ ﭘﭩﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ۔ ﺑﻌﺾ ﻗﺎﺋﺪﯾﻦ ﺗﻮ ﺻﺎﻑ ﺻﺎﻑ ﮐﮩﮧ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺑﻞ ﮐﺎ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻨﻈﯿﻢ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻟﯿﻨﺎ ﺩﯾﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﺣﻠﻘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻟﻤﺒﮯ ﭼﻮﮌﮮ ﺍﻟﻘﺎﺏ ﻭ ﺧﻄﺎﺑﺎﺕ ﻭﺍﻟﯽ ﺷﺨﺼﯿﺎﺕ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻑ ﺍﻭﮌﮪ ﮐﺮ ﺳﻮ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﺍﻟﻤﯿﮧ ﯾﮧ ﮐﮧ ﯾﺎ ﺗﻮ ﻗﺎﺋﺪﯾﻦ ﺍﺗﻨﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺷﻤﺎﺭ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ۔ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﮔﻢ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮧ ﮔﻮﯾﺎ ﮐﺒﮭﯽ ﺭﮨﮯ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﮐﺎﺑﺮِ ﺍﻣﺖ ﮐﯽ ﯾﮧ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺑﺮﺩﺍﺭ ﺑﺰ ﺩﻟﯽ ﺟﻮﺍﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﻋﯿﻦ ﺍﯾﺴﮯ ﻭﻗﺖ، ﺟﺐ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﻣﮩﺮﮮ ﺣﺠﺮﮦ ﻧﺸﯿﮟ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺟﻮﺵ ﭘﺮ ﺍﻭﺱ ﭘﮍ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ، ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﻨﺠﻮﮞ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﻘﻼﺏ ﮐﺎ ﺑﮕﻞ ﭘﮭﻮﻧﮏ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﺍﻧﻘﻼﺑﯽ ﺍﻗﺪﺍﻡ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﭘﮩﻮﻧﭽﺎﯾﺎ، ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﻭ ﺷﺎﻥِ ﻣﻮﻣﻨﺎﻧﮧ ﺳﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ ﻣﻮﮌ ﭘﺮ ﻟﮯ ﺁﺋﮯ ﮐﮧ ﻟﻮﮒ ﺟﺎﮒ ﮔﺌﮯ۔ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﺟﺎﮒ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﮐﺎﺑﺮ ﺑﮭﯽ ﺣﺎﻣﯽ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ۔ ﮐﺎﺵ ﮐﮧ ﺍﻣﺖ ﮐﮯ ﺑﮍﮮ ﻧﻮﺟﻮﺍﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﭨﮭﺘﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺟﺒﮧ ﻭ ﺩﺳﺘﺎﺭ ﺩﺍﻍ ﺩﮬﺒﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﺎﮎ ﺭﮨﺘﮯ۔ ﺍﺱ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﻟﮑﮭﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﻗﺎﺋﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﺗﻘﺪﯾﺲ ﮐﺎ ﺿﺮﻭﺭ ﻣﺬﺍﻕ ﺍﮌﺍﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﺧﺪﺍ ﮐﺮﮮ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺰ ﺩﻟﯽ ﺍﮔﻠﯽ ﻧﺴﻞ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮧ ﺩﯾﮑﮭﮯ۔

* ﺗﻀﺎﺩ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ ﺻﻔﺎﺋﯽ *

ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﺍﻭﺭ ﻟﮕﺎﺗﺎﺭ ﻣﻈﺎﮨﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺯﯾﺮِ ﺍﻋﻈﻢ ﻧﺮﯾﻨﺪﺭ ﻣﻮﺩﯼ ﺍﺏ ﻭﺿﺎﺣﺖ ﺩﯾﺘﮯ ﭘﮭﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﮐﺎ ﮨﻮﺍ ﺍﭘﻮﺯﯾﺸﻦ ﮐﺎ ﮐﮭﮍﺍ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻟﯿﻨﺎ ﺩﯾﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ، ﺟﺐ ﮐﮧ ﺍﻣﺖ ﺷﺎﮦ ﭘﺎﺭﻟﯿﻤﻨﭧ ﻣﯿﮟ ﺻﺎﻑ ﺻﺎﻑ ﮐﮩﮧ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺳﯽ ﺍﮮ ﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺁﺳﺎﻡ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﻮﮔﯽ۔ ﺑﮩﺎﺭ ﮐﮯ ﻭﺯﯾﺮِ ﺍﻋﻠﯽٰ ﻧﺘﯿﺶ ﮐﻤﺎﺭ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﻮﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻞ ﮐﯽ ﺣﻤﺎﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﭘﻮﺭﺍ ﺑﮩﺎﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺟﺎ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺏ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﻦ ﺁﺭ ﺳﯽ ﺑﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ۔ ﯾﮧ ﻣﺤﺾ ﺍﺑﻠﮧ ﻓﺮﯾﺒﯽ ﮨﮯ۔ ﻧﺘﯿﺶ ﮐﻤﺎﺭ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺻﻮﺑﮯ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻭﺯﯾﺮِ ﺍﻋﻠﯽٰ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻋﻮﮮ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺁﺝ ﮨﮯ، ﮐﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ۔ ﻻﺯﻣﺎً ﭘﮭﺮ ﻭﮨﯽ ﮨﻮﮔﺎ ﺟﻮ ﺷﺪﺕ ﭘﺴﻨﺪ ﭼﺎﮦ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮨﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ، ﭘﻮﺭﯼ ﻃﺎﻗﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﮑﻤﻞ ﺍﻣﻦ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ۔ ﯾﮧ ﻣﻈﺎﮨﺮﮮ ﺍﻣﻦ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮨﮯ ﺗﻮ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺯﺑﺮﺩﺳﺖ ﺗﺎﺭﯾﮑﯽ ﺿﺮﻭﺭ ﭼﺎﮎ ﮨﻮﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻃﻠﻮﻉِ ﺻﺒﺢ ﮐﯽ ﻧﻮﯾﺪ ﺟﻠﺪ ﮨﯽ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺩﮮ ﮔﯽ۔

ﭘﯿﺮﺍﻥ ﭘﯿﺮ ﮐﯽ ﺳﻮﺍﻧﺢ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﮐﺘﺎﺏ ﺑﮩﺠﺔ ﺍﻻﺳﺮﺍﺭ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ

ﻣﺎﺧﻮﺫ ﺍﺯ ﺑﺎﻭﺭﻫﺎﯼ ﺭﺍﺳﺘﯿﻦ ﺍﻫﻞ ﺳﻨﺖ ﻭ ﺟﻤﺎﻋﺖ

ﻋﻼﻣﻪ ‏« ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺫﻫﺒﯽ ‏» ﻣﺘﻮﻓﯽ 848 ﻫ . ﻕ . ‏« ﺑﻬﺠﺔ ﺍﻻﺳﺮﺍﺭ ‏» ﮐﮯ ﻣﺆﻟﻒ ‏« ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﻳﻮﺳﻒ ‏» ﺑﻦ ﺣﺮﻳﺰ ﻟﺨﻤﻲ ﺷﻄﻨﻮﻓﻲ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ :

‏« ﺣﻀﺮﺕ ﻣﺠﻠﺲ ﺇﻗﺮﺍﺋﻪ، ﻓﺄﻋﺠﺒﻨﻲ ﺳﻤﺘﻪ ﻭﺳﻜﻮﻧﻪ، ﻭﻛﺎﻥ ﺫﺍ ﻏﺮﺍﻡ ﺑﺎﻟﺸﻴﺦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺍﻟﺠﻴﻠﻲ . ﺟﻤﻊ ﺃﺧﺒﺎﺭﻩ ﻭﻣﻨﺎﻗﺒﻪ ﻓﻲ ﻧﺤﻮ ﻣﻦ ﺛﻼﺙ ﻣﺠﻠﺪﺍﺕ، ﻭﻛﺘﺐ ﻓﻴﻬﺎ ﻋﻤﻦ ﺃﻗﺒﻞ ﻭﺃﺩﺑﺮ، ﻓﺮﺍﺝ ﻋﻠﻴﻪ ﻓﻴﻬﺎ ﺣﻜﺎﻳﺎﺕ ﻛﺜﻴﺮﺓ ﻣﻜﺬﻭﺑﺔ . ‏»

‏« ﻣﯿﮟ ﺍُﻥ ﮐﯽ ﻣﺠﻠﺲ ﻗﺮﺍﺋﺖ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﻮﺍ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﻭﺭﺍﻧﮑﯽ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﺷﯿﺪﺍﺋﯽ ﺗﮭﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﮐﮯ ﻓﻀﺎﺋﻞ ﺗﯿﻦ ﺟﻠﺪﻭﮞ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻊ ﮐﺌﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﺷﻄﻨﻮﻓﻲ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﭼﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺍ، ﺻﺤﯿﺢ ﺍﻭﺭ ﻏﻠﻂ ﺳﺐ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺟﻤﻊ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ . ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﻪ ﺑﮭﺖ ﺳﯽ ﺟﮭﻮﭨﯽ ﺣﮑﺎﯾﺎﺕ ﺭﺍﺋﺞ ﻫﻮﮔﺌﯽ ﻫﯿﮟ ‏» .

‏( ﻣﻌﺮﻓﺔ ﺍﻟﻘﺮﺍﺀ ﺍﻟﻜﺒﺎﺭ ﻋﻠﻰ ﺍﻟﻄﺒﻘﺎﺕ ﻭﺍﻷﻋﺼﺎﺭ ﺍﻟﻤﺆﻟﻒ : ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺪﻳﻦ ﺃﺑﻮ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﻪ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﻗَﺎﻳْﻤﺎﺯ ﺍﻟﺬﻫﺒﻲ، ﻣﺘﻮﻓﻰ : 748 ﻫ . ﻕ . ﺍﻟﻨﺎﺷﺮ : ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻜﺘﺐ ﺍﻟﻌﻠﻤﻴﺔ ﭼﺎﭖ ﺍﻭﻝ 1417 ﻫ ـ 1997 ﺀ .
ﺍﯾﻀﺎ : ﻏﺎﻳﺔ ﺍﻟﻨﻬﺎﻳﺔ ﻓﻲ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﺍﻟﻘﺮﺍﺀ : 1/585 ، ﺷﻤﺲ ﺍﻟﺪﻳﻦ ﺃﺑﻮ ﺍﻟﺨﻴﺮ ﺍﺑﻦ ﺍﻟﺠﺰﺭﻱ، ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﻳﻮﺳﻒ، ﻣﺘﻮﻓﺎﻯ : 833 ﻫ . ﻕ . ﺍﻧﺘﺸﺎﺭﺍﺕ ﻣﻜﺘﺒﺔ ﺍﺑﻦ ﺗﻴﻤﻴﺔ،ﺍﺷﺎﻋﺖ ﺍﻭﻝ 1351 ﻫـ ﺝ . ‏)

ﻧﯿﺰ ﺣﺎﻓﻆ ﺫﻫﺒﯽ ﺭﺣﻤﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﯽ ‏« ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺍﻻﺳﻼﻡ ‏» ﻣﯿﮟ ﻟﮑﻬﺘﮯ ﮨﯿں:

‏« ﻛَﺎﻥَ ﺍﻟﺸَّﻴْﺦ ‏( ﺍﻟﺠﯿﻼﻧﯽ ‏) ﺭَﺿِﻲَ ﺍﻟﻠَّﻪُ ﻋَﻨْﻪُ ﻋﺪﻳﻢ ﺍﻟﻨّﻈﻴﺮ، ﺑﻌﻴﺪ ﺍﻟﺼِّﻴﺖ، ﺭﺃﺳﺎ ﻓِﻲ ﺍﻟﻌِﻠْﻢ ﻭﺍﻟﻌﻤﻞ . ﺟﻤﻊ ﺍﻟﺸَّﻴْﺦ ﻧﻮﺭ ﺍﻟﺪّﻳﻦ ﺍﻟﺸَّﻄَﻨُﻮﻓﻲَّ ﺍﻟﻤﻘﺮﺉ ﻛﺘﺎﺑﺎ ﺣﺎﻓﻼ ﻓِﻲ ﺳﻴﺮﺗﻪ ﻭﺃﺧﺒﺎﺭﻩ ﻓِﻲ ﺛﻼﺙ ﻣﺠﻠّﺪﺍﺕ، ﺃﺗﻰ ﻓِﻴﻪِ ﺑﺎﻟﺒَﺮَّﺓ ﻭﺃُﺫُﻥ ﺍﻟْﺠَﺮَّﺓِ، ﻭﺑﺎﻟﺼّﺤﻴﺢ ﻭﺍﻟﻮﺍﻫﻲ ﻭﺍﻟﻤﻜﺬﻭﺏ، ﻓﺈﻧّﻪ ﻛﺘﺐ ﻓِﻴﻪِ ﺣﻜﺎﻳﺎﺕٍ ﻋَﻦْ ﻗﻮﻡٍ ﻻ ﺻِﺪْﻕ ﻟﻬﻢ . ‏»

‏« ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺭﺣﻤﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﯽ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﺑﮯﻣﺜﺎﻝ، ﺍﻭﺭﻣﺸﻬﻮﺭﺗﮭﯽ، ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﻋﻠﻢ ﻭ ﻋﻤﻞ ﮐﮯﺷﺎﮬﺴﻮﺍﺭﺗﮭﮯ . ﺷﯿﺦ ﻧﻮﺭ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻣﻘﺮﯼ ﻧﮯ ﺍُﻧﮑﯽ ﺳﯿﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﺣﻮﺍﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺮﯼ ﺗﯿﻦ ﺟﻠﺪﻭﮞ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮑﻬﯽ ﻫﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﭼﻬﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﯼ، ﻭ ﺻﺤﯿﺢ، ﻭﺍﻫﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺫﮐﺮ ﮐﯽ ﻫﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻧﮯ ‏« ﺑﻬﺠﺔ ﺍﻻﺳﺮﺍﺭ ‏» ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺭﺍﻭﯾﻮﮞ ﺳﮯﺣﮑﺎﯾﺎﺕ ﻧﻘﻞ ﮐﯽ ﻫﯿﮟ ﺟﻮ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﺗﮭﮯ ‏»

‏( ﺗﺎﺭﻳﺦ ﺍﻹﺳﻼﻡ ﻭَﻭَﻓﻴﺎﺕ ﺍﻟﻤﺸﺎﻫﻴﺮ ﻭَﺍﻷﻋﻼﻡ : 12/254 ، ﻣﺤﻘﻖ : ﺍﻟﺪﻛﺘﻮﺭ ﺑﺸﺎﺭ ﻋﻮّﺍﺩ ﻣﻌﺮﻭﻑ، ﺍﻟﻨﺎﺷﺮ : ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻐﺮﺏ ﺍﻹﺳﻼﻣﻲ، ﺍﻟﻄﺒﻌﺔ : ﺍﻷﻭﻟﻰ، 2003 ِﻡ ‏)

ﻋﻼﻣﻪ ‏« ﺍﺑﻦ ﺣﺠﺮ ﻋﺴﻘﻼﻧﯽ ‏» ﺭﺣﻤﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻟﮑﻬﺘﮯ ﻫﯿﮟ :

‏« ﻭَﺟﻤﻊ ﻫُﻮَ ﻣَﻨَﺎﻗِﺐ ﺍﻟﺸَّﻴْﺦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟْﻘَﺎﺩِﺭ ﻭﺳﻤﻰ ﺍﻟْﻜﺘﺎﺏ ﺍﻟْﺒَﻬْﺠَﺔ ﻗَﺎﻝَ ﺍﻟْﻜَﻤَﺎﻝ ﺟَﻌْﻔَﺮ ﻭَﺫﻛﺮ ﻓِﻴﻬَﺎ ﻏﺮﺍﺋﺐ ﻭﻋﺠﺎﺋﺐ ﻭَﻃﻌﻦ ﺍﻟﻨَّﺎﺱ ﻓِﻲ ﻛﺜﻴﺮ ﻣﻦ ﺣﻜﺎﻳﺎﺗﻪ ﻭَﻣِﻦ ﺃﺳﺎﻧﻴﺪﻩ ﻓِﻴﻬَﺎ . ‏»

‏« ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻧﮯ ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻘﺎﺭ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺭﺣﻤﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﻣﻨﺎﻗﺐ ﺟﻤﻊ ﮐﺌﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ‏« ﺑﻬﺠﺔ ‏» ﺭﮐﻬﺎ ﻫﮯ ﮐﻤﺎﻝ ﺟﻌﻔﺮ ﻧﮯ ﮐﻬﺎ ﻫﮯ ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﯼ ﻋﺠﯿﺐ ﻭﻏﺮﯾﺐ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺫﮐﺮ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﯽ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﺩﮦ ﺍﮐﺜﺮ ﺣﮑﺎﯾﺘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﻨﺎﺩ ﭘﺮ ﺟﺮﺡ ﮐﯽ ﮨﮯ۔

‏( ﺍﻟﺪﺭﺭ ﺍﻟﻜﺎﻣﻨﺔ ﻓﻲ ﺃﻋﻴﺎﻥ ﺍﻟﻤﺎﺋﺔ ﺍﻟﺜﺎﻣﻨﺔ، ﺃﺑﻮ ﺍﻟﻔﻀﻞ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﺣﺠﺮ ﺍﻟﻌﺴﻘﻼﻧﻲ، ﻣﺘﻮﻓﺎﻯ : 852 ﻫ . ﻕ . ﺗﺤﻘﯿﻖ : ﻣﺮﺍﻗﺒﺔ / ﻣﺤﻤﺪ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻤﻌﻴﺪ ﺿﺎﻥ، ﺍﻧﺘﺸﺎﺭﺍﺕ ﻣﺠﻠﺲ ﺩﺍﺋﺮﺓ ﺍﻟﻤﻌﺎﺭﻑ ﻋﺜﻤﺎﻧﻴﺔ – ﺣﻴﺪﺭ ﺍﺑﺎﺩ / ﻫﻨﺪ، ﭼﺎﭖ ﺩﻭﻡ، 1392 ﻫ / 1972 ﻡ . ﻫﻤﭽﻨﯿﻦ ﺭ . ﮎ : ﺍﻷﻋﻼﻡ ﻟﻠﺰﺭﮐﻠﯽ : 5/34 ﺍﻧﺘﺸﺎﺭﺍﺕ ﺩﺍﺭ ﺍﻟﻌﻠﻢ ﻟﻠﻤﻼﻳﻴﻦ ﺍﺷﺎﻋﺖ ﭘﺎﻧﺰﺩﻫﻢ 2002 ﻡ . ‏)

ﻋﻼﻣﻪ ﻣﺼﻄﻔﻰ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﻪ ﻗُﺴﻄﻨﻄﻴﻨﻲ ﻟﮑﻬﺘﮯ ﻫﯿﮟ :
‏« ﺟﻤﻊ ﺍﻟﺸﻴﺦ ﺃﺑﻮ ﺍﻟﺤﺴﻦ، ﺍﻟﻤﻘﺮﻱ، ﺍﻟﺸﻄﻨﻮﺣﻲ، ﺍﻟﻤﺼﺮﻱ، ﻓﻲ ﺃﺧﺒﺎﺭﻩ، ﻭﻣﻨﺎﻗﺒﻪ ﺛﻼﺛﺔ ﻣﺠﻠﺪﺍﺕ ﻭﻓﻴﻪ ﻣﻦ ﺍﻟﺸﻄﺢ، ﻭﺍﻟﻄﺎﻣﺎﺕ، ﻭﺍﻷﺑﺎﻃﻴﻞ، ﻣﺎ ﻻ ﻳﺤﺼﻰ ﻭﺫﻛﺮ ﺍﻷﻓﻮﺩﯼ ﺃﻧﻪ ﻣﺘﻬﻢ ﺑﻬﺎ . ‏»

‏« ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻧﮯ ﺷﯿﺦ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﭘﺮ ﺗﯿﻦ ﺟﻠﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮑﮭﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺷﻄﺤﯿﺎﺕ، ﻃﺎﻣﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﻮﭨﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺃﻓﻮﺩﯼ ﻧﮯ ﺫﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻣُﺘّﮩَﻢ ‏( ﺟﮭﻮﭨﺎ ‏) ﮨﮯ۔

‏( ﻛﺸﻒ ﺍﻟﻈﻨﻮﻥ ﻋﻦ ﺃﺳﺎﻣﻲ ﺍﻟﻜﺘﺐ ﻭﺍﻟﻔﻨﻮﻥ، ﻣﺼﻄﻔﻰ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﻪ ﻛﺎﺗﺐ ﺟﻠﺒﻲ ﺍﻟﻘﺴﻄﻨﻄﻴﻨﻲ ﻣﺸﻬﻮﺭ ﺑﻪ ﺍﺳﻢ ﺣﺎﺟﻲ ﺧﻠﻴﻔﺔ ﯾﺎ ﺣﺎﺝ ﺧﻠﻴﻔﺔ، ﻣﺘﻮﻓﺎﻯ 1067 ﻫ . ﻕ . ﺍﻧﺘﺸﺎﺭﺍﺕ ﻣﻜﺘﺒﺔ ﺍﻟﻤﺜﻨﻰ – ﺑﻐﺪﺍﺩ ، 1941 ﻡ ‏) ﺑﺎﺏ ﻣﻨﺎﻗﺐ ﺍﻟﺸﻴﺦ : ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺍﻟﻜﻴﻼﻧﻲ ‏)

ﺣﺎﻓﻆ ﺍﺑﻦ ﺭﺟﺐ ﺣﻨﺒﻠﯽ ﺭﺣﻤﺔ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﻣﺘﻮﻓﯽ 795 ﻫ . ﻕ . ﻟﮑﻬﺘﮯ ﻫﯿﮟ :

‏« ﻗﺪ ﺟﻤﻊ ﺍﻟﻤﻘﺮﻯﺀ ﺃَﺑُﻮ ﺍﻟﺤﺴﻦ ﺍﻟﺸﻄﻨﻮﻓﻲ ﺍﻟﻤﺼﺮﻱ، ﻓﻲ ﺃﺧﺒﺎﺭ ﺍﻟﺸﻴﺦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﻭﻣﻨﺎﻗﺒﻪ ﺛﻼﺙ ﻣﺠﻠﺪﺍﺕ، ﻭﻛﺘﺐ ﻓﻴﻬﺎ ﺍﻟﻄﻢ ﻭﺍﻟﺮﻡ، ﻭﻛﻔﻰ ﺑﺎﻟﻤﺮﺀ ﻛﺬﺑﺎ ﺃﻥ ﻳﺤﺪﺙ ﺑﻜﻞ ﻣﺎ ﺳﻤﻊ . ﻭﻗﺪ ﺭﺃﻳﺖ ﺑﻌﺾ ﻫﺬﺍ ﺍﻟﻜﺘﺎﺏ، ﻭﻻ ﻳﻄﻴﺐ ﻋﻠﻰ ﻗﻠﺒﻲ ﺃﻥ ﺃﻋﺘﻤﺪ ﻋﻠﻰ ﺷﻲﺀ ﻣﻤﺎ ﻓﻴﻪ، ﻓﺄﻧﻘﻞ ﻣﻨﻪ ﺇﻻ ﻣﺎ ﻛﺎﻥ ﻣﺸﻬﻮﺭﺍ ﻣﻌﺮﻭﻓﺎ ﻣﻦ ﻏﻴﺮ ﻫﺬﺍ ﺍﻟﻜﺘﺎﺏ، ﻭﺫﻟﻚ ﻟﻜﺜﺮﺓ ﻣﺎ ﻓﻴﻪ ﻣﻦ ﺍﻟﺮﻭﺍﻳﺔ ﻋﻦ ﺍﻟﻤﺠﻬﻮﻟﻴﻦ، ﻭﻓﻴﻪ ﻣﻦ ﺍﻟﺸﻄﺢ، ﻭﺍﻟﻄﺎﻣﺎﺕ، ﻭﺍﻟﺪﻋﺎﻭﻯ ﻭﺍﻟﻜﻼﻡ ﺍﻟﺒﺎﻃﻞ، ﻣﺎ ﻻ ﻳﺤﺼﻰ ﻭﻻ ﻳﻠﻴﻖ ﻧﺴﺒﺔ ﻣﺜﻞ ﺫﻟﻚ ﺇﻟﻰ ﺍﻟﺸﻴﺦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺭﺣﻤﻪ ﺍﻟﻠﻪ . ﺛﻢ ﻭﺟﺪﺕ ﺍﻟﻜﻤﺎﻝ ﺟﻌﻔﺮ ﺍﻷﺩﻓﻮﻱ ﻗﺪ ﺫﻛﺮ : ﺃﻥ ﺍﻟﺸﻄﻨﻮﻓﻲ ﻧﻔﺴﻪ ﻛﺎﻥ ﻣﺘﻬﻤﺎ ﻓﻴﻤﺎ ﻳﺤﻜﻴﻪ ﻓﻲ ﻫﺬﺍ ﺍﻟﻜﺘﺎﺏ ﺑﻌﻴﻨﻪ . ‏»

‏« ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻧﮯ ﺷﯿﺦ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﭘﺮ ﺗﯿﻦ ﺟﻠﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮑﮭﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺭﻃﺐ ﻭ ﯾﺎﺑﺲ ﮐﺎ ﻃﻮﻣﺎﺭ ﺑﺎﻧﺪﮬﺎ ﮨﮯ۔ ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﮐﺴﯽ ﺁﺩﻣﯽ ﮐﮯ ﺟﮭﻮﭨﺎ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﮨﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮨﺮ ﺳﻨﯽ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺁﮔﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﺩﮮ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﮯ ﺑﻌﺾ ﻣﻨﺪﺭﺟﺎﺕ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﻔﺲ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﺬﮐﻮﺭ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﭘﺮﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﮐﺮﺳﮑﻮﮞ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻭّﻝ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮩﻮﻝ ﺭﺍﻭﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﻟﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﮐﺬﺏ ﻭ ﺍﻓﺘﺮﺍ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﻮﭦ ﮐﮯ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﭘﻠﻨﺪﮮ ﮨﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﺟﮭﻮﭨﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺷﯿﺦ ﺟﯿﻼﻧﯽ ؒ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﯿﺦ ﺟﯿﻼﻧﯽ ؒ ﮐﮯ ﺷﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻨﺎﻓﯽ ﮨﮯ۔ ﻋﻼﻭﮦ ﺍﺯﯾﮟ ﺷﯿﺦ ﺍﻟﮑﻤﺎﻝ ﺟﻌﻔﺮ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺱ ﮐﺘﺎﺏ ﺑﮩﺠۃ ﺍﻻٔﺳﺮﺍﺭﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ، ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﻄﻨﻮﻓﯽ ﻣُﺘّﮩَﻢ ﮨﮯ۔ ﯾﻌﻨﯽ ‏( ﺟﮭﻮﭨﺎ ‏) ﻫﮯ۔
ِ

‏( ﺫﻳﻞ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﺍﻟﺤﻨﺎﺑﻠﺔ، ﺍﺑﻦ ﺭﺟﺐ ﺣﻨﺒﻠﯽ : 2/194 ﻭ 195 ، ﺍﻧﺘﺸﺎﺭﺍﺕ ﻣﻜﺘﺒﺔ ﺍﻟﻌﺒﻴﻜﺎﻥ – ﺭﻳﺎﺽ، ﻃﺒﻊ ﺍﻭﻝ : 1425 ﻫ . 2005 ﻡ ‏)

مولانا رشید احمد گنگوہی رحمہ اﷲ کے شجرہ نسب پر اعتراض کا تحقیقی جواب

ایک جاہل رضاخانی کی طرف سے یہ اعتراض کیا گيا ہے کہ مولانا رشید احمد گنگوہی رحمة اللہ علیہ کے نسب میں قاضی پیر بخش (والد کی طرف سے ) اور فرید بخش (والدہ کی طرف سے) کے نام آتے ہیں اور شاہ اسمعیل شہید رحمة اللہ علیہ نے ايسے نام رکھنے والے مسلمانوں کو شرک میں مبتلا ہونے کو کہا ہے۔۔لہٰذا حضرت گنگوہی صاحب کے دادا اور نانا مشرک ہوئے اور وہ نجیب الطرفین ایوبی نہ ہوئے اس لئے ان کا شجرہ بچانے کیلئے تقویة الایمان سے بیزاری ضروری ہے۔(محصلہ)

جواب

دراصل یہ اعتراض رضاخانی مذہب کے حکیم الامت مفتی احمد یار گجراتی نے اپنی کتاب جاء الحق اور مولوی نصیر الدین سیالوی نے بھی اپنی کتاب میں کیا ہے موصو ف نے بغير حوالہ دئے ان کا مواد سرقہ کیا ہے اور پھر اس کو اپنے نام سے شائع کردیا پھر اس پر لاف و گزاف بھی کرتے ہیں۔۔تف ہے ایسی دیانت پر۔ مناسب معلوم ہوتا ہے کہ ہم خود اس مذہب کے حکیم الامت کی عبارت آپ کے سامنے نقل کردیں تاکہ ان کی ذہنی پستی کا بھی آپ لوگوں کو اندازہ ہوجائے اور اس کے بعد تفصیلی جواب ملاحظہ فرمائیں۔

لطیفہ: تقویة الایمان میں علی بخش پیر بخش غلام علی مدار بخش عبد النبی نام رکھنے کوشرک کہا مگر تذکرة الرشید حصہ اول ص ۳۱ میں رشید احمد صاحب کا شجرہ نسب یوں ہے مولانا رشید احمد بن مولانا ہدایت ابن قاضی پیر بخش ابن غلام حسين ابن غلام علی ۔اور ماں کی طرف سے نسب نامہ یوں لکھا ہے رشید احمد ابن کریم النساء بنت فرید بخش ابن غلام قادر ابن محمد صالح ابم غلام محمد ۔دیو بندی بتائیں کہ مولوی رشید احمد صاحب کے خاندانی بزرگ مشرک مرتد تھے یا نہیں؟ اگر نہیں تو کیاں؟ اگر تھے تو مرتد کی اولاد حلالی ہے یا حرامی۔﴾جاءالحق ص ۷۸۳﴿

جواب

لاحول ولا قوة الا بااللہ شیطان اور اس کی اولاد سے پناہ ۔۔مفتی احمد یار گجراتی کی ذريت خبیثہ سے ہماراسوال ہے کہ اگر ماں باپ یا دادا نانا کے مشرک اور کافر ہونے سے اولاد حرامی ہوجاتی ہے تو امام بخاری رحمة اللہ علیہ پر کیا فتوی ہے ۔۔؟؟؟

امام بخاری رحمة اللہ علیہ کا شجرہ نسب

ابو عبد اللہ البخاری محمد بن اسمعیل بن ابراہیم بن المغیرة بن بردزبہ

بردزبہ کے بارے میں ابن حجر رحمة اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ وہ ”پارسی “ مجوسی تھے۔۔﴾سیر اعلام النبلاءج ۲۱ص ۱۹۳﴿

بریلویوں لگاؤ امام بخاری پر فتوی کہ معاذ اللہ معاذ اللہ وہ بھی ثابت النسب اور حلالی نہ تھے ۔۔۔۔ہے اتنی ہمت ۔۔۔؟؟؟؟

پیر مہر علی شاہ گولڑوی مرحوم کا شجرہ نسب

قارئین مولوی احمد رضاخان اپنی کتاب ”احکام شريعت“میں لکھتا ہے کہ :

نظام الدین محی الدین تاج الدین اور اسی طرح وہ تمام نام جن میں مسمی کا معظم فی الدین ہونا نکلے جیسے شمس الدین بدر الدین نور الدین فخر الدین شمس الاسلام محی الاسلام بدر الاسلام وغیرہ ذالک سب کو علمائے کرام نے سخت ناپسندیدہ رکھا اور مکروہ و ممنوع رکھا ۔﴾احکام شريعت ،ص ۸۹﴿

اب ذار پیر مہر علی شاہ صاحب کا شجرہ نسب بھی ملاحظہ فرمالیں:

سید مہر علی شاہ ابن سید نذر دین شاہ ابن سید غلام شاہ ابن سید روشن دین ابن سید عبد الرحمن نوری ابن سید عنایت اللہ ابن سید غياث علی ابن سید فتح اللہ ابن سید اسد اللہ ابن سید فخرالدین۔۔۔۔۔

اور پھر آگے چل کر تاج الدین۔۔اوروالدہ کی طرف سے نسب میں سيد صدر الدین کا نام آتا ہے۔۔

اب ہمارا سوال یہ ہے کہ احمد رضا خان نے اسکو سخت ناپسند مکروہ کہا اور مطلق مکروہ حرام پر بولا جاتا ہے ۔۔تو کیا پیر صاحب کے آباوؤ اجداد نے ایک حرام کام کو حلال سمجھ کر کیا اور کیا حرام کو حلال سمجھنے والے مسلمان ہوسکتے ہیں۔۔۔؟؟؟ اگر ہاں تو کیسے؟ ۔۔اگر نہیں تو پیر صاحب کے نسب کے بارے میں کیا فتوی ہے کہ آیا وہ معاذ اللہ حلالی رہے یا حرامی۔۔۔؟؟؟ ان کے آباؤ اجداد فاسق فاجر تھے یا مشرک؟۔۔۔اور کافر یا مسلمان؟۔۔۔

بریلویوں ۔۔اب بتاؤ پیر صاحب کو نجيب الطرفين سيد ثابت کرنے کیلئے احمد رضاخان کی کتابوں پر تين حرف بھيجنے پڑيں گے یا نہیں؟

احمد رضاخان کا فتوی اور بریلوی ملاں کے ماں باپ کا ایمان

اسی احکام شريعت میں احمد رضاخان لکھتا ہے کہ:

لوگوں سے دیکھئے کیا اپنی اولاد کانام شیطان ملعون رافضی خبيث خوک وغيرہ رکھنا گوارا کریں گے ؟ہرگز نہیں تو قطعا معنی اصلی کی طرف لحاظ باقی ہے پھر کس منہ سے اپنے آپ اور اپنی اولاد کو نبی کہلواتے ہیں کیا کوئی مسلمان اپنا یا اپنے بيٹے کا نام رسول اللہ خاتم النبيين یا سید المرسلین نام رکھنا روا رکھے گا؟حاشا و کلا۔پھر محمد نبی، احمد نبی ،نبی احمد کیونکر روا ہوگيا یہاں تک کہ بعض خدا نا ترسوں کا نام نبی اللہ سنا ہے۔لاحول ولا قوة الا باللہ العلی العظیم ۔کیا رسالت و ختم نبوت کا ادعاءحرام ہے اور نری نبوت کا حلال؟ مسلمانوں پر لازم ہے کہ ایسے ناموں کو تبدیل کردیں۔﴾احکام شريعت ،ص ۴۹،۵۹﴿

اس عبارت سے معلوم ہوا نبی احمد نام رکھنا حرام ہے اس کا تبدیلی کرنا ضروری ہے یہ نام رکھنا گويا نبوت کا دعوی کرنا ہے ۔۔

اب اٹھاؤ عبد اؒلحکیم شرف قادری کی کتاب ”تذکرہ اکابر اہلسنت “ کھولو اس کاص ۲۵ جس پر اس نے اپنی جماعت کے ایک بزرگ کا تعارف دیا ہے جس کانام

خواجہ نبی احمد

بریلوی جاہل معترضین بتائيں کہ کیا نبی احمد کے والدین نے اپنے بيٹے کیلئے نبوت کے دعوے کو پسند کیا۔۔؟؟؟کیا انھوں نے حضور ﷺ کی نام کی توہین نہ کی۔۔؟؟؟اگر نہیں تو کیسے ۔۔؟؟ اگر ہاں تو کیا نبی احمد صاحب کے والدین مسلمان رہے۔۔؟؟؟اور بدون تجدید ایمان و نکاح ان کی ہمبستری زنا خالص اور اولاد ولد الحرام ہوئی یا نہ ہوئی۔۔۔؟؟؟

یا تو جواب ہاں میں دو یا اپنے مولویوں اور ان کے والدین کو حلالی اور مسلمان ثابت کرنے کیلئے احمد رضاخان کی کتاب پر لعنت بھیجو اورآپ ہی کی زبان میں

غرض دو گونہ عذاب است جان مجنوں را

بلائے صحبت لیلےٰ و فرقت لیلےٰ

بریلوی ہمارے سوال کا جواب دیں

اگر ماں باپ یا دادا نانا کے مشرک ہونے سے اولاد حرامی ہوجاتی ہے جیسا کہ احمد یار گجراتی نے کہا تو ان صحابہ کرام رضی اللہ تعالی عنہم اجمعین پر کیا فتوی ہے جن کے ماں باپ مشرک تھے۔۔۔؟؟؟؟

مقدس ہستیوں کے نسب میں مشرکانہ نام

٭حضرت عبد الرحمن بن عوف رضی اللہ تعالی عنہ اور حضرت سعد رضی اللہ تعالی عنہ جو کہ عشرہ مبشرہ صحابہ میں سے ہیں اور حضو ر ﷺ کی والد ہ محترمہ حضرت طیبہ طاہری سیدہ آمنہ خاتون کے شجرہ نسب میں ”عبد مناف“ کا نام آتا ہے جو ”مناف“ بت کی نسبت سے رکھا گےا تھا۔

٭ حضرت زبير بن عوام رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔اور ام المومنین خدیجہ رضی اللہ تعالی عنہا اور ورقہ ابن نوفل کے سلسلہ نسب ”عبد العزی“ سے جاملتا ہے اور ”عزی “بت کا نام تھا۔

٭ حضرت خواجہ ابو طالب کا اصل نام ”عبد مناف “تھاان کے بيٹے حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ ہیں ۔

٭ حضرت سیدہ زینب رضی اللہ تعالی عنہا ان کا نکاح ابو لعاص بن ربيع بن عبدالشمس بن عبد مناف بن قصی ۔سے ہوا۔

٭ ام المومنین سودہ رضی اللہ تعالی عنہا بنت زمعہ بن قیس بن عبد شمس بن عبدود بن نصر ۔۔۔

٭ ام المومنین ام حبےبہ بنت ابو سفيان بن امیہ بن عبد الشمس بن عبد مناف بن قصی۔

غرض فہرست طویل ہے یہ چند مقدس و مکرم ہستیوں کے شجرے میں نے نقل کردئے ہیں۔۔۔اب احمد یار گجراتی کی ذريت ناپاک جس میں

بریلویوں کچھ تو شرم کرو کہ تمہارے ان گستاخ قلموں سے کیسی کیسی مقدس شخصيات پر حرف آرہاہے۔۔۔دراصل تمہارا حقيقی مقصد بھی اسلام کی انہی مقدس ہستیوں پر نکہ چینی کرنا ہوتا مگر عوام کے خوف وڈرسے نام علمائے اہلسنت کا لیتے ہو۔

دراصل قارئین کرام یہ بریلوی حضرات کا محض افتراء ہے کہ حضرت شاہ صاحب نے یہ فتوی دیا ہے کہ پیر بخش یا فرید بخش نام رکھنے والا مشرک اور مرتد ہوجاتے ہیں بلکہ ان کی بات کا مقصد یہ تھاکہ چونکہ عام طور پر ہندوستان کے معاشرے میں لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ یہ بيٹا فلاں بزرگ نے ديا ہے یہ فلاں نے پھر انہی کی نسبت سے لوگ اپنی اولاد کی نسبت ان زبرگان دین کی طرف کرتے ہیں اس لئے ایسے ناموں میں چونکہ شرک کا شائبہ ہے اس لئے اس سے پرہیز لازم ہے۔لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ جو بھی یہ نام رکھے گا اسکاعقیدہ یہی ہوگا بلکہ بعض اوقات عرف کی وجہ سے بھی لوگ اس قسم کے نام رکھ لیتے ہیں حالانکہ ان کے معنی یا مراد کی طرف ہرگز ان کا دھيان نہیں ہوتا جیسا کہ احمد رضاخان نے کہا کہ میں نے خود بعض لوگوں کا نام رسول اللہ سنا حالانکہ کوئی بھی یہ نام اس وجہ سے نہیں رکھتا کہ وہ معاذ اللہ حقيقت میں اللہ کا رسول ہے ۔

غرض ان کا مقصد صرف بطور تہدید و تنبیہ کے تھا کہ اس قسم کے ناموں میں شرک کا شائبہ موجودہے اس لئے نہ رکھے جائیں نہ یہ کہ رکھنے والا ہی مرتد کافر اور مشرک ہوجاتا ہے۔

جیسا کہ حديث میں آتا ہے کہ جان بوجھ کر ایک نماز چھوڑنے والا کافر ہے ایک حديث میں آتا ہے کہ باوجود استطاعت کے حج نہ کرنے والا یہودیت اور نصرانيت پر مرنے والا ہے۔تو علماءنے ان احاديث کی تشريح میں یہی کہا کہ اس سے مراد یہ نہیں کہ وہ مسلمان مشرک یا کافر یا یہودی ہوجاتا ہے بلکہ یہ قول صرف بطور توبيخ و تہدید کے ہے۔

اورنگ زیب عالمگیر کون تھے؟

✏ فضیل احمد ناصری

شاہ جہاں کے فرزندوں میں ایک نمایاں نام عالم گیرؒ کا ہے۔ یہ اپنے خاندانی مغلیہ سلطنت کے سب سے بہتر بادشاہ تھے۔ دین دار اور علم دوست۔ تقویٰ اور طہارت میں مثالی۔ اصل نام ابوالمظفر محی الدین تھا۔ لقب اورنگ زیب۔ مگر نام سے زیادہ لقب سے شہرت پائی۔ آج سے چار سو سال قبل 1618 میں پیدا ہوئے اور 1707 میں وفات پائی۔ ولادت گجرات کے داہود میں ہے اور انتقال مہاراشٹر کے احمد نگر میں۔ تدفین اورنگ آباد کے قریب خلد آباد میں ہوئی ۔

مغلیہ سلطنت کا بانی ظہیر الدین بابر تھا۔ اس کا بیٹا تھا نصیرالدین ہمایوں۔ اس کے بیٹے کا نام جلال الدین اکبر تھا۔ نور الدین جہاں گیر اسی کا فرزند تھا۔ جہاں گیر کا بیٹا شاہ جہاں تھا، اورنگ زیب عالمگیر اسی کے بیٹے تھے۔

اورنگ زیب رحمہ اللہ نے اس ملک پر پچاس برس حکومت کی۔ اس وقت کا ہندوستان آج کا ہندوستان نہ تھا۔ پاکستان اسی کا حصہ تھا اور بنگلہ دیش بھی۔ اورنگ زیب نے نظامِ سلطنت جس چابک دستی سے چلایا وہ اپنی مثال آپ ہے۔ ان کی بہت سی یادگاریں آج بھی زندہ ہیں۔

وہ مدارس کے بڑے شوقین تھے۔ ان کے عہد میں بے شمار تعلیم گاہیں کھلیں۔ دہلی کا جامعہ رحیمیہ انہیں کے دور کی یادگار ہے۔ ان کے بڑے کارناموں میں سے ایک *فتاویٰ عالمگیری* بھی ہے۔ فقہ و فتاویٰ پر مشتمل یہ کتاب انہیں کی سرپرستی میں تیار ہوئی۔ اس کی ترتیب کے لیے ملک کے طول و عرض سے پچاس سے زیادہ جید علما نے اپنی خدمات پیش کی ہیں۔ اورنگ زیب عالمگیر نے اس کا ہر ہر جز باقاعدہ سنا ہے اور ضروری پڑا تو اس میں ترمیم بھی کی ہے۔ یہ کتاب جہاں ان کی محبتِ دینی کا منہ بولتا ثبوت ہے، وہیں ان کی علمی شان و شوکت اور فقیہانہ بصیرت کی بھی غمازی کرتی ہے۔

وہ قرآنِ کریم کے اچھے حافظ بھی تھے۔ انہوں نے تحفیظ القرآن کی سعادت بچپن میں نہیں، ادھیڑ عمر میں حاصل کی۔ وہ بھی اس وقت، جب ان کی زندگی کی 47 ویں بہار چل رہی تھی ۔اس کے ساتھ ہی وہ بہترین خوش نویس بھی تھے اور یہی خوش نویسی ان کا ذریعۂ معاش بھی تھی۔ اپنے ہاتھ سے قرآن لکھتے اور اس کے ہدیے سے گزر اوقات کرتے۔ دارالعلوم دیوبند میں ان کے ہاتھ کے لکھے قرآن کے چند پارے آج بھی موجود ہیں۔ قرآن کے ساتھ ایسا شغف آپ نے کسی بادشاہ میں دیکھا ہے؟ گزر اوقات کے لیے ایک دوسرا مشغلہ ٹوپی کی بنائی بھی تھی۔

اورنگ زیبؒ نے حکومت سے کبھی تنخواہ نہ لی۔ سلطانِ وقت ہو کر بھی انتہائی فقیرانہ اور سادہ زندگی گزاری۔ کھانا پینا بھی انتہائی سادہ ہوتا۔ اس سلسلے کا یہ واقعہ ضرور پڑھنا چاہیے:

عالم گیرؒ کے ذاتی مطبخ کا باورچی ٹکتا نہیں تھا۔ چند دن کے بعد اپنا تبادلہ لنگر خانے میں کرا لیتا تھا۔ ایک من چلا باورچی تھا، اس نے سوچا: کیا بات ہے کوئی باورچی بادشاہ کے یہاں ٹکتا نہیں؟ میں دیکھوں گا۔ اس نے درخواست دی: حضور! میں آپ کا کھانا پکانا چاہتا ہوں۔ عالم گیر نے فرمایا: ہمارے یہاں کوئی باورچی ٹکتا نہیں، تو بھی چند دن میں بھاگ جائے گا۔ اس نے وعدہ کیا کہ میں ہرگز نہیں جاؤں گا۔ چناں چہ بادشاہ نے اس کو رکھ لیا۔ اس نے دیکھا کہ نپا تلا کھانا پکتا ہے۔ آدھا گھر میں چلا جاتا ہے اور آدھا بادشاہ کے سامنے۔ دیگچی میں کچھ نہیں بچتا۔ جب روز کا یہ معمول دیکھا تو تنگ آ گیا، مگر وہ یہ تو نہیں کہہ سکتا تھا کہ میرا تبادلہ لنگر خانے میں کر دیا جائے۔ اس نے سوچا کہ بادشاہ کو پریشان کرو تاکہ وہ ناراض ہو کر بھگا دے۔ بادشاہ کے یہاں شام کو ایک سیر کھچڑی پکتی تھی۔ آدھی گھر میں جاتی تھی اور آدھی بادشاہ کے سامنے۔ ایک دن اس نے کھچڑی میں نمک نہیں ڈالا۔ بادشاہ نے جب لقمہ لیا تو باورچی کی طرف دیکھا، مگر کچھ نہیں کہا۔ نمک بھی نہیں مانگا۔ پھیکی کھچڑی کھا لی۔ باورچی نے سوچا: بادشاہ کو پھیکی کھچڑی اچھی لگتی ہے۔ اور جو پھیکا کھا سکتا ہے وہ تیز نمک والا نہیں کھا سکتا۔ چناں چہ اگلے دن ڈبل نمک ڈال دیا۔ بادشاہ نے ایک لقمہ کھا کر پھر باورچی کو دیکھا اور کچھ نہیں کہا۔ کھچڑی کھا لی ۔ جب باورچی برتن اٹھانے آیا تو اس سے کہا: کل ڈیڑھ سیر کھچڑی پکانا! اور جتنی گھر میں جاتی ہے اتنی گھر میں بھیجنا، باقی میرے پاس لانا۔ بادشاہ نے حسبِ معمول آدھی کھچڑی کھائی اور آدھی بچ گئی۔ جب باورچی برتن اٹھانے آیا تو اس سے کہا: یہ ہمارا بچا ہوا تبرک ہے، اس کے نو حصے کرو اور ہمارے نو رتنوں (وزیروں) کو ہدیہ پہونچاؤ! باورچی نے اس تبرک کے نو حصے کیے اور خوب سجائے۔ وزیروں کو جب معلوم ہوا کہ آج بادشاہ کا بچا ہوا کھانا ہدیہ آ رہا ہے تو ہر وزیر نے آگے بڑھ کر اس کا استقبال کیا اور باورچی کو ایک ایک لاکھ روپیہ ہدیہ دیا۔ جب باورچی فارغ ہو گیا تو بادشاہ نے پوچھا: ارے ہمارے وزیروں نے تجھے کچھ دیا بھی؟ اس نے کہا: حضور! اتنا دیا ہے کہ میری سات پشتوں تک کے لیے کافی ہے۔ عالم گیرؒ نے فرمایا: پھر نمک ٹھیک ڈالا کرو۔ (تحفۃ الالمعی، ج 5،ص 192،93)

ملا موہن بہاری کا یہ تربیت یافتہ، ملا جیون کا یہ شاگرد، یہ مردِ قلن

ﻓﻠﺴﻔﮧ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﻢ ﮐﻼﻡ ‏

ﮨﻢ ﺟﺐ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﭘﮍﮬﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﺣﮑﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺩﺍﻧﺶ ﻣﻨﺪﯼ ﺳﮯ ﮨﮯ ﻓﻠﺴﻔﯽ ﺑﮍﺍ ﺣﮑﯿﻢ ﻭ ﺩﺍﻧﺶ ﻣﻨﺪ ﻣﺪﺑﺮ ﻣﻔﮑﺮ ﺁﺩﻣﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﻨﺪﮮ ﻧﮯ ﺍﺏ ﺗﮏ ﺟﺘﻨﺎ ﻗﺪﯾﻢ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﭘﮍﮬﺎ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻋﻘﻞ ﮐﺎ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﻮﺉ ﻧﻈﺮ ﻧﮧ ﺁﯾﺎ ﺍﻥ ﻓﻠﺴﻔﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺑﺪﻗﺴﻤﺘﯽ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﻭﮨﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﻭﺳﻮﺳﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺍﺭﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻓﻠﺴﻔﯿﺎﻧﮧ ﻣﻮﺷﮕﺎﻓﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻮﺉ ﭨﮭﻮﺱ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﺘﻨﮯ ﻋﻘﻞ ﻣﻨﺪ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻟﮕﺎﺋﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﻌﺾ ﻓﻠﺴﻔﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﺭﻧﮕﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻟﯿﻞ ﯾﮧ ﺩﯼ ﮐﮧ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﺑﺮﻑ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﻔﯿﺪ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ ﺳﻔﯿﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﻭﮦ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺫﺭﺍﺕ ﻣﺎﻟﯿﮑﯿﻮﻟﺰ ﺍﺗﻨﮯ ﻣﺼﻔﯽ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﻔﯿﺪ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﭘﺲ ﮨﺮ ﺭﻧﮓ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﮬﻮﮐﺎ ﮨﮯ۔۔۔۔ ﯾﺎﺧﺪﺍﯾﺎ !!! ﺍﺭﺳﻄﻮ ﺟﯿﺴﺎ ﻓﻠﺴﻔﯽ ﺳﯿﺎﮦ ﺭﻧﮓ ﮐﻮ ﺗﺴﻠﯿﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻟﯿﻞ ﯾﮧ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﯿﺎﮦ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺑﭩﮭﺎﺩﻭ ﺍﻭﺭ ﮐﻤﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﻣﻮﻡ ﺑﺘﯽ ﻟﯿﮑﺮ ﮔﺰﺭﮮ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻣﻮﻡ ﺑﺘﯽ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ ﺍﮔﺮ ﺑﯿﭻ ﻣﯿﮟ ﺳﯿﺎﮦ ﺭﻧﮓ ﺣﺎﺋﻞ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﯾﮧ ﻣﻮﻡ ﺑﺘﯽ ﻧﻈﺮ ﻧﮧ ﺁﺗﯽ ۔۔۔۔ ﺷﺎﺑﺎﺵ ۔۔ ﺷﺎﺑﺎﺵ۔۔۔۔ ﺍﯾﮏ ﺧﻮﺩ ﺳﺎﺧﺘﮧ ﻗﺎﻋﺪﮦ ﻧﮑﺎﻻ ﮐﮧ ﺍﻟﻮﺍﺣﺪ ﻻ ﯾﺼﺪﺭ ﻣﻨﮧ ﺁﻻ ﺍﻟﻮﺍﺣﺪ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﮐﺎ ﺻﺪﻭﺭ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﻓﺎﺭﻍ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﮞ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺸﺮﮦ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻞ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺣﻤﺎﻗﺖ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻟﮕﺎﺋﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﮐﯿﺴﺎﺗﮫ ﺗﯿﻦ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯽ ﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺟﺴﻢ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﻧﻔﺲ ﻧﺎﻃﻘﮧ ﺗﯿﺴﺮﺍ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻋﻠﻢ ﺍﺏ ﺍﻥ ﮔﺪﮬﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﻮ ﮐﮧ ﺍﻟﻮﺍﺣﺪ ﻻﯾﺼﺪﺭ ﻣﻨﮧ ﺁﻻ ﺍﻟﻮﺍﺣﺪ ﮐﺎ ﻗﺎﻋﺪﮦ ﮐﮩﺎﮞ ﮔﯿﺎ ؟ ﺟﺴﻢ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺍﺑﻌﺎﺩ ﺛﻼﺛﮧ ﮨﯿﻮﻟﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻧﻮﻋﯿﮧ ﺧﺮﻕ ﻭ ﺍﻟﺘﯿﺎﻡ ﻗﺪﻡ ﺫﺍﺗﯽ ﻭ ﻧﻮﻋﯽ ﺣﺎﺩﺙ ﺫﺍﺗﯽ ﻭ ﻧﻮﻋﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﺎﯾﮧ ﻧﺎﺯ ﺑﮑﻮﺍﺳﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮐﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﻨﮯ ۔۔۔۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﺘﺎﺧﺮﯾﻦ ﻣﺘﮑﻠﻤﯿﻦ ﻧﮯ ﻣﺤﺾ ﺩﻝ ﭘﺸﻮﺭﯾﻮﮞ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻓﻠﺴﻔﮯ ﮐﻮ ﮐﺘﺐ ﮐﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﯿﺎ ﻭﺭﻧﮧ ﻣﺘﻘﺪﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﮐﺘﺐ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﮨﯿﮟ ﺩﻟﭙﺸﻮﺭﯼ ﮐﺎ ﻟﻔﻆ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺑﻌﺾ ﻣﺘﮑﻠﻤﯿﻦ ﻧﮯ ﺳﻮﻓﺴﻄﺎﺋﯿﮧ ﺟﯿﺴﯽ ﺧﻼﺋﯽ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﮐﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﯿﻦ ﺧﯿﺎﻟﯽ ﻓﺮﻗﻮﮞ ﻋﻨﺎﺩﯾﮧ ﻋﻨﺪﯾﮧ ﻭ ﻻﺍﺩﺭﯼ ﮐﯿﺴﺎﺗﮫ ﺫﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻏﻀﺐ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻣﻮﻗﻒ ﮐﻮ ﻣﺪﻟﻞ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﺎ ﺍﺏ ﺍﺳﮯ ﻣﺤﺾ ﺩﻟﭙﺸﻮﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺗﺸﺤﯿﺬ ﺍﻻﺫﮨﺎﻥ ﻧﮧ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ؟

ﺍﻧﮩﯽ ﺧﺮﺍﻓﺎﺕ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﻣﯿﮟ ﺩﺳﺘﺮﺱ ﻧﮧ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺟﻠﯿﻞ ﺍﻟﻘﺪﺭ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﻧﮯ ﻋﻠﻢ ﮐﻼﻡ ﮐﮯ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﻓﺘﻮﯼ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﺍﻭﮨﺎﻡ ﮐﻮ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺁﺩﻣﯽ ﻣﺰﯾﺪ ﻭﮨﻤﯽ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﭘﺮ ﻋﺒﻮﺭ ﻧﮧ ﮨﻮ ﻋﻠﻢ ﮐﻼﻡ ﺍﯾﮏ ﺧﻄﺮﻧﺎﮎ ﻋﻠﻢ ﮨﮯ۔۔۔

ﺍﻟﺒﺘﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﻠﻢ ﮐﻼﻡ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﭘﮍﮬﯿﮟ ﺟﺐ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺩﻝ ﻭ ﺩﻣﺎﻍ ﮐﻮ ﺍﻭﮨﺎﻡ ﺟﮑﮍ ﻟﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻗﺮﺁﻥ ﻭ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﻮ ﮐﮭﻮﻟﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮍﮬﺘﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ ﮐﯽ ﺣﻘﺎﻧﯿﺖ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺍﻟﯿﻘﯿﻦ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﮔﺎ ۔۔۔۔

سفر حج کے لیے شرعی شرائط

ماخوذ از مکتوب کتاب ‘ٹورزم اينڈ اسلام’ مجلس العلماء جنوبی افریقہ

ہر مسلمان جانتا ہے کہ حج اسلام کے پانچ اراکین میں سے ایک اہم رکن ہے۔  یہ ہر اس مسلمان پر زندگی میں ایک مرتبہ فرض ہے جو مکہ مکرمہ شریعت کے طے شدہ کچھ شرائط کے ساتھ پہنچ سکے۔ اس قدر اہم ومطلوب بنیادی رکن عبادت ہو نے کے باوجود حج کا سفر طے کرنا جائز نہ ہوگا اگر اس میں کوئی گناہ کا ارتکاب ہو, مثلا نماز چھوٹ جائے یا اس سے غفلت ہو یا کوئی ناجائز فعل میں مبتلا ہونا پڑے۔ اس معاملہ میں فقہاء کا قول یہ ہے،

“المدخل میں یہ ارشاد ہے : ہمارے علماء کہتے ہیں :جب مکلف شخص جانتا ہے کہ اگر وہ حج کے سفر پر چلا جائے گا تو اس کی ایک بھی نماز چھوٹ جائے گی تو یقینا حج ساقط ہوگا۔ ایک اور جگہ ارشاد ہے : حج کا ادا کرنا  اس طرح پر کہ اس میں  نماز کو اس کے اپنے وقت پر پڑھ نہ سکنے ( قضاء کرنے) یا اس جیسا (کوئی اور فعل یعنی گناہ) کرنے کے بغیر  ممکن ہی نہ ہو تو پھر حج ساقط ہو گا۔” (یعنی نماز کو قضا کئے بغیر اور اُس طرح کے گناہ سے بچے بغیر سفرِ حج ممکن نہ ہو تو ایسے حالات میں حج کا فریضہ اس کے ذمہ نہیں رہتا، وہ ان حالات میں حج نہ کرے۔)

البرزلی نے المازری سے نقل کرتے ہوئے فرمایا,

“حج کے سفر کے دوران اگر وہ (مسافر) نماز سے اس قدر غفلت برتے کہ نماز کا وقت چلا جائے یا کہ اسے متبادل طریقہ پر ادا کرے (یعنی بیٹھ کر ادا کرے) تو پھر یقینا یہ سفر جائز نہیں ہے اور اس سے حج کی فرضیت ساقط ہو گی۔”

التادلی نے المازری سے نقل کرتے ہوئے فرمایا,

“دراصل استطاعت (حج کرنے کی استعداد کے شرائط میں)  یہ ہے کہ بیت (کعبہ شریف) بغیر کسی مشقت کے اور اپنی جان و مال کی حفاظت کے ساتھ پہنچا جائے اور اس سفر میں دیگر  فرائض کو ادا کرنے کی بھی  استعداد ہو, غلو سے بچا جائے اور گناہوں کو چھوڑ دیا جائے۔”

ابن منیر نے اپنے منسک میں تذکرہ کیا ہے،

“جان لو کہ ایک نماز کو بھی ختم کرنا (یعنی وقت پر ادا نہ کرنا) بہت بڑا گناہ ہے، حج کی فضیلت اس گناہ کی تلافی نہیں کر سکتی- در حقیقت، یہ (نماز) اس سے افضل ہے، (یعنی حج سے افضل ہے) کیونکہ نماز کی زیادہ اہمیت ہے۔ لہذا اگر سمندر یا زمین پر مسافروں کو چکر آنے کا معمول ہو اگر چہ ایک نماز کے لئے بھی (یعنی اس بیماری کی وجہ سے وہ ایک نماز سے بھی محروم ہوجائے گا) تو اس کے لئے حج حرام ہے۔ (یعنی اگر وہ نماز کو ضائع کر کے ہی مکہ مکرمہ پہنچ سکتا ہے تو اس کے لئے یہ سفر جائز نہیں)……

“جو شخص یہ جانتا ہے کہ اگر وہ کسی سمندری سفر پر (یہاں تک کہ ہوائی یا زمینی سفر پر) جاتا ہے تو وہ سر چکرانے یا کسی بھی دوسری بیماری سے متاثر ہوگا جو اسے ذہنی طور پر نقصان پہنچائے گی یا بے ہوشی کا باعث بنائے گی، جس کی وجہ سے وہ نماز سے غفلت کرے گا یا مکمل طور پر نماز ترک کردے گا۔ پھر اس میں (فقہا کے درمیان) کوئی اختلاف نہیں ہے کہ اس کے لئے سفر(حج) کرنا جائز نہیں ہے۔ اس نوعیت کے فرد کا سفر صرف نفسانی خواہش ہے۔ در حقیقت، یہ شیطان کا ایک وسوسہ ہے۔

البرزلی نے کہا – “ہمارے شیخ ابو محمد الشبیبي نے طالب سے روایت کیا اور انہوں نے کہا:

“مشرق اور مغرب کے شیاطین ایک جھگڑے میں الجھ گئے اس بات میں کہ ان میں سے کون سب سے بڑا دھوکہ باز (لوگوں کو گمراہ کرنے والے) ہے..؟

مشرق کے شیاطین نے مغرب کے شیاطین سے کہا :‘ہم دھوکا دینے مین تم سے آگے ہیں کیونکہ ہم ایک شخص کو گناہ کرنے کے لئے ابھارتے ہیں اور انبیاء کے مقامات (مقدس مقامات میں) میں ممنوعات کا مرتکب کراتے ہیں۔’

مغرب کے شیاطین نے جواب دیا : ‘ہم (دھوکہ دہی کے فن میں) اس سے آکے ہیں۔ ہمیں ایک شخص اپنی بیوی اور بچوں کے ساتھ فرض نماز و زکوٰۃ ادا کرتے اور دیگر نیک اعمال (مشقت کے ساتھ) کرتے ہوئے ملتا ہے۔ وہ آرام کی حالت میں ہوتا ہے اور اس کے فرشتے بھی اس کے ساتھ ہوتے ہیں۔

اس کے بعد (حج/عمرہ) ایجنٹ (ٹریول ایجنسیاں جیسے سہوق، خدمت العوام) لوگوں کو حجاز کی سرزمین کا (حج اور عمرہ کے لئے) سفر کرنے کے لئے آمادہ کرتا ہے تو ہم (مغرب کے شیاطین) اس میں دلچسپی لے اس میں کود پڑتے ہیں اور ایک ایک کو باہر نکل آنے پر آمادہ کرتے ہیں (یعنی سفر شروع کرنے پر)، ہم انہیں گُدگُدی کرتے ہیں (شیطان کے جال میں پھانسنے کے لئے مثالی محاورہ)، یہاں تک کہ وہ لوگ (عمرہ جانے کے لئے) تڑپ اٹھتے ہیں اور وہ سفر کے لئے نکل پڑتے ہیں، سفر کے لئے جس دن سے وہ (اپنا گھر) چھوڑتے ہیں، اس دن سے ہم انہیں فرائض کو نظرانداز کرنے اور (شریعت کی) ممانعت کی خلاف ورزی پر آمادہ کرتے ہیں، ان کی روانگی کے دن سے لے کر اپنے اہل خانہ میں واپسی کے دن تک، اس طرح وہ مشرق اور مغرب میں اپنے دین و ایمان اور اپنی جان و مال کے لحاظ سے سب سے زیادہ نقصان میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔

تب مشرق کے شیاطین نے فریب کاری کے فن میں مغرب کے شیاطین کی فوقیت کو تسلیم کر لیتے ہیں(کہ حج اور عمرہ کے مقدس ناموں سے ابھار کر  تم ان کو فرائض سے غافل اور ممنوعات کا مرتکب بنا دیتے ہو ،یہ تمہاری بڑی جسارت جرأت ہے، واقعی تم ہم سے بھی زیادہ دھوکہ باز اور گمراہ گروہ ہو)۔

البرزلی نے کہا : “بیشک میں نے اپنے حج کے سفر میں اس کا مشاہدہ کیا ہے۔ ہم اللہ سے حفاظت مانگتے ہیں۔ “(مواہب الجلیل)

شیاطین کے دونوں گروہوں کی اس بحث میں ان لوگوں کے لئے ایک اہم سبق ہے جو اس مقدس سفر کو سیر و سیاحت، جہاں گردی، گھومنا پھرنا بنا کر رکھ دے رہے ہیں۔ جس میں وہ خود اپنے نفس اور شیطان کے دھوکے میں رہتے ہیں۔

ارشاد الساری میں مندرجہ ذیل تذکرہ کیا گیا ہے – “فریضہ حج کی شرائط میں سے ایک یہ ہے کہ فرض نمازیں ادا کر نے کی استعداد ہو ، اور (وہ) قضا نہ کی جائیں۔”

اگر جماعت کے بغیر ایک بھی نماز پڑھی جائے تو یہ 700 بڑے (کبیره) گناہ کرنے کے مترادف ہے۔ حضرت ابو بکر ورّاق (رحمة اللہ علیہ) اپنے سفر حج کے پہلے ہی دن جماعت کے ساتھ ایک نماز پڑھنے سے قاصر رہے، ایک نماز کی جماعت چھوٹ گئی، اس کے بعد انہوں نے کہا کہ کاش وہ پیچھے رہ جاتے اور اس مقدس سفر پر نہ نکلتے  کیونکہ سفر کے پہلے ہی دن جماعت کی نماز چھوڑ دی اور 700 کبیرہ گناہ کا ارتکاب ہوا۔

اب جب کہ فرض عبادت حج کے اسفار کے لئے بھی یہ شرعی شرائط ہیں تو اگر دورانِ سفر نماز کا چھوٹنا یا حرام (فعل) کا ارتکاب لازم آتا ہو تو پھر اس سفر کا کرنا جائز نہیں ہوگا۔

اور پھر جب حج کے بارے میں شریعت کا یہ نظریہ ہے تو پھر مزے کے ٹور (tour) دھوکہ میں مبتلا نفل عمرے اور “تین حرم” کی خوش کُن سیاحت کے بارے میں کسی مؤمن کا ایمان اسے اندر سے کیا حکم دے گا..؟

فقہاءِ کرام نے واضح طور پر حکم بیان کیا ہے اور ایمانی سمجھ بھی یہی حکم کرتی ہے کہ حج کے لئے جانا جائز نہیں ہوگا اگر سفر میں ایک نماز بھی چھوٹ جائے یا قضا ہو جائے۔

اب آج کل کی صورتِ حال میں کیا کیا جائے گا..؟ کیا حکم دیا جائے گا جب لوگ ان مزاحیہ مزے دار تفریحی ٹور کو دینی القاب دے کے سفر کرتے ہیں۔؟

نقاب پر پابندی

ماخوذ از مکتوب رسالہ ‘المجلس’ مجلس العلماء جنوبی افریقہ مع مترجم

یوروپی ممالک اور الجیریا کی کافر حکومت نے نقاب پر پابندی لگائی ہے۔ بظاہر یہ اسلام دشمنی اور نفرت معلوم ہوتی ہے۔ اس کے باوجود اس پابندی کی حقیقی (بنیادی) وجہ مسلمانوں کا خود شرعی حجاب کو ترک کر دینا ہے۔ جب کہ یہ اللہ تعالی کی طرف سے سزا ہے۔

حجاب صرف نقاب پہننے پر محدود نہیں ہے۔ حجاب تو ایک مکمل نظام ہے جو تقاضہ کرتا ہے کہ مسلمان مستورات گھر كے حدود میں رہیں۔ مسلمان مستورات نے پوری دنیا میں حجاب کو ترک کردیا ہے۔ دراصل وہ نقاب کو آزاد بروک گھومنے اور لوگوں کے مجموعوں میں پھرنے کے لیے اجازت (لائسنس) سمجھتی ہیں۔اب سزا کے طور پر اللہ تعالی نے اسلاموفوبیا (مسلمانوں کے خلاف تعصب) لگا دیا ہے جس کی وجہ سے وہ مستورات جو لوگوں کے مجموعوں میں بھٹکتے پھرنے کی قائل ہیں ان کے لیے ذلت اور خطرہ ہے۔

جب مسلمان خود شریعت کے احکام کو کھلے طور پر  پامال کرتے ہیں تو اللہ تعالی ہمیں مختلف طریقوں سے سزا دیتے ہیں اور ذلیل کرتے ہیں- اسلاموفوبیا (مسلمانوں کے خلاف تعصب) ان میں سے ایک طریقہ ہے۔ مسلمان اس ذلت کے حق دار ہیں جسے انہوں نے اللہ تعالی سے بغاوت کر کے دعوت دی ہے-